وزنن ہنز پارۍ زان (6): پیچیدہ ماترا وزن

شت

پیچیدہ ماترا وزن ورتاون واجنٮن زبانن منز چھہِ سنسکرت، یونانۍ، لاطینی تہ کلاسیکل عربی شامل۔ کلاسیکل عربی یک عروض ووت اسہِ تام گوڈہ فارسی تہ پتہ ارود کنۍ۔ سانۍ شاعر یمن منز محمود گامی سندِ پیٹھہ مہجورس تام ساری شاعر شامل چھہِ، ہیکۍ تہ کلاسیکل عربی عروضکۍ تم وزن بہتر پاٹھۍ ورتٲوتھ یم پیچیدہ ماتراہن پیٹھ مبنی چھہِ، کینژھا زبانۍ ہندِ مزازہ کنۍ تہ کینژھا ہیجلۍ عروض ورتاونہ کہ عادتہ کنۍ۔ مگر عربی فارسی عروضکۍ تم وزن، یم بنیادی طور ہیجلۍ وزن چھہِ، ورتاونس منز آیہ نہ یمن کانہہ مشکل پیش۔ مہجورنہِ پتہ کیو جدید شاعرو ورتاوۍ پیچیدہ ماترا وزن اکتسابی طور نسبتا کامیابی سان۔

کلاسیکل عربی عروضکۍ وزن چھہِ پیچیدہ ماترا وزن، امہِ کنۍ تکیازِ یمن منز چھیہ ماترا گنتی علاوہ، پدین اندر ماتراہن ہنز ترتیب تہ ترکیب تہِ آہنگ خاطرہ اہم۔ گوٚو یمن وزنن منز چھہ آہنگک دوٚگن معیار ورتاونہ یوان۔مثلا کلاسیکل عربی عروضس منز چھہ اکھ شراہ ماترا وزن یس یتھہ پاٹھۍ چھہ:

22121 22121 = 16 ماترا

یمہِ ترتیبہ یم ماترا اتھ وزنس منز یوان چھہِ، تمہ منزہ چھیہ یہنزاکھ خاص دہراونہ ینہ واجینۍ تنظیم ننۍ نیران۔ یوٚت تام نہ ماتراہن، یا ہیجلین یا تاکیدن ہنز اکھ خاص ترتیب قایم گژھہِ تہ سۅ وزنس منز دہراونہ یی، توٚت تام چھہ نہ پدین ہند کانہہ جواز۔ اسہِ وچھ پتمین صفحن پیٹھ اردو پریژھہِ تہ لل واکھس تہ رفیق رازنس کلامس منز چھیہ نہ ماتراہن ہنز کانہہ مخصوص ترتیب قایم گژھان تکیازِ پریتھ مصرعس منز چھیہ ماتراہن الگ ترتیب، لہذا چھہ نہ تمن منز پدین ہند کانہہ جواز۔ تمن منز چھہ ماتراہن ہند کل تعداد سادہ آہنگ پیدہ کران۔ مگر پیٹھمس کلاسیکل عربی وزنس منز گژھن تعدادہ کنۍ16 ماترا آسنہ علاوہ تم ماترا پیٹھمہِ مخصوص ترتیبہ منز واقع سپدنۍ۔  یم ماترا ہیکن دۅن دہراونہ ینہ والین پدین منز تقسیم سپدتھ: 22121   /22121 یم پدۍ چھہِ عروضس منز مفاعلاتن مفاعلاتن کیو ارکانو (افاعیل) سیتۍ ظاہر کرنہ یوان۔

مفاعلاتن پدکۍ ماترا ہیکوکھ اسۍ ِ یتھہ پاٹھۍ سمجتھ۔ یہ ٹیبل گوو غلط فارمیٹ۔ پٔرو کھوورِ پیٹھہ دچھُن کن۔

کل ماترا تن علا مفا
پٍنژم ہیجل ژورمٚ ہیجل تریم ہیجل دوٚیم ہیجل گۅڈنیک ہیجل
ن زبر ت لا ل زیر ع آ ف زبر م
8 1 1 x 2 x 1 x 2 x 1 x
نوٹ: یہ کتھ آیہ گۅڑے وننہ زِ ہیجلیک گۅڈنیک (یا گۅڈنکۍ) مصمتہ چھہ نہ ماترا گنزرنہ یوان۔

یتھ عربی بحرس منز یہ پوٚد ورتاونہ یوان چھہ تتھ چھہِ بحر جمیل ونان۔ یہ چھہ نہ کاشرس منز زیادہ ورتاونہ آمت، حالانکہ کاشرس آہنگس چھہ سیٹھا براہ۔ اگر ورتاونہ تہِ آمت چھہ تہ ژۅن پدین ہنزِ شکلہِ منز۔ عبدالاحد آزادن چھہ یہ پوٚد خاص کر تمن نظمن منز ورتوومت یمن منز شکوہ تہ گراوہ چھیہ ۔ پیٹھمس مخصوص وزنس پیٹھ (جمیل مربع سالم) چھن اکھ بٲتھ "نغمہ بیداری” ناوہ لیوٚکھمت یمکۍ کینہہ بند یم چھہِ:

حقیقتک رنگ دواں حبابس

مشک ملاں کاغذی گلابس

کران بدنام انقلابس

ہیواں تھوُن پردہ آفتابس

یہ دلبری چھا ستمگری چھا

یہ رہزنی چھا یہ رہبری چھا

چھہ سور ملۍ ملۍ چھوان نورس

فریب غیبک دواں حضورس

خودی وناں نخوتس غرورس

تھیکان فرعون کوہ طورس

یہ دلبری چھا ستمگری چھا

یہ رہزنی چھا یہ رہبری چھا

اسۍ کرو گۅڈنکہ بندچ تقطیع یتھہ پاٹھۍ۔ یہ ٹیبل گوو غلط فارمیٹ۔ پٔرو کھوورِ پیٹھہ دچھُن کن۔:

کل ماترا حبابس دواں رنگ حقیقتک لفظ
16 221 21 2 2121 ماترا
گلابس کاغذی ملاں مشک لفظ
16 221 212 21 21 ماترا
انقلابس بدنام کران لفظ
16 2212 122 121 ماترا
آفتابس پردہ تھوُن ہٮواں لفظ
16 2212 12 21 21 ماترا
ستمگری چھا دلبری یہ لفظ
16 2121 2 212 1 ماترا
چھا رہبری یہ چھا رہزنی یہ لفظ
16 2 212 1 2 212 1 ماترا

(1)یمہ تقطیع منزہ چھہ یہ ظاہر زِ فارسی عربی چھہ آہنگک دوٚگن معیار ورتاوان: ماترا تہ تمن ہنز پدۍ بندی۔

(2) کاشرس منز چھہ نہ عام طور رنگ یا یتھے پاٹھۍ منز، بند، اند بیترِ لفظن ہند /ن/ مصمتہ گنزرنہ یوان، بلکہ چھہ یہ مصوتہ چہ کھونکھنیارچ نشانی ماننہ یوان۔ لہذا چھہ نہ یہ اکثر ماترا گنزراونہ یوان۔ (3) دوان، ملان، کران، ہیوان، بیترِ لفظن ہند پتم نون چھہ اختیاری طور یا مصمتہ گنزرنہ یوان (اعلانیہ نون) یا صرف مصوتک کھونکھنیار، یتھ نون غنہ ونان چھہِ۔

محمود گامی سندِ پیٹھہ مہجورس تام چھہِ تمام شاعرن تم وزن پھٹان یمن منز زہ لۅکچہ ماترا اکس خاص جایہ پوٚتس پتھ یوان چھیہ۔ ماتراہن ہنز یہ مخصوص ترتیب چھیہ نہ کاشرس مزازس (لیہ) سیتۍ واٹھ کھیوان۔ یہ ٲس سۅ بصیرت یمیک اظہار امین کاملن مختلف جاین کوٚرمت چھہ، خاص کر "شعرن منز وزنہ پھیرہ” مضمونس منز۔ مثالہ پاٹھۍ نمون یہ وزن: مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل فعولن۔ امیک ماترا تعداد تہ تمن ہنز ترتیب چھیہ یہ۔ یہ ٹیبل گوو غلط فارمیٹ۔ پٔرو کھوورِ پیٹھہ دچھُن کن۔:

لن فعو عیلُ مفا عیلُ مفا لُ مفعو
2 21 12 21 12 21 1 22
221 1221 1221 122
پدین الگ، یمن ماتراہن ہند چھہ یہ نمونہ بنان:
22 11 22 11 22 11 22

اتھ وزنس منز چھہِ زہ ماترا، زہ ماترا پتہ اکھ ماترا، اکھ ماترا یوان۔ ییتہِ نس ییتہِ نس اکھ ماترا اکھ ماترا پوٚتس پتھ یوان چھیہ، تتہِ نس چھہ اکثر سانین شاعرن وزن پھٹان۔ تتہِ نس چھہ اکثر اکھ ماترا اکھ ماترا بجایہ زہ ماترا اکھ ماترا گژھان۔ یہ چھہ نہ صرف اکس شاعرس گوٚمت بلکہ محمود گامی سندِ پیٹھہ مہجورس تام تہ تس یور کن تہِ چھہ اکثر شاعرن ہند یۅہے حال یم نہ یہ وزن اکتسابی طورشعوری کوششہِ ورتاوان چھہِ۔ یہ زہ ماترا پتہ اکھ ماترا اکھ ماترا لے چھیہ نہ کاشرین شاعرن کاپہِ یوان۔ مگر ییلہ اسۍ یم شعر عروضی گز گتی لاگنہ ورٲے پران چھہِ، اسہِ کیازِ چھہِ نہ یم بیہ آہنگ باسان؟ تمیک وجہ چھہ زِ یوٚدوے یم پیچیدہ ماترا وزنہ حسابہ پھٹان چھہِ یعنی یہندس کل ماترا تعدادس ہریر یا چھۅنیر گژھان چھہ تہ یہنز ماترا ترتیب درہم برہم گژھان چھیہ، یم چھہِ کاشرِ ہیجلۍ عروضہ مطابق برابر یوان۔ چونکہ سانۍ زبان چھیہ بنیادی طور ہیجلیو سیتۍ (ماترا سیتۍ نہ) وقفہ مینان، لہذا چھیہ نہ آہنگس سانہِ خاطرہ کانہہ فرق پیوان۔ وچھو رسول میرنہِ اکہ غزلکۍ ماترا تہ ہیجلۍ اکس اکھ مقابلہ۔

 

رسول میر نہ غزلچ ماترا تہ ہیجلۍ تقطیع کل ماترا
مصرعہ متہِ روز دما روزہ دریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 21 12 21 12 212 22
ہیجلۍ تعداد 1 2 3     4 5     6 7       8 9       10 11 12 12
مصرعہ شرۅنہ دار سۅنہ سنزہ بنگرِ گریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 2 12 12 21 12 212 25
ہیجلۍ تعداد 1 2 3 4 5   6 7   8 9   10 11 12 12
مصرعہ لب تشنہ چھس در باغ بہت سرو روانو
ماترا تعداد 2 12 2 2 12 21 12 221 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3 4 5 6     7 8       9 11 12 12
مصرعہ بو حال ونے بوز کنے یارہ مسا روش
ماترا تعداد 2 12 21 12 21 12 21 12 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3 4 5 6   7 8     9 10     11 12 12
مصرعہ میہ جویہ اشکنہِ آبہ بریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 112 12 21 12 212 25
ہیجلۍ تعداد 1 2 3   4 5 6     7 8     9 10     11 12 12
مصرعہ میہ اچھہ پوشن مالہ کریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 11 22 12 21 12 212 22
ہیجلۍ تعداد 1 2 3       4 5 6       7 8     9 10   11 12 12
مصرعہ تیتھ سوز عشقن باد صبا بوز رسولس
ماترا تعداد 2 12 22 12 21 12 221 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3   4 5 6 7     8 9 10   11     12 12
مصرعہ یتھ مشک روزیم گل میہ ہریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 22 2 1 21 12 212 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3   4 5 6 7     8 9 11   12 12

امہِ وزنہ علاوہ بییہ زہ فارسی وزن یم اکثر کاشرین شاعرن پھٹان چھہِ، چھہِ یم:

مفتعلن       مفاعلن     مفتعلن      مفاعلن

2112           2121           2112          2121

فاعلاتن       فعلاتن         فعلاتن         فعلن

2212          2211           2211           211

یمن وزنن منز تہِ چھہ اکھ ماترا اکھ ماترا اکھ اکس پتہ یوان یس کاشرِ لیہ سیتۍ مطابقت چھہ نہ تھاوان۔ ظاہر چھہ پیچیدہ ماترا وزن چھہ نہ تتھہ پاٹھۍ لچکدار یتھہ پاٹھۍ ہیجلۍ وزن چھہ خاص کر کاشرِ کہ خاطرہ۔ یمن پیچیدہ ماترا وزنن منز گژھہِ برابر ماترا تعداد آسُن۔ ماتراہن ہند ہریر یا چھۅنیر چھہ یمن ہند وزن ڈالان تہ یمن ہنز مخصوص ماترا ترتیب تہِ درہم برہم کران۔ یمن ہنز ماترا ترتیب تہِ گژھہِ کُنی آسنۍ۔ ہیجلۍ وزن چھہِ امہِ رنگہ لچکدار۔ کاشرس چھہ ہیجلۍ وزن اس لئے براہ آمت تکیازِ کاشرِ زبانۍ منز یۅس لچک تمن ہیجلین منز چھیہ یمن ہندس اندس پیٹھ ہلکہ مصوتہ چھہِ تتھ چھہ ہیجلۍ وزن بہتر پاٹھۍ ساتھ دوان۔

ہیجلۍ وزنن تہ ماترا وزنن، ماترا وزنن تہ پیچیدہ ماترا وزنن، ہیجلۍ وزنن تہ پیچیدہ ماترا وزنن درمیان چھیہ اتفاقی برابری ممکن تکیازِ ماترا تہ ہیجلۍ چھہ نزدیکی تصور۔ ییتہِ اکھ ہیجل اکہ کھۅتہ زیادہ ماتراہن برابر ہیکہ ٲستھ تتہِ ہیکہِ اکھ ہیجل اکس ماترا برابر تہِ ٲستھ۔ پیچیدہ ماترا عروضچ اکھ خاصیت چھیہ یہ زِ یہ چھہ ہیجلۍ تہ سادہ ماترا وزن تہِ شامل کران یمہِ کنۍ یہ "وۅپر” ٲستھ تہِ سانین زبانن ہندِ خاطرہ "لگہار” چھہ۔ ہیجلۍ وزنک تعلق اوس سانین واکھن تہ وژنن سیتۍ، اگر یم صنف زانہہ کالۍ سٲنس ادبس منز دوبارہ لیکھنہ آیہ تہ سانہ عصری شعرہ اظہارک وسیلہ بنییہ، ممکن چھہ پیچیدہ ماترا وزن یکسر مشرٲوتھ ما ییہ ہیجلۍ عروض دوبارہ بارسس۔ یوٚت تام نہ یہ سپدِ یمیک سیٹھا کم امکان چھہ، توٚت تام روزِ ہیجلۍ عروض کینژن مخصوص وزنن ہندس صورتس منز پیچیدہ ماترا عروضس تٲبیا۔

وزنن ہنز پارۍ زان (5): سادہ ماترا وزن

کینژن زبانن منز چھیہ وزنچ بنیاد نہ ہیجل تہ نہ تاکید بلکہ ماترا (mora)۔ یعنی یمن زبانن منز چھہ یکسان ماترا تعداد ورتٲوتھ شاعری منز آہنگ پیدہ کرنہ یوان۔ ماترا کہ تصورچ زانکاری کرون اسۍ تعریف کرنہ بجایہ یتھہ پاٹھۍ حاصل۔

(1)ہیجلٮن ہنزہ گۅڈہ آوازہ چھیہ نہ ماتراہن منز گنزرنہ یوان۔ یعنی مثالہِ پاٹھۍ ‘جر’ تہ ‘جار’ لفظن ہند جیم /ج/چھہ نہ ماترا ماننہ یوان۔

(2) ہیجلیک تھوٚنگ اگر ژھوٚٹس مصوتس پیٹھ مشتمل آسہِ، سہ چھہ اکس ماترا برابر تہ اگر زیٹھس مصوتس پیٹھ مشتمل آسہِ تیلہ چھہ دۅن ماتراہن برابر۔ یعنی ‘جر’ لفظک ژھوٚٹ مصوتہ زبر/اَ/ چھہ اکس ماتراہس برابر تہ ‘جار’ لفظک زیوٹھ مصوتہ یعنی الف مد/آ/ چھہ دۅن ماتراہن برابر۔

(3) ہیجلچ پوٚت آواز تہِ چھیہ اکس ماتراہس برابر۔ یعنی ‘جر’ تہ ‘جار’ لفظن ہند پتم /ر/ چھہ اکس ماترا برابر۔ یمن دۅن لفظن ہند ماترا تعداد چھہ یتھہ پاٹھۍ:

لفظ گۅڈہ آواز تھوٚنگ پوٚت آواز کل ماترا
جر ج زبر ر
ماترا X 1 1 2
جار ج آ (ا +ا) ر
ماترا x 2 1 3

یہ گژھہِ یاد تھاون زِ اکھ زیوٹھ مصوتہ چھہ دۅن ژھۅٹین مصوتن برابر تصور کرنہ یوان۔ مثلا ‘جار’ لفظک زیوٹھ مصوتہ /آ/ چھہ دۅن الفن یعنی دۅن زبرن برابر ماننہ یوان۔

(4)اگر ہیجلس منز اکہِ کھۅتہ زیادہ پوٚت آوازہ آسن (عموما مصمتن ہنز جورۍ)، تم چھیہ زہ ماترا گنزرنہ یوان۔ مثلا ‘مست’ لفظس منز چھہِ پتہ کنہِ زہ مصمتہ /س/ تہ /ت/ یکوٹہ ، یم دۅن ماتراہن برابر چھہِ۔ امہِ لفظک ماترا تعداد:

لفظ گۅڈہ آواز تھوٚنگ پوٚت آواز پوٚت آواز کل ماترا
مست م زبر س ت
ماترا x 1 1 1 3

ماترا وزن ہیکہِ سادہ تہِ ٲستھ تہ پیچیدہ تہِ۔ سادہ ماترا وزنن منز چھہ ہیجلۍ وزنکۍ پاٹھۍ خالص تعدادہ سیتۍ آہنگ پیدہ کرنہ یوان۔ ہندی زبانۍ ہند مقبول وزن چوپایی چھہ سادہ ماترا وزنچ مثال۔ اتھ وزنس منز چھہ پریتھ پد (مصرعہ) شراہن (16) ماتراہن برابر۔ وچھو بنم پریژھ تہ امچ تقطیع:

ایک راگ سے رہتی گاتی
چلے رات دن کہیں نہ جاتی

ایک راگ سے رہتی گاتی =   16   ماترا
12 12 2 11 2 22
چلے رات دن کہیں نہ جاتی =   16   ماترا
1 2 12 11 1 2 1 22

دۅشونی مصرعن منز چھیہ ماترا تعداد برابر مگر ماتراہن ہنز چھیہ نہ مصرعن منز کانہہ خاص ترتیب یمہ کنۍ سادہ ماترا وزنن منز پدۍ قایم چھہ نہ گژھان۔

سادہ ماترا وزن چھہ ہندی علاوہ واریاہن ہندوستانۍ زبانن منز ورتاونہ یوان۔ یہ ورتاون واجینۍ بیاکھ زبان چھیہ جاپانۍ۔ اتھ زبانۍ منز چھہِ ماترا اصطلاح پاٹھۍ haku یا onji ونان۔ عام طور چھہ جاپان نیبر یہ زاننہ آمت زِ امہِ زبانۍ ہنزِ شعرہ ذٲژ ہایکوہس منز چھیہ پانژھ ہیجلۍ، ستھ ہیجلۍ، پانژھ ہیجلۍ ترتیب۔ مگر حقیقتا چھیہ امچ ترتیب پانژھ ماترا، ستھ ماترا، پانژھ ماترا۔ ییتہِ نس روزِ نہ ماتراہو مطابق اکہ جاپانۍ ہایکوہچ تقطیع دلچسپی نش خالی۔اسۍ دمون ہایکو انگریزی اچھرن منز۔ ماتراہن ہند ژھین ییہِ ہایفن سیتۍ ظاہر کرنہ۔

na-ra ma-na-e
shi-chi-do-o ga-ra-n
ya-e za-ku-ra

اتھ منز چھیہ خاص کر دوٚیم لٲن توجہس لایق۔ اتھ منز چھہِ ضرورتہ مطابق ستھ ماترا، مگر پانژے ہیجلۍ۔ ہایکوہچ دوٚیم لٲن گژھہِ ستن ماتراہن برابر آسنۍ۔ گۅڈنکہِ لفظک ٲخری ہیجل چھہ doo یس دۅن ماتراہن(do-o) برابر چھہ۔ یتھے پاٹھۍ چھہ دوٚیمہِ لفظک ٲخری ہیجل ran دۅن ماتراہن (ra-n) برابر

کاشرس منز سادہ ماترا وزنہ چہ مثالہِ خاطرہ وچھون کہن (11) ماتراہن ہند یہ لل واکھ:

کُس ڈنگہِ تہ کُس زاگہِ
2 12 1 2 12 11
کٚس سر وترِ تیلی
2 2 12 22 11
کُس ہرس پوزِ لاگہِ
2 21 12 12 11
کُس پرمہ پد میلی
2 12 2 22 11

پیٹھمہ پریژھہِ ہندس چوپایی وزنس پیٹھ وچھون یہ لل واکھ:

تلہ چھے زیس تے پیٹھہ چھکھ نژان
ونتہ مالہِ وۅندہ کیتھہ پژان چھے
سورے سۅمرتھ ییتۍ چھے مۅژان
ونتہ مالہِ ان کیتھہ رۅژان چھے

تلہ چھے زیس تے پٮٹھہ چھکھ نژان 16 ماترا
11 2 2 2 11 2 1 2 1
ونتہ مالہِ وۅندہ کٮتھہ پژان چھے 16 ماترا
2 1 12 11 1 1 1 2 1 2
سورے سۅمرتھ ییتۍ چھے مۅژان 16 ماترا
2 2 22 2 2 1 2 1
ونتہ مالہِ ان کٮتھہ رۅژان چھے 16 ماترا
2 1 12 2 1 1 1 2 1 2

وچھو امہِ واکھہ کین کینژن لفظن ہنز ماترا تفصیل:

لل دیدِ ہندِ واکھہ کین کینژن لفظن ہند ماترا تعداد

کل ماترا

دوٚیم ہیجل

گۅڈنیک ہیجل

لفظ
پوٚت آواز تھوٚنگ گۅڈہ آواز پوٚت آواز تھوٚنگ گۅڈہ آواز
إ ل زبر ت تلہ
2 1 x 1 x
إ ٹھ ی پ پیٹھہ
2 1 x 1 x
إ د زبر وۅ وۅندہ
2 1 x 1 x
إ تھ   1 ی ک کیتھہ
2 1 x 1 x
زیر ل آ (ا+ا) م مالہِ
3 1 x 2 x
پیش+زیر     2 چھ چھے
2 2 x
زبر+زیر   3 ت تے
2 2 x
إ ت ن زبر و ونتہ
3 1 x 1 1 x
س زیر+پیش ز زیس
3 1 2 x
کھ پیش چھ چھکھ
2 1 1 x
تۍ   4 زبر ی ییتۍ
2 1 1 x
ن زبر ان
2 1 1
ن آ(ا+ا) ژ زبر پ پژان
4 1 2 x 1 x
ن آ(ا+ا) ژ ۅ م مۅژان
4 1 2 x 1 x
ن آ(ا+ا) ژ ۅ ر رۅژان
4 1 2 x 1 x
تھ اِ ر م ۅ س سۅمبرتھ
4 1 1 x 1 1 x

(1) دوچشمی اچھر چھہِ اکۍ سے مصمتس پیٹھ مشتمل۔ (2) "چھے” لفظس منز چھہِ تھوٚنگس منز زہ مصوتہ یتھ ڈپتھانگ dipthong ونان چھہِ۔ پیش تہ زیر۔

(3) "تے”لفظس منز تہِ چھہِ تھوٚنگس منز زہ مصوتہ یعنی ڈپتھانگ۔ زبر تہ زیر۔ اتھ لفظس ہیکہِ نیم مصوتہ /ی/ سیتۍ تہِ یتھہ پاٹھۍ تقطیع سپدتھ: /ت+ زبر+ ی/۔ امہِ تقطیع کنۍ تہِ چھہ یہ دۅن ماتراہن برابر۔ (4) یہ پوٚت آواز چھیہ نہ دۅن مصمتن پیٹھ مشتمل، بلکہ اکس مصمتس پیٹھ یتھ منز اوٚڈ یے /ت/ صمتچ تالریت palatalizationہاوان چھہ۔ /تۍ/ چھہ مفرد تالرۍ مصمتہ۔

ماترا وزن سمجنہ خاطرہ کرۍ میہ یم واکھ پیش، حالانکہ یمن واکھن ہنز یہ ماترا برابری چھیہ اتفاقی تکیازِ یمن واکھن ہند بنیادی وزن چھہ ہیجلۍ وزنے۔ یتھے پاٹھۍ چھیہ کینژن واکھن ہنز تاکیدی برابری مدنظر کینژن واکھن منز تہ پورہ کاشرِ شاعری منز تاکیدی وزن آسنک دوکھہ لوٚگمت۔

اردو ہندی یس منز مستعمل بحر متقاربکۍ نام نہاد مزاحف وزن چھہِ دراصل ماترا وزنے یم اکہ خاص طریقہ ورتاونہ یوان چھہِ۔ یم خاص وزن یمن اردو والیو بحر میر تہِ ناو کوٚرمت چھہ، چھہ کاشرس منز رفیق رازن ورتاومتۍ۔ اکہ غزلک ماترا تجزیہ چھہ پیش:

سانہِ شہارہ چھہِ قبرستانکۍ ہی آثار
12 121 1 2222 2 122 23
شامہ پتے انہراے کراں چھہ نہ کانہہ بیمار
12 21 122 21 11 2 122 23
اندرہ چھِوا توٚہۍ بٲژ گرکۍ سٲری محفوظ
12 21 2 12 21 22 122 23
نیبرہ میہ وچھمو تۅہہ تہِ چھہ وسۍ پیومت دیوار
12 1 22 11 1 1 2 22 122 23
تاپھ چھہ شامس تام دوان انسانس برٮم
12 1 22 12 121 222 2 23
دورِ چھہ باساں سٮکھ تامتھ گاہے سبزار
12 1 22 2 22 22 122 23
اسۍ چھہِ مسافر یارب اسہِ تتھۍ وتہِ کُن لاگ
2 1 221 22 11 2 11 2 12 23
یتھ وتہِ ترٮن ترٮن دۅہن چھیہ روزاں مشکنۍ دار
2 11 2 2 21 1 22 22 12
یا گوٚو تاپھ عدالت وانن منز ہلکارۍ
2 2 12 221 22 2 122 23
یا تھووکھ سنگین قلاین منز شہجار
2 22 122 221 2 122 23

رفیق راز چھہ اتھ اردو والین ہنزِ پیروی منز 12 ماترا + 10 ماترا (کل 22 ماترا) مانان یس غلط چھہ۔ اردو والۍ چھہِ دراصل اتھ افاعیلن منز (عربی عروض کین پدین منز) گنڈنچ کوشش کران۔ رفیق رازن تہِ چھہِ امہ وزنکۍ شیہ رکن مانۍ متۍ، حالانکہ اتھ وزنس منز چھہ نہ رکنن ہند کانہہ خاص دخل۔ امہ وزنک آہنگ چھہ اتھ بے محل رکن بندی ییرہ والان۔ یہ چھہ بنیادی طور سادہ ماترا وزن یتھ نہ پدین منز گنڈنچ کانہہ خاص ضرورت یا جواز چھہ۔ پدۍ یا افاعیل یا رکن بندی چھہ آہنگ کہ دوٚگن معیارک جواز پیدہ کران مگر یمن وزنن منز چھہ نہ ٹاکارہ پاٹھۍ پدین ہند کانہہ مکرر نمونہ۔

امین کاملن چھیہ 1970 پیٹھے عربی وزنن ہندۍ افاعیل ژٹۍ ژٹۍ لیکھنچ سفارش کرمژ۔ واضح چھہ زِ اتھ سفارشہ پتہ کنہِ چھیہ یہ بصیرت زِ یم وزن چھہِ ژکہِ ماترا وزن تہ یہند یہ کردار چھہ افاعیل ژٹۍ ژٹۍ لیکھنہ سیتی نوٚن نیران۔ اتھ موقفس کٔر تمۍ "میون عروضی سوچ” مقالس منز مزید وضاحت آوازن ہندِ مقابلہ حرفن ہند تصور رٔٹتھ یتھ اسۍ زیادہ انزۍ منزۍ چھہِ۔ تمۍ کرۍ افاعیلن ہندۍ حرف یلہ، بند تہ نتھۍ قسمن منز تقسیم۔ یہ چھیہ دراصل افاعیلن ہنز ماترا تقسیم۔ سہ چھہ اکھ ماترا والین حرفن یلہ آواز ونان، زہ ماترا والین حرفن بند آواز ونان تہ نتھۍ حرفن (مثلا نار، اسمان، سوچ لفظن ہندۍ /ر/، /ن/ تہ /چ/) ہنزِ آوازِ تہِ اکھ ماترا گنزراوان۔ کامل سندین عروضی مقالن منز چھیہ آوازِ، آہنگس تہ لیہ زیادہ اہمیت۔ سہ چھہ نہ قطعا عروضس روایتی تصورن تہ اصطلاحن ہندِ ذریعہ پیش کران۔ حقیقت چھیہ یہ زِ تسندۍ عروضی تجربہ تہِ چھہِ روایتی عروضی ہنرمندی ہنزِ نمایشہ بدلہ مخصوص مقصدن تہ ضرورژن تحت امکاناتن ہندۍ بر کھولان۔ (بحوالہ میون مضمون "کاشرس منز عروضی تجربن ہنز اہمیت”)

وزنن ہنز پارۍ زان (4): تاکیدی ہیجلۍ وزن

wazan

کینژن زبانن منز چھہ وزن اکی آنہ تاکیدی تہ ہیجلۍ۔ ہیجلۍ، تکیازِ اتھ منز چھہِ ہیجلۍ گنزراونہ یوان۔ تاکیدی، تکیازِ اتھ منز چھہ تاکید تہِ گنزراونہ یوان۔ ہیجلین ہند تعداد چھہ مختلف وزن (یعنی مصرعن ہند زیچھر) تہ تاکید چھہ پدین ہنزہ مختلف ترتیبہ مشخص کران۔ امہِ دوٚگن معیارہ کنۍ چھہ یہ وزنہ نظام پیچیدہ۔

انگریزی زبان چھیہ امہ قسمک وزن ورتاوان۔

مثالہِ پاٹھۍ نمون الیکزانڈر پوپ سنزِ نظمہِ Elegy to the Memory of an Unfortunate Lady ہند یہ بند۔

Foot 5 Foot 4 Foot 3 Foot 2 Foot 1
were clos’d ing eyes -thy dy reign hands -By fo
compos’d cent limbs -thy de reign hands -By fo
a-dorn’d ble grave -thy hum reign hands -By fo
gers mourn’d -by stran nou’d and -gers ho -By stran

اتھ بندس منز چھہ ایامبک پوٚد iambic foot ورتاونہ آمت یمیک مطلب یہ چھہ زِ یہ پوٚد چھہ دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل۔ گۅڈنیک ہیجل چھہ تاکیدہ روٚس تہ دوٚیم تاکیدہ وول۔ تاکید والۍ ہیجلۍ چھہِ تلہ رکھہِ علاوہ بولڈ یعنی مۅٹین حرفن منز دنہ آمتۍ۔

پدین ہندۍ چھہِ واریاہ قسم۔

دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل پدۍ چھہِ دۅن قسمن ہندۍ۔ ایامبiamb تہ ٹراکی trochee۔ ایامب چھہ گۅڈنیک ہیجل تاکید روٚس تہ دوٚیم تاکید وول۔ ٹراکی چھہ گۅڈنیک تاکید وول تہ دوٚیم تاکید روٚس۔

بیاکھ قسم چھہ ترین ہیجلین پیٹھ مشتمل۔ اتھ اندر چھہ اناپیسٹ anapaest پوٚد یوان یتھ منز گۅڈنکۍ زہ ہیجلۍ تاکید روٚس تہ تریم تاکید وول چھہ۔ بیاکھ پوٚد چھہ اتھ اندر یوان ایمپھیبراک amphibrach یتھ منز گۅڈنیک ہیجل تاکیدہ روٚس، دوٚیم تاکید وول تہ تریم تاکیدہ روٚس چھہ۔ تریم پوٚد چھہ اتھ منز ڈیکٹل dactyl یوان یتھ منز گۅڈنیک ہیجل تاکید وول تہ باقی زہ تاکید روٚس چھہِ۔

ایامبک پوٚد چھہ زیادہ مقبول۔

پوپ سندین پیٹھمین مصرعن منز چھہِ پانژھ پدۍ، یمہ کنۍ پینٹامیٹر pentameter ناو پیوس۔

ایامبک پینٹامیٹرس منز چھیہ پانژن پدین منز پانژھ ہیجلۍ جورِ آسان یمن منز دوٚیم دوٚیم ہیجل تاکیدی چھہ۔ تاکیدی ہیجلۍ وزنن منز چھہِ پدۍ تہِ گنڈتھ تہ ہیجلۍ تہِ گنڈتھ۔

اتھ وزنس منز چھہ ہیجلۍ پدین منز گنڈنک جواز تکیازِ یم پدۍ چھہِ پانہ آہنگک اکھ نمونہ/ التزام پیدہ کران۔

پدین ہندی پاٹھۍ چھہِ وزن تہِ واریاہ قسمن ہندۍ۔ اسہِ چھہ پتاہ زِ پینٹامیٹر چھہ پانژن پدین ہند وزن۔

اکہ پدِ کس وزنس یس سیٹھا نایاب چھہ چھہِ مانو میٹر monometer ونان۔

دۅن پدین ہندس وزنس چھہِ ڈای میٹر diameter  ونان۔

ترین پدین ہندس وزنس ٹرای میٹر trimeterتہ ژۅن پدین ہندس وزنس ٹیٹرا میٹر tetrameter ونان۔

شٮہ، ستھ تہ ٲٹھ پدین ہندین وزنن چھہِ ہیکسا میٹرhexameter، ہیپٹا میٹر heptameterتہ اوکٹا میٹرoctameter ونان۔

پینٹا میٹر چھہ زیادہ مقبول۔

انگریزی زبانۍ ہند تاکیدی آہنگ اگرچہ امہِ کہ تاکیدی ہیجلۍ عروضچ بنیاد فراہم کران چھہ، تاہم چھہ یہ لفظن ہندِ عام بول چال کہ تاکید نش انحراف تہِ کران۔ یعنی عروضی تاکید چھہ نہ لسانی تاکیدس سیتۍ ہمیشہ مطابقت تھاوان۔

وچھون ملٹن سند یہ مصرعہ۔

and night sures day -that mea the space Nine times

اتھ منز چھہ گۅڈنیکے لفظ nineتاکیدہ روٚس ییلہ زن عام بول چال مطابق اتھ پیٹھ تاکید گژھہِ آسن۔

وۅنۍ وچھون اسۍ کیٹس سنزِ نظمہِ The Fall of Hyperion منزہ بنم مصرعہ۔

dis- tinct mer are -the drea et and -The po

یہ نظم تہِ چھیہ ایامبک پینٹامیٹرس منز وننہ آمژ۔ اتھ مصرعس منز چھہِ زہ لفظ and تہ are تاکید سان ورتاونہ آمتۍ (یا پرنۍ پیوان) ییلہ زن عام بول چالس منز یم غیر تاکیدی لفظ چھہِ۔ پوپ سندس ژورمس مصرعس منز تہِ چھہ تریمس پدس منز and لفظ تاکید سان پرن پیوان۔

گویا اتھ وزنہ نظامس منز چھیہ زبانۍ ہندس فطری عام بول چال کس تاکیدس مقابلہ کنہِ حدس تام مصنوعیت۔ یہ انحراف چھہ نہ صرف یمن دۅن مصرعن منز بلکہ چھہ یہ انگریزی شاعری منز سیٹھا عام۔

حقیقت چھیہ یہ زِ پریتھ کانہہ وزنہ نظام چھہ زبانۍ طرزاوان یعنی stylize کران۔ وزنہ نظامن ہند یہ طرزاون تہ یہ مصنوعیت چھیہ نہ کمزوری بلکہ یمن ہنز اکھ خاصیت یۅس پٮٹھے بانہ نثرس تہ شاعری منز روایتی طور ظاہری امتیاز قایم کران چھیہ، دویمین لفظن منز پرن والۍ تہ لکھن والۍ سندِخاطرہ اکھ شعری ماحول پیدہ کران چھیہ۔

تاکیدی ہیجلۍ عروضس منز چھہ آہنگک دوٚگن معیار ورتاونہ یوان یمہ کنۍ یہ پیچیدہ وزنہ نظامن منز شامل چھہ۔ یعنی اتھ عروضس منز چھہ اکہ طرفہ پدین ہند تعداد آہنگک معیار بنان تہ بییہ طرفہ یمن پدین منز ہیجلین ہنز تنظیم تہ تاکید۔ راہی تہِ چھہ روایتی کاشرِ شاعری پیٹھ تاکیدی ہیجلۍ عروض کہ آہنگک دوٚگن معیار منطبق کرنچ سفارش تہ کوشش کران۔ انگریزی زبانۍ ہندس بول چالس منز چھہ تاکیدی آہنگ ییلہ زن کاشرس منز یژھ کانہہ کتھ چھیہ نہ۔ یعنی اسۍ چھہِ نہ جملہ کین اڈین لفظن پیٹھ لسانی طور زیادہ زور تراوان تہ اڈین پیٹھ کم۔ لہذا چھہ امہ قسمک تاکید ژینن تہ اتھ پیٹھ دٔرتھ پدۍ بندی تہ تتھ پیٹھ اتفاق سانہ خاطرہ ناممکن۔ کاشرین بٲتن ہنزِ راہی سنزِ پدۍ بندی منز چھیہ نہ تاکیدی ہیجلۍ عروض کین پدین برعکس کانہہ تنظیم، ترتیب یا ہشر میلان۔راہی یس چھہ پدۍ بندی ہند خیال شاید شفیع شوق نہ یمہ بیانہ پیٹھہ ووٚتھمت:

"اکس زور دار آوازِ تہ بییس زوردار آوازِ درمیان ہیکن اکہِ پیٹھہ ژور لۅژہ آوازہ تہِ ٲستھ۔ یۅہے لِکھہ چھہ کاشرین واکھن منز تہِ باسان۔” (شفیع شوق، شیخ العالم تہ تمۍ سند زمانہ، ص ۲۳)

وچھو بنمہِ واکھچ راہی ینۍ پدۍ بندی:

تلہ چھے زیس تے پیٹھہ چھکھ نژان
ت ت تم تم تم ت ت تم ت تا م
ونتہ مالہِ وۅندہ کیتھہ پژان چھے
تم ت تم ت ت ت ت ت ت تام تم
سورے سۅمبرتھ ییتۍ چھے مۅژان
تم تم تم تم تم تم ت تام
ونتہ مالہِ ان کیتھہ رۅژان چھے
تم ت تم ت تم ت ت ت تام تم

یمن پدین ہند تجزیہ چھہِ بیہ جوڑ۔ یعنی تجزیکۍ یم نمونہ چھہِ اکھ اکس نش مختلف۔(ت ت تم) چھہ (تم تم) یا (ت ت ت ت) یا( ت تام) نش آہنگہ کنۍ مختلف۔ یمن چھہ نہ پانہ وانۍ کانہہ ہشر یمہ کنۍ اصل واکھس منز آہنگ چہ بیہ ربطی ہند دوکھہ لگتھ ہیکہِ۔ لہذا چھیہ نہ یمن پدین ہنز یہ تجزیاتی تنظیم امہ پدۍ بندی ہند معیار بنان۔ اگر فرض کرو زِ پریتھ مصرعس منز چھہِ ژور تاکید برابر وقفن پیٹھ ، یہ پدۍ بندی کیا چھیہ تمہ مزید ہاوان؟ پدۍ بندی ہند مقصد کیا چھہ؟ شاید چھہ یہ زانن ضروری زِ تاکید چھہ ہیجلس سیتۍ تعلق تھاوان۔ یعنی تاکید چھہ ہیجلچ ملکیت۔ مثلا "ونتہ مالہِ ” لفظن منز چھہ تاکید یمو منزہ کُنہِ اکہ لفظہ کس اکس ہیجلس پیٹھ فرض کرُن۔ تاکید ہیکہ نہ اکی ساتہ دۅشونی لفظن ہندین ژۅشونی ہیجلین پیٹھ ٲستھ۔ اگر اسۍ پریتھ مصرعس منز ژور تاکید چھہِ تصور کران تم گژھن برابر وقفن پیٹھ ژۅن ہیجلین پیٹھ آسنۍ۔ تاکیدس اندۍ پکھۍ باقی ہیجلۍ یا لفظ کتھ بنیادس پیٹھ کروکھ اسۍ پدین منز تقسیم؟ انگریزی شاعری منز چھیہ یہ تقسیم ہیجلۍ تعداد کس بنیادس پیٹھ کرنہ یوان۔ امی چھہِ اکس مصرعس منز اکی قسمکۍ پدۍ ورتاونہ یوان۔ مثلا ایامبک پوٚد یعنی دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل پوٚد۔ اگر اکس مصرعس منز پانژھ تاکید مانوکھ (پینٹامیٹر) ، اتھ منز گژھن تیلہ پانژھ ہیجلۍ جورِ آسنہِ (ایامبک ہیجل)۔ تہِ زن گوٚو پریتھ تاکید وٲلس ہیجلس سیتۍ بیاکھ اکھ غیر تاکیدی ہیجل۔ مگر راہی سنز پدۍ بندی منز چھہِ (تمۍ سندِ تجزیہ مطابق) اڈین پدین منز زہ ہیجلۍ، اڈین منز تریہ، اڈین منز ژور۔۔۔نثرس تہِ چھیہ امہ قسمچ پدۍ بندی ممکن۔ اگر نہ پدۍ تخلیقی generative آسن تمن ہند جواز کیا چھہ؟

میہ ٲس پیٹھمہ واکھچ پدۍ بندی اکس مضمونس منز فارسی عروضی ارکانو سیتۍ یتھہ پاٹھۍکرمژ، یہ ہاونہ خاطرہ زِ فارسی عروض چھہ ہیجلۍ وزنن تہِ کۅم کران۔

تلہ چھے زیس تے پیٹھہ چھکھ نژان
فعلن (2) فعلن (2) فعلن (2) فعول (2)
ونتہ مالہِ وۅندہ کیتھہ پژان چھے
فعلن (2) فعلن (2) فعول (2) فع (1)
سورے سۅمبرتھ ییتۍ چھے مۅژان
فعلن (2) فعلن (2) فعلن (2) فعول (2)
ونتہ مالہِ ان کیتھہ رۅژان چھے
فعلن (2) فعلن (2) فعول (2) فع (1)

راہی چھہ "تلہ چھے” لفظن منز تریہ(3) ہیجلۍ تصور کران ییلہ زن یمن منز حقیقی طور زے (2) ہیجلۍ چھہِ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ تس "وۅندہ کیتھہ” لفظن منز ژور (4) ہیجلۍ باسان ییلہ زن یمن منز تہِ زے (2) ہیجلۍ چھہِ۔ امۍ سنزِ اتھ غلط ہیجلۍ تقسیمہ پتہ کنہِ چھہ تحریری لفظ تہ تحریری لفظہ کس بنیادس پیٹھ یمن نفظن ہنز تصوری (ذہنی) ہیجلۍ تقسیم۔ مگر ییلہ اسۍ زبانۍ ہند ملفوظی کردار نظرِ تل تھاوو (یہے چھہ پریتھ عروضچ بنیاد) یمن لفظن ہنز حقیقی تقسیم چھیہ دۅن (2) ہیجلٮن منز گژھان۔

پیٹھمہ ہیجلۍ تقسیمہِ سیتۍ چھیہ وۅنۍ امچ پدۍ بندی تہِ سمج یوان یعنی زہ ہیجلۍ فی پوٚد، صرف دویمس دویمس مصرعہ کس ٲخرس پیٹھ صرف اکھ ہیجل۔سوال چھہ وۅنۍ زِ یمن پدین منز چھا تاکید تہِ موجود۔ امیک ژھوٚٹ جواب چھہ ییلہ نہ زبانۍ منز لسانی تاکید اوس تہ شعری وزنس منز کپارۍ آو؟ کاشر زبان چھیہ ہیجلیو سیتۍ وقفہ مینان، تاکید سیتۍ نہ۔ دوٚیم کتھ چھیہ یہ زِ مصرعہ ژۅن ٹکرن منز تقسیم کرُن چھیہ تقطیع یۅس دراصل فارسی وزنس (فعلن فعلن فعلن فع) پیٹھ دٔرتھ چھیہ۔یہ چھہ نہ واکھ پرنک کانہہ طریقہ ۔یعنی اسۍ چھہِ نہ واکھ یتھہ پاٹھۍ تھکھ دی دی پران (تلہ چھے # زیس تے # پیٹھہ چھکھ # نژان)۔ یہ گوٚو ‘ونہ وُن’۔ یہ گوٚو گیوُن۔ گیونک اکھ طرز۔ واکھ چھہ نہ گیون۔ وژنس تہ واکھس منز یۅس اکھ بٔڈ فرق چھیہ سۅ چھیہ یی زِ ییتہ وژن گیونک چیز چھہ، واکھ چھہ تحت اللفظ پرنک چیز۔ نتہ چھہِ فارم کہ لحاظہ دۅشوے لگ بگ کُنے چیز۔ چونکہ گیونہ خاطرہ گژھن اکہ کھۅتہ زیادہ بند آسنۍ، لہذا چھہ وژن واکھ چی توسیع۔واکھ پرنکۍ چھہِ حقیقتا زےطریقہ ممکن۔ اکھ گوٚو پورہ مصرعہ کُنہِ تھکہ ورٲے پرُن تہ بیاکھ گوٚو مصرعہ دۅن حصن منز باگ اکھ وقفہ ترٲوتھ پرُن۔ مثلا یتھہ پاٹھۍ:

تلہ چھے زیس تے      # پیٹھہ چھکھ نژان
ونتہ مالہ و‎ندہ کیتھہ # پژان چھے
یا (ونتہ مالہِ# وۅندہ کیتھہ پژان چھے)
سورے سۅمبرتھ # ییتۍ چھے مۅژان
ونتہ مالہِ ان کیتھہ # رۅژان چھے
یا (ونتہ مالہِ # ان کیتھہ رۅژان چھے)

بہرحال، فارسی عروضک یہ وزن فعلن فعلن فعلن فعول / فع چھہ دراصل ہیجلۍ وزن یس تمام روایتی کاشرِ شاعری ہنز بنیاد چھہ۔

وزنن ہنز پارۍ زان (3): تاکیدی وزن

م

تاکید چھہ کنہِ لفظس پیٹھ زور تراونہ خاطرہ ورتاونہ یوان۔مثلا: ‘راتھ ٲس سردی۔’

اتھ جملس منز چھہِ تریہ لفظ۔ اگر سون مراد یہ آسہِ زِ سردی چھیہ نہ از بلکہ ٲس راتھ، تیلہ تراوو اسۍ یہ جملہ ادا کرنہ وزِ ‘راتھ’ لفظس پیٹھ زور۔ اگر اسہِ یہ ونن آسہِ زِ اتھ منز چھہ نہ کانہہ شک زِ راتھ ٲس سردی، تیلہ تراوو اسۍ ‘ٲس’ لفظس پیٹھ زور۔ تہ اگر سردی ہنز شدت ہاونۍ مراد آسہِ، تیلہ تراوو اسۍ ‘سردی’ لفظس پیٹھ زور۔

جملہ کس کنہِ لفظس پیٹھ معنی کہ لحاظہ باقی لفظن مقابلہ زیادہ زور تراوُن چھہ واریاہن زبانن منز رایج۔ معنیس سیتۍ واٹھ آسنہ کنۍ ونو اسۍ اتھ معنوی تاکید۔ معنوی تاکید چھہ نہ وزنن ہنز بنیاد بنتھ ہیکان، تکیازِ امیک تعلق چھہ جملس سیتۍ تہ اکس جملس منز ہیکن نہ اکہ کھۅتہ زیادہ معنوی تاکیدہ ٲستھ۔ (راہی چھہ امی تاکیدچ مثال دتھ تاکیدی وزنک جواز پیش کران۔) البتہ کینژن زبانن منز چھہ جملہ کین اڈین لفظن پیٹھ زیادہ زور یا تاکید پیوان تہ اڈین کم یتھ معنی بجایہ زبانۍ ہندس آہنگس سیتۍ تعلق چھہ۔ اتھ ونو اسۍ لسانی تاکید۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون انگریزی زبان۔ مثلا یہ جملہ:

They will liberate me tomorrow.

اتھ جملس منز چھہِ صرف زہ لفظ یمن پیٹھ تاکید چھہ۔ تاکید کنۍ چھہِ انگریزی زبانۍ منز دۅیہ قسمکۍ لفظ۔ اکھ قسم گوٚو تم لفظ یم جملک بنیادی معنی پیش کران چھہِ یعنی پیٹھمہِ جملکۍ liberate تہ tomorrow ، تہ بیاکھ قسم گوٚو تم لفظ یم جملک گرامر پیش کران چھہِ یعنی پیٹھمہِ جملکۍ They, will تہ me۔ گۅڈنکہ قسمکۍ لفظ یعنی اسم تہ فعل (صفت بیترِ تہِ) چھہِ تاکید والۍ تہ دوٚیمہِ قسمکۍ لفظ یعنی اسم ضمیر تہ حروف جار بیترِ چھہِ عام طور غیر تاکیدی۔

تاکیدی وزنن اندر چھہ شعرن منز لفظن ہند تاکید گنزرنہ یوان۔ یہ چھہ ہیجلۍ وزنکۍ پاٹھۍ سادہ وزن۔ ییتہِ ہیجلۍ وزنن منز ہیجلین ہند یکسان تعداد آہنگک اصول بنان چھہ، تاکیدی وزنس منز چھہ تاکیدن ہند یکسان تعداد آہنگ پیدہ کران۔

آرل سٹاین تہ جارج گریرسن ہویو یورپی محققو چھہ یہ خیال پیش کوٚرمت زِ کاشرِ شاعری منز ، واکھ ہیتھ، چھہ تاکیدی وزن ورتاونہ آمت، حالانکہ سانۍ زبان چھیہ نہ تاکیدی زبان۔ اتھ منز چھہ نہ لسانی تاکید یعنی جملن منز چھہ نہ اڈین لفظن پیٹھ زیادہ تہ اڈین پیٹھ کم زور تراونہ یوان۔ مگر گریرسن سندِ خیالہ چھہِ لل واکھن منز فی مصرعہ ژور تاکید برابر وقفن پیٹھ ورتاونہ آمتۍ۔ مثلا

آمہِ پنہ سدرس ناوِ چھیس لمان
کتہِ بوزِ دے میون میہ تہِ دی تاٰر
آمین ٹاٰکین پونۍ زن شمٰان
زو چھم بریمان گرہ گژھہ ہٰا

ہیجلین تلہ ( -) رکھ تراونہ سیتۍ چھہ پریتھ مصرعس منز ژورن جاین تاکید ہاونہ آمت۔ یمن لفظن یا لفظن ہندین حصن پیٹھ تاکید چھہ، تم چھہِ مقابلتہ زورہ سان یعنی پھورہ کہ تھزرہ سان پرنہ یوان۔  مگر تاکید چھہ نہ واکھن ہندِ وزنچ بنیاد۔ یعنی واکھن ہند تاکید چھہ نہ لسانی یا عروضی حقیقت تھاوان بلکہ چھہ یہ بقول امین کامل پرنک اکھ خاص طرز۔ حقیقت چھیہ یہ زِ واکھن منز تہِ چھہ بنیادی طور ہیجلۍ وزنے ورتاونہ آمت۔ مثلاوچھو امہ واکھچ ہیجلۍ تقطیع ۔

1 2 3 4 5 6 7 8
آمۍ پن سد رس ناوۍ چھس ل مان
کتۍ بوزۍ دے میون میتۍ دی تار
آ مٮن ٹا کین پونۍ زن ش مان
زو چھم برے مان گر گژھ ہا

گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس منز چھہِ 8 ہیجلۍ تہ دوٚیمس تہ ژورمس مصرعس منز چھہ7 ہیجلۍ ورتاونہ آمتۍ، یوس اکثر واکھن ہنز وزنی ترتیب چھیہ ۔ سادہ تاکیدی وزنن منز چھہ نہ مصرعن منز ہیجلین ہند تعداد یکسان آسان، بلکہ چھہ ہیجلۍ تعداد کُنہِ ضابطہ ورٲے ہران/کم گژھان۔ مثالہ پاٹھۍ وچھون برونہہ کن کمنگس سنز مختصر نظم۔مگر واکھن منز چھہ ہیجلۍ تعداد یکسان۔ یہ چھہ تتھۍ وزنس منز ممکن یتھ منز ہیجلۍ گریند ورتاونہ آسہِ آمژ۔ کاشرس بول چالس منز چھہ لفظن پتہ کنہِ ینہ والۍ ژھوٚٹۍ ہیجلۍ (یعنی ژھوٚٹۍ مصوتہ : زیر تہ عینہ زیر) دباونک رحجان۔ اتھ دجحانس تحت چھہِ اکثر لوکھ یتھین لفظن مثلا "زبانہِ” بدل زبانۍ”، "شاعرییہ” بدلہ "شاعری”، "زندگیہ” بدلہ "زندگی” ، "نِشہ” بدلہ "نِش” تہ "بدلہ” بدل "بدل” بولان تہ لیکھان۔ یہ رحجان چھہ سانہِ شاعری تہ وزنس پیٹھ تہِ اثرانداز۔ پیٹھمس واکھس منز وچھو بنمین لفظن منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ ٲخری ہیجلۍ دبان۔

آمہِ = آ+مہِ < آمۍ
پنہ = پ+نہ < پنّ
ناوِ = نا+وِ < ناوۍ
کتہِ = ک+تہِ < کتۍ
بوزِ = بو+زِ < بوزۍ
مٮہ تہِ = مٮہ+تہِ < میتۍ
گرہ = گ+رہ < گرّ
گژھ = گ+ژھ < گژھّ
دِیہِ = دِ+یہِ < دی

یمن لفظن منز چھہِ زیرِ یعنیِ[اِ] مصوتس پیٹھ مشتمل اند ہ ہیجلۍ ہلکہ تالرۍ تہ عینہ زیرِ یعنی [إ] مصوتس پیٹھ مشتمل اند ہ ہیجلۍ ہلکہ مشدد حالت پیدہ کران۔ وچھو یہ صوتی عمل بنمین مصرعن منز تہِ یم فارسی عروض مطابق وننہ چھہِ آمتۍ۔

قدم تہ سوٚدرہ طلاطم سمے تہ وتہ وٲناکھ (کامل)
و+تہ< وتّ

حسن نہ کنہِ تہِ ژۅاپارۍ حے تہ سین تہ نون (کامل)
ک+نہِ < کنۍ

اگر گرہست دیی موقعہ کانہہ تہ اسہِ کن آکھ (کامل)
ا+سہِ < اسۍ

یا پزِ نہ وۅں پشرُن یہ پنن زۅہرقہ واوس (راہی)
پ+زِ < پزۍ

یا لول تہ رتہ زول نتے د   ٕے تہ اماوس (راہی)
ر+تہ < رتّ

بییہِ کیا چھہ مدعا حسنک بییہِ کیا چھہ ندا عشقک (راہی)
ب+یہِ < بیۍ

پے آم دہلۍ گاشہِ ژندر کڈِ نہ بمن واش (عازم)
ک+ڑِ < کڈۍ

اچھہِ دارِ مثرر اوس اچھر ڈولہِ بٔرم راتھ (عازم)
ا+چھہِ < اچھۍ

تژھ تٍر یوان ٲس زِ رتھ شٹھہِ ہے رگن منز (عازم)
ش+ٹھہِ < شٹھۍ

وُنہِ اوس مٮہ حیرت تہِ رژھا خوف تہِ اتھۍ منز (راز)
وُ+نہِ < ونۍ

اتھۍ منز میہ کھژم کیف تہ پییہِ نندرِ زۅلا ہش (راز)
پ+یہِ < پیۍ

رژھرتھ چھیہ اگر تھونہِ تہ لگہِ نار حریرس (راز)
ل+گہِ < لگۍ

یہ گژھہِ یاد تھاون زِ خط کشیدہ لفظن ہندۍ ٲخری مصوتہ دباونۍ چھیہ نہ کانہہ عروضی مجبوری بلکہ یتھ پاٹھۍ میہ پیٹھہ کنہِ ووٚن کاشرِ بول چالک اکھ مخصوص صوتی عمل یس سٲنس پریتھ وزنہ نظامس منز تہِ نوٚن چھہ۔ اتھ صوتی عملس چھہ سانہِ زبانۍ ہندس بدلونس صوتی مزازس سیتۍ رشتہ یتھ کن امین کاملن یہ ؤنتھ اشارہ کوٚرمت چھہ زِ کاشرس آہنگس منز چھیہ نہ زہ ژھۅچہ آوازہ (یعنی زہ ژھۅٹۍ ہیجلۍ) اکس اکھ پتہ یوان تکیازِ یہ چھہ سٲنس مزازس خلاف۔یہ صوتی عمل چھہ زیادہ تر تمن لفظن منز سپدان یم دۅن ژھۅٹین ہیجلین پیٹھ مشتمل چھہِ۔

خالص تاکیدی وزنچ مثال دمو اسۍ E. E. Cummings سنزِ یمہِ نظمہِ سیتۍ۔

what if a much of a which of a wind (10)
gives the truth to summer’s lie; (7)
bloodies with dizzying leaves the sun (8)
and yanks immortal stars awry? (7)
Blow king to beggar and queen to seem (9)
(blow friend to fiend: blow space to time) (8)
— when skies are hanged and oceans drowned, (8)
the single secret will still be man… (9)

اتھ منز چھہِ فی مصرعہ ژور تاکید یم بولڈ یعنی مۅٹیو حرفو سیتۍ تہ تلہ رٕکھہ ترٲوتھ ہاونہ چھہِ آمتۍ۔ سیٍتی چھہ پریتھ مصرعہ کین ہیجلین ہند تعداد بریکٹن منز دنہ آمت۔ ظاہر چھہ زِ (واکھن برعکس)ہیجلین ہند تعداد چھہ نہ یمن مصرعن منز یکسان۔ البتہ چھہ تاکید یمن مصرعن منز یکسان طور بٲگرتھ یمہ کنۍ آہنگ پیدہ چھہ گوٚمت۔ یہ آہنگ چھہ تسندِ خاطرہ ژینن مشکل یمۍ سنز زبان تاکیدی آسہِ نہ۔

تاکیدی وزنن منز تہِ چھہ نہ ہیجلۍ وزنکی پاٹھۍ پدین یا ارکانن ہند عمل دخل۔ اتھ منز چھہ نہ لفظن یا ہیجلین ہند تعداد اہم بلکہ برابر وقفن پیٹھ ینہ وول تاکید یمہِ سیتۍ آہنگ پیدہ گژھان چھہ۔

یورپی محققن پتہ چھہ امین کاملن کاشرِ شاعری ہنزِ تاکیدی عروضی خصوصیژ کن یتھہ پاٹھۍ اشارہ کوٚرمت۔

"شاعر اوس کنہِ اصول تہ قاعدہ بدلہ محض پننیو کنو سیتۍ شعرن تقطیع (ژھینہ بندی) کران، یتھ منز سہ ساری کھۅتہ زیادہ اہمیت لفظن ہندِ تعدادہ بدلہ تہندس تلفظس پیٹھ دباو تراونس یا لمتھ لستھ ادا کرنس پیٹھ دوان اوس۔” (کۅنگ پوش، 1952)

اتھ اقتباسس منز چھیہ زہ کتھہ وننہ آمژہ۔ (1) کاشرِ شاعری ہند وزن چھہ نہ پیچیدہ۔ یعنی یہ چھہ کنہِ بیرونی اصول بندی بجایہ زبانۍ ہنزِ لفظن ہنزِ فطری ژھینہ بندی پیٹھ قایم۔  (2) اتھ منز چھہ نہ لفظن ہند تعداد بلکہ لفظن ہند دباو اہم۔

گۅڈنچہ کتھہِ پیٹھ شک کرُن چھہ مشکل تکیازِ یہ وزن چھہ لل دیدِ پیٹھہ احد زرگرس تام بلکہ نادمن، کاملن تہ راہی ین تہِ کنہِ اصول بندی ہند علم آسنہ ورٲے وجدانی طور ورتوومت۔ البتہ دوٚیم کتھ چھیہ بحث طلب۔ رحمن راہی ین چھیہ عروضس پیٹھ پننہ کتابہِ منز کاملنۍ یہے دوٚیم کتھ، یتھ پتہ کنہِ یورپی محققن ہندۍ بیان تہِ چھہِ، پنن مقالہ بنٲوتھ ورتاومژ۔ مگر تمۍ چھیہ اتھ سیتۍ سیتۍ کاملنہِ گۅڈنچہ کتھہِ برعکس یہ ہاونچ کوشش کرمژ زِ یہ وزن چھہ پیچیدہ اصول بندی ہند مظہر۔ اتھ سلسلس منز چھہ تمۍ یورپی محققن تہ شفیع شوق نہِ یتھ کتھہِ پیٹھ اعتبار کٔرتھ انگریزی زبانۍ ہند پیچیدہ وزنہ نظام اتھ پیٹھ منطبق کرنچ کوشش کرمژ۔

"کاشرین واکھن منز (چھہ) عروضک دارمدار انگریزی شاعری ہندۍ پاٹھۍ سۅرن ہندس زورس یا دباوس پیٹھ۔” (شفیع شوق، شیخ العالم تہ تمۍ سند زمانہ، ص ۲۳)=

اسۍ ہیکو یہ ؤنتھ زِ واکھن ہند بنیادی وزن چھہ ہیجلس پیٹھ تہ یمن ہند مخصوص طرزِ ادا چھہ تاکیدی تکیازِ واکھ تہ شروکۍ چھہِ نہ گیونہ یوان بلکہ پند، نصیحت تہ دانایی ہندِ شعری اظہار کہ طور تحت اللفظ وننہ یوان۔ لہذا اوس یہند طرزِ ادا خصوصی طور تاکیدی آسُن ضروری۔ واکھس برعکس چھہ وژُن خالص گیونک چیز تہ اتھ منزٲس نہ اتھ تاکیدی طرز اداہس کانہہ جاے۔ مگر دۅشونی فارمن ہند وزن چھہ ہیجلۍ وزن۔ واکھ چہ تہ وژنہ چہ اتھ فرقہِ کُن چھہ امین کاملن جوابن چھہ عرض پننہِ کتابہِ منز اشارہ کوٚرمت تہ یہ چھیہ اکھ اہم فرق۔

وزنن ہنز پارۍ زان (2): ہیجلۍ وزن

شت

ہیجلۍ وزنن منز چھیہ آہنگچ بنیاد ہیجلین ہندس یکسان تعدادس پیٹھ ۔ ہیجلۍ وزن سمجھنہ خاطرہ چھیہ ہیجلہِ کہ تصورچ زان ضروری۔یہ زان کرو اسۍ یتھہ پاٹھۍ حاصل:

زبانۍ ہنزہ آوازہ چھیہ موٚٹۍ پاٹھۍ دۅن قسمن منز باگرنہ یوان: مصمتہ (consonant) تہ مصوتہ (vowel)۔

مصمتہ چھیہ تمہ آوازہ یم ٲسس منز شہس بولن تانو سیتۍ کنہِ قسمک روٚٹ، ٹھوٚر یا دباو تراونہ سیتۍ بناونہ یوان چھیہ ۔مثلا /ب/، /ر/، /س/، /م/، /ی/، /ہ/ بیترِ۔

مصوتہ چھیہ تمہ آوازہ یمن ہندس پھورس منز شہس کانہہ ٹھوٚر یا دباو تراونہ چھہ نہ یوان بلکہ چھیہ ٲسہ وتھ بالکل یلہ حالژ منز آسان۔ کاشرس منز چھہِ 14 مصوتہ، یمن منز ستھ ژھوٚٹۍ تہ ستھ زیٹھۍ چھہِ۔  /اَ/، /اِ/، /اُ/، /أ/، /إ/، /وٚ/ تہ /ۅ/ چھہِ ژھوٚٹۍ مصوتہ۔ /آ/، /ای/، /اوٗ/، /ٲ/، /اٍ/، /او/ تہ /ۅا/ چھہِ زیٹھۍ مصوتہ۔

یموے مصمتہ تہ مصوتہ آوازو سیتۍ چھہِ ہیجلۍ ترتیب لبان۔ یمنے آوازن ہنزن لۅکچین تنظیمن یم اکۍ سے شہہ ژیلس منز بولنہ یِن چھہِ ہیجلۍ ونان۔ اکھ ہیجل ہیکہِ خالص مصوتس پیٹھ مشتمل ٲستھ یا ہیکہِ اتھ منز مصوتس بتھہِ یا پتہ یا دۅشونی اندن مصمتہ ٲستھ۔ ہیجلیک منزیم حصہ یس اکثر اکھ مصوتہ چھہ آسان چھہ ہیجلیک تھوٚنگ بناوان۔

زبانن منز چھہ ہیجلین منز تھوٚنگ آسن عام طور ضروری۔ گۅڈہ آوازہ چھیہ زبانن منز سیٹھا عام بلکہ چھیہ کینژن منز ضروری۔ پوٚت آوازہ چھیہ نہ ضروری۔ یمن ہیجلین منز پوٚت آوازہ چھیہ نہ آسان تمن چھہِ یلہ ہیجلۍ ونان تہ یمن منز پوٚت آوازہ آسان چھیہ تمن چھہِ بند ہیجلۍ ونان۔ ہیجلہِ چہ گۅڈہ تہ پوٚت آوازہ چھیہ عام طور مصمتہ آسان۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون ہیجل "نور”۔ امچ گۅڈہ آواز چھیہ مصمتہ /ن/، امیک تھوٚنگ چھہ مصوتہ /و/ تہ امچ پوٚت آواز چھیہ مصمتہ /ر/۔ چونکہ اتھ ہیجلس منز چھیہ پوٚت آواز، لہذا چھہ یہ بند ہیجل۔ یلہ ہیجلچ مثال چھہِ لفظ "بہ” یا لفظ "ما”۔ یمن پتہ کنہِ چھہ نہ کانہہ مصمتہ۔ یم چھہِ مصوتس پیٹھ اند واتان۔ لفظ "بہ” چھہ مصمتہ /ب/ سیتۍ شروع گژھان۔ امچ دوٚیم آواز چھیہ مصوتہ /إ/۔ لفظ "ما” چھہ /م/ مصمتہ سیتۍ شروع گژھان تہ /آ/ مصوتس پیٹھ اند واتان۔

ہیجلۍ چھہِ اکثر لوٚتۍ تہ گوٚبۍ یا ژھوٚٹۍ تہ زیٹھۍ قسمن منز بٲگرنہ یوان۔ ژھوٚٹۍ ہیجلۍ چھہِ اکس مصمتس تہ اکس ژھوٚٹس مصوتس پیٹھ مشتمل آسان۔ مثلا یم لفظ چھہِ ژھوٚٹین ہیجلین ہنزہ مثالہ: [بہ]، [چھہ]، [زِ]، [تہِ]۔

زیٹھین ہیجلین منز چھہ ترییہ قسمکۍ لفظ یوان۔

(1)تم لفظ یہنز ترکیب( مصمتہ+ ژھوٚٹ مصوتہ + مصمتہ) چھیہ ۔ مثلا [بر]، [دب]، [کوٚر]، [زٕل]، [نٔر]، [کٔنۍ]، [کیُل]۔ (‘بر’ تہ ‘دب’ لفظن ہند ژھوٚٹ مصوتہ چھہ زبر یۅس اکثر لیکھنہ چھیہ نہ یوان۔)

(2)تم لفظ یہنز ترکیب ( مصمتہ+ زیوٹھ مصوتہ) چھیہ ۔ مثلا [ما]، [زو]، [تی]۔

(3)تم لفظ یہنز ترکیب ( مصمتہ+ زیوٹھ مصوتہ + مصمتہ) چھیہ ۔ مثلا [جار]، [زان]، [تیر]، [گور]، [چانۍ]، [پاوۍ]۔ (اوٚڈ /ۍ/ چھہ نہ الگ مصمتہ بلکہ امہِ برونہہ ینہ والہِ مصمتچ تالریت یعنی palatalization ظاہر کران۔)

یم تریمہِ قسمکۍ لفظ چھہِ زیٹھۍ پہن ہیجلۍ۔ فارسی عروض کنۍ چھہِ اسہ یمن منز زہ ہیجلۍ بوزنہ یوان (کیازِ ؟تتھ پیٹھ سپدِ بُتھہِ کتھ)۔ مگر یم چھہِ لسانی طور اکۍسے ہیجلس پیٹھ مشتمل۔

ہیجلۍ چھہِ زبانۍ ہندین لفظن ہندۍ تعمیری ٹکرہ تصور کرنہ یوان۔ یا ونو دوٚیمین لفظن منز زِ ہیجلۍ چھہِ پھورکۍ بنیادی رکن۔ لفظن ہنزِ ہیجلۍ ژھینہ بندی ہند چھہ زبان بولن والین غیر شعوری علم آسان۔ وچھو کینژن لفظن ہنز ہیجلۍ ژھینہ بندی۔

ہیجلۍ تعداد (کھوور کُن) 1 2 3 کل تعداد
لفظ   (بۅن کُن)
تن تن 1
دِتھ دِتھ 1
وسۍ وسۍ 1
پیوٚو پیوٚو 1
پوٚت پوٚت 1
یاد یاد 1
دراس دراس 1
کاوۍ کاوۍ 1
ویسۍ ویسۍ 1
بییہ بیۍ (اِ) 1(2)٭
کۅنگہ کۅنگ (إ) 1 (2)٭
پتہ پت (إ) 1(2)٭
کوفورہ کو فور (ہ) 2(3)٭
دنیا دن یا 2
دادین دا دین 2
دنیادار دن یا دار 3
کمزور کم زور 2
کریمکھ ک رے مکھ 3
مارۍمندس مارۍ من دس 3

(نوٹ: /یاد/ تہ /دراس/، /زور/ تہ /دار/ چھہِ اکس اکس ہیجلس پیٹھ مشتمل۔ چونکہ فارسی عربی عروضس منز چھہِ یم دۅن حصن منز ژٹنہ یوان اوہ کنۍ گژھہِ نہ یمن پیٹھ دۅن ہیجلین ہند مغالتہ گژھُن۔* یتھین لفظن ہندۍ ٲخری مصوتہ چھہِ تقطیع اندر بشمول فارسی عروض تراونہ یوان۔ اگرچہ یمن منز تحریر کہ لحاظہ تریہ ہیجلۍ تصور کرنہ یوان چھہِ، یم چھہِ حقیقتا دوٚنۍ ہیجلین پیٹھ مشتمل۔)

وۅنۍ وچھوکھ بنم شعر تہ یہنز ہیجلۍ حصہ بندی:

کژتاں عاشق گامتۍ متۍ
دنیا سورے دنیا دار

ساسن دادین تن دتھ دراس
اکۍ عشقن کوٚرنس کمزور

تارکھ نب پیوٚو ٹھس ٹھس وسۍ
یاد کریمکھ پوٚت شامن

یمن شعرن منز چھہِ دۅشونی مصرعن منز ستھ (۷) ہیجلۍ ورتاونہ آمتۍ:

1 2 3 4 5 6 7
کژ تاں عا شق گٲ متۍ متۍ
دن یا سو رے دن یا دار
سا سن دا دین تن دِتھ دراس
اکۍ عش قن کوٚر نس کم زور
تا رکھ نب پیوٚو ٹھس ٹھس وسۍ
یاد ک رے مکھ پوٚت شا من

بحر متقاربکۍ مزاحف وزن (مثلا پیٹھم اثلم: فعلن فعلن فعلن فع/فاع) چھہِ ژکہِ ہیجلۍ وزن۔ امہِ وزنک آہنگ ورتوو امین کاملن یسلہ پاٹھۍ۔ یہ آو تسندس لۅتہ وٲے، بیہ تکلف تہ طنزیہ اظہارس سیٹھا براہ۔ کاشرِ زبانۍ ہندس گفتاری یا خۅد کلامی ہندس آہنگس تہِ نکھہ آسنہ کنۍ ورتوو یہ وزن کاملس سیتۍ واریاہو شاعرو۔ مثلا یم غزل:

کھسوُن سریہِ تہ رامن راج
وسوُن سریہِ تہ راوُن دوٚد (نادم)

تارکھ وسۍ پییۍ لژھہِ گیہ لال
دِلہ یتھ گٹہِ منز ژے کینہہ زال (راہی)

اتہِ کیا چھے کلۍ تہرس پیٹھ
بۅن وس کٲر وُٹھی ونۍ واو  (کامل)

واوس کمۍ ؤٹھ از تاں کٲر
بہتر گوٚو دِتھ تھاونۍ دٲر (فراق)

یمن سارنی غزلن ہند وزن چھہ دراصل ہیجلۍ وزن۔ وژنن منز چھہ یۅہے ہیجلۍ وزن ورتاونہ آمت۔ یعنی یتھ اسۍ پنن عروض ونان چھہِ، سہ چھہ دراصل یوٚہے ہیجلۍ وزن یس واریاہن مشرقی کیو مغربی زبانن منز ورتاونہ یوان چھہ۔ ہیجلۍ وزن چھہِ سادہ وزن تکیازِ یمن منز چھہ ژھوٚٹین زیٹھین ہیجلین کنے قیمت۔ ہیجلین تہ ہیجلین منز چھیہ نہ کانہہ فرق کرنہ یوان۔ امہِ خصوصیژ کنۍ چھہِ نہ ہیجلۍ وزنن منز پدۍ آسان۔ یعنی ہیجلۍ چھہِ نہ مزید پدین منز گنڈنہ یوان۔ پدۍ چھہِ تمن عروضن منز یمن منز ژھوٚٹین تہ زیٹھین ہیجلین الگ مۅل مقررچھہ، یمہِ کنۍ آہنگس منز دوٚگن امتیاز قایم گژھان چھہ۔ ہیجلۍ وزنن منز چھہ پدین بجایہ تھکھ اہم، یس آہنگک خاص نمونہ تہ تنوع قایم کران چھہ مثلا وژنکۍ ژھوٚٹۍ مصرعہ۔ یتھ شاعری منز سارنی ہیجلین کنے مۅل مقرر آسہِ تتھ منز چھیہ آہنگچ بنیاد یہند تعداد بنان یعنی تتھ شاعری منز چھیہ مصرعن ہنز تنظیم مقرر ہیجلۍ تعدادہ سیتۍ ترتیب لبان۔  وۅنۍ کرو اسۍ حبہ خاتونہِ ہندس بنمس بٲتس ہیجلۍ وزنہ مطابق تقطیع:

کاوۍ ویہنم ارۍ ننہِ نیہے
از ییہ یار بہ ناوسے
کۅنگہ کوفورہ بییہ عنبرے
سندِ زلہ تن بہ ناوسے
مارۍ مندس ترہنہِ روٚستس
پارۍ لگس بہ ناوسے
سارۍ ترٲوتھ تس پتہ لجس
کیاہ کرہ ویسۍ بناوسے
(کلیات حبہ خاتون، ص 185)

ہیجلۍ وزنن منز چھہِ ہیجلین ہندِ تعدادہ علاوہ بندن یا مصرعن ہنز حصہ بندی تہ قافیہ بیترِ آہنگک نمونہ پیدہ کران یمہ کنۍ ہیجلۍ وزن شاعرن تہ پرن والین دۅشونی ہندِ خاطرہ ورتاوُن تہ پھِرُن آسان سپدان چھہ۔ ہیجلۍ وزنن منز چھہ نہ مصرعن منز ہیجلین ہندِ یکسان تعدادہ علاوہ کانہہ مخصوص التزام آسان۔ البتہ چھہ شعری فارمہِ منز یہند مخصوص التزام تنوع پیدہ کران۔ یہ التزام چھہ واکھن تہ وژنن منز ظاہر۔ مثلا واکھن ہند اکھ التزام مگر غالب التزام چھہ 8 ہیجلۍ، 7 ہیجلۍ، 8 ہیجلۍ، 7 ہیجلۍ۔ امہِ قسمک مصرعن ہند خاص التزام چھہ وژن فارمہِ منز تہِ ظاہر۔ چونکہ ہیجلۍ وزن چھہ نہ مزید پدین منز گنڈنہ یوان، لہذا چھہِ نہ اتھ وزنہ نظامس منز زیٹھۍ مصرعہ ممکن۔ اگر کُنہِ زبانۍ منز زیٹھۍ مصرعہ چھہِ تہِ (مثلا فرانسسی، اطالوی، اسپینی، بیترِ)، تم چھہِ یوان اکس مخصوص جایہ تھکھ ترٲوتھ دۅن حصن، اصطلاحی طور د‎ۅن hemistches منز پھٹراونہ، تہ یہ تقسیم چھہ مثلا گۅڈنکہ حصہ کس ٲخری لفظس پیٹھ تاکید تراونہ سیتۍ، یا قافیہ ورتاونہ سیتۍ نمایاں بناونہ یوان۔ سانۍ وژن فارم تہِ چھیہ نصف نصف مصرعن پیٹھ قافیہ ورتٲوتھ یہ ژھین نمایاں بناوان۔ مثلا وچھو حبہ خاتونہ ہند وژن بییہ اکہ لٹہِ۔ گۅڈنکین گۅڈنکین مصرعن پتہ کنہِ چھہ قافیہ (نٮہے/ عنبرے؛ روٚستس/لجس) یمن زیٹھین مصرعن ژھین تراوان یمہ کنۍ وژنچ فارم شکل رٹان چھیہ۔

 

1 2 3 4 5 6 7
کاوۍ وُیہہ نم أرۍ نِنۍ نے ہے
از یی یار بہ نا و سے
کۅنگ کو فور بیۍ عن ب رے
سندۍ زل تن بہ نا و سے
مارۍ من دس ترہ نہِ روٚس تس
پارۍ ل گس بہ نا و سے
سٲرۍ ترٲ وِتھ تس پت ل جس
کیا کر‎ ویسۍ بہ نا و سے

کاشرین ہیجلۍ وزنن منز چھہ ژھۅٹین ہیجلین ہند ورتاو کم یعنی تمن ہیجلین ہنز یم مصمتہ تہ ژھوٚٹس مصوتس پیٹھ مشتمل چھہِ۔ اتھ چھہِ زہ وجہ۔ اکھ یہ زِ ژھوٚٹۍ مصوتہ چھہِ اکثر لفظہ کس ٲخرس پیٹھ بول چال چہ صوتیاتی تبدیلی تحت حذف سپدان۔ دوٚیم وجہ چھہ وژن گیونچ روایت۔ گیونس منز چھہِ ژھوٚٹۍ مصوتہ ادا کرنۍ زیٹھیو مصوتو کھۅتہ مشکل۔ امہ خاطرہ گژھہِ پروفیشنل تربیت آسنۍ۔ یوٚہے وجہ چھہ زِ وژنس تہ باقی گیون بٲتن منز چھہ ژھوٚٹۍ مصوتہ زیٹھراونہ یوان۔

 

وزنن ہنز پارۍ زان (1)

یہ چھہِ اسۍ مٲنتھ زِ عروضچ بنیاد چھیہ نہ حروف مکتوبی بلکہ حروف ملفوظی ین پیٹھ۔ یمہ ساعتہ اسۍ یہ حقیقت تسلیم کران چھہِ ، اسۍ چھہ یکدم صوتیات کس میدانس منز قدم تراوان۔ صوتیات چھہ زبانۍ ہنزن آوازن ہند اکھ باضابطہ علم۔ سانۍ ادیب چھہِ زبانۍ ہنزہ آوازہ گنزراونس علم صوتیات زانان۔

یہ ونن زِ خلیلس کیا ٲس نہ صوتیاتچ زان چھیہ سراسر خلیل ناشناسی تہ لاعلمی۔ عربی زبانۍ ہند صوتیات چھہ دراصل حرف کس پیچیدہ، کثیر سطح تصورس منز پوشیدہ۔ یہ تصور سمجنہ خاطرہ گژھہِ لسانیات تہ عربی زبانۍ ہند باضابطہ علم آسن۔ خلیل اوس اکھ ماہر لسان تہ ماہر لسانیات۔ اردو تہ کاشرۍ شاعر تہ نقاد چھہِ نہ فاعلاتن فاعلات کہ گردانہ نیبر تس متعلق کہنی زانان تہ نہ زانن یژھان۔

شتکلاسیکل عربی زبانۍ ہندِ خاطرہ اوس نہ ہیجلیک بلکہ ماتراہک (mora)تصور زیادہ کارگر۔ یہ تصور چھہ امہِ کس عروضس منز تہِ بنیادی حیثیت تھاوان۔ یہ ونن زِ ” وزنک سنگ بنیاد چھہ ہیجل تہ خلیل نس عروضس منز چھہ ہیجل نظر انداز کرنہ آمت یس امہ کہ ناہنجار کنک وجہ چھہ” (راہی) چھیہ لاعلمی یمکۍ اسۍ سٲری شکار چھہِ۔۔ شعری آہنگ چھہ زبانۍ ہنزن خصوصیژن سیتۍ تعلق تھاوان، لہذا چھہِ وزن (وزنہ نظام یا عروض) تہِ یمن خصوصیژن مثلا تاکیدس، ہیجلس، ہیجلین ہندس ژھۅچرس زیچھرس، ماتراہن، تہ طرزِ اداہس (tone) اندۍ پکھۍ کھڑا کرنہ آمتۍ۔ یعنی وزنچ چھیہ نہ کانہہ آفاقی بنیاد۔ ییتہ کینژن زبانن منز ہیجل چھہ، کینژن منز چھہ تاکید، کینژن منز دۅشوے، ییتہ کینژن زبانن منز ماترا چھہ، کینژن منز چھہ طرزِ ادا۔ لہذا چھہ یہ تہِ ضروری زِ عروض علاوہ گژھہِ زبانۍ ہنزن خصوصیژن ہنز تہِ زان آسنۍ۔ یمن خصوصیژن ہند علم سپدِ تیلی حاصل ییلہ اسہِ زبانۍ ہنز ہیجلۍ تشکیل، صوتیاتی عمل تہ صوتیاتی تبدیلی ہندین تصوراتن ہندعلم آسہِ۔ امہِ خاطرہ چھیہ زہ ژور کتابہ پرنہِ ضروری۔ از کل چھہ یہ سورے علم انٹرنیٹس پیٹھ دستیاب مگر پرن وول گژھہِ آسن تہ سہ علم صحیح تناظرس منز سمجن وول گژھہِ آسن۔

ینہ والین پوسٹن منز کرو اسۍ کینژن اہم وزنہ نظامن ہنز زا ن صوتیات کین یمنے تصوراتن ہندِ ذریعہ پیش۔ کاشرس منز کُس یا کس کس وزنہ نظام چھہ ورتاونہ آمت تہِ زاننہ خاطرہ تہِ چھیہ یہ زان ضروری۔

وزن چھا شاعری ہندِ خاطرہ ضروری؟

وزن چھا شاعری ہندِ خاطرہ ضروری کنہ نہ؟ وزنہ نش چھہ مراد کانہہ تہِ وزن یس مختلف شعری روایژن منز مروج چھہ یا اوس، چاہے سہ پتہ ہیجلۍ وزن چھہ یا تاکیدی وزن یا سنسکرت تہ عربی شعری روایژن ہند پیچیدہ ماترا وزن۔

مییلہ جدید نقادو شاعری ہندۍ اہم عنصر نٔوس شعری ماحولس تہ تنقیدی تناظرس منز بدِ کڈنۍ ہیتۍ یعنی تم عنصر یمو سیتۍ شعر شعر بنان چھہ، تمو وُچھ زِ وزن اوس نہ امہِ رنگۍ کانہہ خاص کارنامہ انجام دوان۔ لہذا دوٚپ تمو منزہ اکثرو زِ وزن چھہ غیر ضروری۔ مگر واریاہن ادبی حلقن منز آو وزن شعری ہیژ ہندِ تمہِ سوٚتھرِ کین عنصرن منزگنزراونہ یمن منز استعارہ، تشبیہہ، علامت، رمز، کنایہ، بیترِ چھہِ۔حالانکہ وزن چھہ شعری ہیژ ہنزِ تنظیمہِ تہ ترتیبہِ ہندین تمن عنصرن سیتۍ تعلق تھاوان یمن منز مصرعہ بندی، بند یعنی شعری ہیژ اندر اندروزنچ اکایی یا ہیتی اکایی، مصرعہ ژھین، قافیہ چاہے اند قافیہ یا منز قافیہ، ردیف یا ووج، بیترِشامل چھہِ۔اکثر چھہِ اسۍ وزنکۍ پاٹھۍ شاعری ہندِ باپتھ قافیہ ردیف تہِ غیر ضروری مانان یہ مٔشرتھ زِ قافیہ ردیف تہِ چھہِ ہیژ ہندِ تنظیمی سوٚتھرِچہ ضرورژ۔ لہذا یہ ؤنتھ زِ یم چھہِ نہ شاعری ہندِ خاطرہ ضروری چھہِ اسۍ دراصل شاعری ہندِ خاطرہ ہیت غیر ضروری قرار دوان۔مگر اسہِ پزِ یہ فرق ذہنس منز تھاونۍ زِ غیرضروری گوٚو نہ مطلب غیر مناسب یا بے محل یا غیر متعلق۔ سانۍ سٲرے روایتی یا کلاسیکل شاعری چھیہ ہیژ ہنز شاعری۔ ہیژ ہیکو شاعری ہندِ خاطرہ غیر ضروری ؤنتھ مگر غیر متعلق ہیکوس نہ ؤنتھ۔یہ فرق چھیہ سیٹھا اہم ۔ شعری ہیت غیر ضروری قرار دنہ خاطرہ آیہ معقول دلیلہ پیش کرنہ مثلا یہ زِ عصری وجود تہ تجربک اظہار چھہ نہ روایتی ہیژن منز ممکن تہ ییلہ شاعری منز ہیت دوبارہ ورتاونہ آیہ خاص کر پوسٹ ماڈرن شاعرن ہندِ دسۍ یمو روایتی ہیژن ہنز تجدید کٔر تمو تہِ کرِ معقول دلیلہ پیش۔

یہ چھیہ حقیقت زِ جدیدیت آیہ شاعری منز اکھ زبردست انقلابی تبدیلی ہیتھ۔ اتھ تبدیلی پیوٚو بلینک ورس؍فری ورس ناو۔ سانین زبانن منزآزاد نظم۔ یہ چھہ جدید دورک اکھ زبردست دیت۔ یہ تبدیلی ٲس روایتی ہیژن نش ژلنچ اکھ وتھ۔شاعر ٲسۍ یمو روایتی بندشو نش آزاد گژھتھ شعری تجربن ہند اظہار کرُن یژھان۔ تکیازِ یمن ہیژن سیتۍ ٲسۍ شاعری ہندۍباقی عنصر تہِ مقرر گمتۍ مثلا ڈکشن، استعارہ، تشبیہہ، بیترِیمو منزہ نیبر نیرنہ خاطرہ ہیت ترٲوتھ ژھننچ ضرورت پییہِ۔ مگر امہِ آزادی باوجود رود وزن مکمل یا جزوی طور آزاد نظمہِ سیتۍ چالو۔ یوٚت تام نثری نظمہِ اتھ تہِ بالکل دکہ دیت۔ آزاد نظمہِ پکنوو وزن امہِ مۅکھہ پانس سیتۍ تکیازِ یہ رود ہیتی تنظیمہِ ہنزِ غیر موجودگی منز نظمہِ اکہِ ممکن انتشارہ نش بچاوان۔آزاد نظمہِ منز یتھ آہنگس اہمیت میج یُس عام بول چالک آہنگ اوس یا شاعر سند ذاتی آہنگ اوس، سہ اوس بہر حال زبانۍ ہندس پننس آہنگس پیٹھ دٔرتھ۔ امہِ کنۍ تہِ رود وزن پننہِ آزاد شکلہِ منز نظمہِ منز جاری۔ مگر وزنکہِ رسمی یا قاعدہ بند ورتاوہ نش کھتۍ شاعر آزاد نظمہِ منز بوٚٹھ۔روایتی ہیژن منز چھہ وزن باقی عنصرن سیتۍ رٔلتھ نہ صرف لفظن ہندِ تعلقہ بلکہ شعری تجربہ چہ عملہ منزتہِ سۅ کٲم انجام دوان یۅس کٲم مۅختہ مالہِ منزپن دوان چھہ یعنی وزن چھہ اکس ہیژ منز ورتاونہ ینہ واجنہِ زبانۍ تہ تتھ پتہ کنہِ کس تجربس ترتیب تہ تنظیم دِتھ تہ پانہ وانۍ میُل کٔرتھ مضبوط بناوان۔ یۅہے منطق تہِ رود وزنہ کہ تعلقہ آزاد نظمہِ منز جاری۔ یعنی جدید شاعرس اوس اکہِ طرفہ روایتی ہیژو منزہ نیبر نیرنک شوق تہ دوٚیمہِ طرفہ اکہِ نامعلوم انتشارہ کہ امکانک خوف یمہِ کنۍ تمۍ وزن مۅچھہ منز چیرہ رٔٹتھ تھوو۔

نثری نظم ہیچ نہ سانہِ شعری روایژ برونہہ کنہِ زیادہ برونہہ پٔکتھ۔ برسرآوردہ نظم نگار رحمن راہی تہِ چھہ تازہ ترین کتابہِ منز پننہِ نظمیہ شاعری ہندِ تعلقہ ونان:

"وزن چھہ مقداری تہِ ورتاونہ آمت تہ غیر مقدرای تہِ ۔۔۔تہ روایتی عروضہ نش چھہ انحراف تہِ سپدمت، تاہم چھہ نہ کانہہ تہِ نظم خالص نثری۔”

ےامہِ بیانہ تلہ چھہ باسان زِ یہ شاعرچھہ نہ نثری نظمہِ ہند قایل بلکہ چھہ کانہہ نتہ کانہہ وزن پننٮن نظمن منز ورتاوُن ضروری زانان یہ اعلان کٔرتھ تہِ زِ "شعرہ باوژ باپتھ یتھہ پاٹھۍ نہ ردیف تہ قافیہ لازمی ماننہ آمت چھہ تتھے پاٹھۍ چھہ نہ وزن تہِ امہِ چہ مولہ ماہیژ منز شامل گنزرنہ یوان۔” گویا یہ شاعر چھہ وزنس شاعری ہنزِ مولہ ماہیژ منز شامل نہ گنزرتھ تہِ پانس سیتۍ سیتۍ پکناوان۔ حالانکہ آزاد نظمہِ ہندِ خاطرہ چھہ نہ وزن ضروری بلکہ چھٮہ یہ نظم یمو روایتی بندشو نش آزادی حاصل کرنہ کہ غرضے وجودس منز آمژ۔ راہی چھہ نہ یہ وننہ خاطرہ تیار مگر بہ ونہ تمۍ سندِ طرفہ زِ اکثر نظمن منز ماترا تہ ہیجلۍ وزن ورتاونہ باوجود چھہ تسند اکھ کارنامہ یہ زِ تمۍ کٔر کاشرِ نظمہِ شاعر سندس ذاتی آہنگس سیتۍ زان تہ خالص نثری آہنگس پیٹھ تہِ لیچھن نظمہ مثلا ‘اکھ شبییہ’۔ اتھ نظمہِ منز چھہ نہ کانہہ مقداری، غیر مقداری، تاکیدی یا ہیجلۍ وزن متواتر یا جزوی طور تہِ ورتاونہ آمت۔ یہ نظم چھیہ صرف نثری آہنگ ورتاوان۔ وچھو امیک اکھ اقتباس:

زُوس جسمس ٲسس برژھہ بۅچھہ
کھونکھن نوٚمرتھ اوس میژِ آبس کنین کنڈین مشک ہیوان
لوٚٹ اوسس ڈلہ ونس ہوہس مزازہ وچھان

یتھے پاٹھۍ چھیہ باقی نظمہ مثلا ‘میہ نے زیو آسہِ ہے دزمژ’۔ امیک تہِ اکھ اقتباس:

سونچ کرہ ہا تہ ہیگلس دٔزم
تال قدم تلہ ہا تہ مارکسس پھٹِم پدۍ
دپہ ہا مول تہ دوٚپہم غاصب
ژھارہن موج تہ کٔرہم رسوا
رچھہن لولٔر تہ یم نم تہ دند کتہِ تھاوکھ
کٕنہ ہا دود تہ ہینہ والین اچھ لجمژ تالو
نے کس کرِ وۅنۍ گراو
نیستانے ییلہ اندہ وند دوٚد؟

راہی سندِ پیٹھمہِ بیانہ باوجود چھہ یمن نظمن منز نثری آہنگ۔ نادم ہیوٚک نہ ہیتی تجربو تہ تنوع باوجود یہ نثری آہنگ پیدہ کٔرتھ۔ تمۍ سنز اکے نظم ‘باراں کوٹ’ چھیہ اتھ کُن اکھ کوشش ۔ وچھو امیک آغاز:

کمرس منز ژاس
تہ باراں کوٹ کوٚڈم نالہ
اویزان ترووم کوٹہ کِلس پیٹھ
ہنگہ منگہ پھیورس پوٚت
تہ یڈ بٔرتھ نظرا کٔرمس
باسیوم زن چھُس بے
اتھ کوٹہ کِلس پیٹھ اویزان گومت

مگر نظمہِ منز چھیہ برونہہ کُن اتھ نثری آہنگس منزوزنچ روانی ننۍ نیران یتھ متقاربس یا ہیجلۍ وزنس سیتۍ واٹھ دِتھ ہیکو۔  کامل چھہ نظمن منز وزن تہِ ورتاوان تہ نثری آہنگ تہِ۔ سہ چھہ نظمن منزوزنہ باوجود نثری آہنگ خۅد کلامی یاکتھ باتھہِ ہند انداز تہ ڈرامایت ورتٲوتھ تہِ پیدہ کران۔ مثلا وچھو ‘بے وکھ’ نظمہِ ہند آغاز:

زٔر تہ کٔج خاموش راتھ
ٹھس ٹھس ٹھس
کتھ نہ باتھ
ترین برنزین ہند بے صبر اکھ انتظار
ییژ مستی؟
تڑ۔ تڑاخ
کُس سا چھو
سے یمس یوٚدوے ژیتس آسی زمانا اکھ سپد
ناد بوزتھ واد ہیو اندری کریوتھ=

کامل سنزہ لۅکچہ نظمہ چھیہ خاص طور خالص نثری آہنگ ورتاوان۔ وچھو ‘اُنظرُ ترانی’ نظمہِ ہند آغاز:

وُنندرۍ ساسہ نوومت زونہ گاش
ملرہ موٚت تھکتھ ژھینتھ پیومت سوٚدر
زنماتن ہندس؍تتھ شینہ پرنس تہ شہلۍ شہجارۍ
زُوِس تاں کیا سنا وٲتتھ ہیکا سریہِ پروِ برونہہ

یہ نثری آہنگ ورتوو باقی شاعرو تہِ پننہِ نظمہِ منزگاہے وزنہ سان تہ گاہے وزنہ ورٲے ۔ زیادہ مثالہ چھیہ نہ برونہہ کنہِ۔ تاہم وچھوکھ بنم اقتباس یم وزنہ بدلہ خالص نثری آہنگس پیٹھ دٔرتھ چھہِ:

سہ اوس نہ یوسف کینہہ
مگر کیریک قید اوسس ڈیکس لیکھتھ
سہ پیوس ویتراوُن
یوسفن ٲس گراو کرمژ
تمۍ ہیوٚک نہ شہتھ تہِ پننٮن باین ہند کیا ونہِ ہا
(سہ تہِ اوس یوسف۔ مظفر عازم)

الوند بالہ کھنگرو منزۍ
آوسیمژِ بجہِ وتہِ
رنیمژِ زونہِ ہندس زرد گاشس منز
سوٚت بتہِ زٲلتھ سیاہ شکتی مانن ہنز کُنی ہۅہراے
پنن دہ ہیتھ گنین ونن منز شریپان
(ترانژھ۔ شفیع شوق)

کاشرِ شاعری منزچھیہ کافی مثالہ موجود یم یہ کتھ عملی طور باوان چھیہ زِ نظمہِ ہندِ خاطرہ چھہ نہ وزن ضروری، مگر اگر ورتاونہ آو غیر مناسب تہِ چھہ نہ۔وزنہ کہ ضروری یا غیر ضروری آسنک بحث چھہ دراصل نظمہِ سیتۍ تعلق تھاوان مگر افسوس چھہ یہ زِ کشیرِ منز چھہ یہ بحث تتھہ پاٹھۍ پیش کرنہ یوان زن اسۍ یہ ونان چھہِ زِ غزلہ کہِ خاطرہ چھا وزن ضروری کنہ نہ؟ غزلس چھہِ دویہ قسمکۍ لوکھ پتہ۔ اکھ تم ابتدایی شاعر یمن نہ امہِ ورٲے بییہِ کینہہ اتھہِ یوان چھہ تہ بییہ تم نام نہاد نقاد یمو اکہِ نتہ بییہ رنگہ غزلچ مخالفت کٔرتھ تہ امہِ چہ کمزوری گنزرتھ ادبی اصلاح پسندی ہند الم نکھس تلمت چھہ۔حقیقت چھیہ یہ زِ سٲنس زمانس منز یُس تنوع شاعری منز اسہِ برونہہ کنہِ ہیتی تہ غیر ہیتی، وزنی تہ نثری، نوِ تہ پرانہِ ، جدت پسند تہ تواریخی شعور کس صورتس منز چھہ، سہ چھہ بلاشک سٲنس کلہم شعری تجربس مالدار بناوان۔ یمن منز چھہ نہ کانہہ مقابلہ یا ٹکر بلکہ چھہِ یم اکھ اکۍ سند مۅل ہرراوان۔ یہ چھہ ممکن زِ نظمہِ منز یم رنگ تہ یم تجربہ منتقل سپدن تم ما ہٮکن نہ غزلس منز منعکس سپدتھ تہ امیک وُلٹہ تہِ چھہ ممکن مگر اکھ کمتر زٲنتھ، بییچ مبالغہ آرایی چھٮہ اکھ غیر ادبی، غیر تنقیدی صورت۔ حقیقت چھیہ یہ زِ شیٹھ تہ ستتھ کٮن دہلین منز چھہ کامل سند غزل کاشرس منز نظمہِ مقابلہ زیادہ بہتر تہ شدتہ سان ہمعصر وجودک اظہار کٔرتھ پننس وقتس نزدیک یتھ کاشرِ شاعری ہند عصری لہجہ مشخص کران۔ یہ چھہ سہ کارنامہ یُس نادم تہ راہی سنزِ طاقتور نظمہِ لرِ لوٚر تمہِ وقتہ کاملن انجام دیت۔مگر یہ ٲس نہ غزلچ ہیت بلکہ اتھ ہیژ نسبت کامل سند سلوک تہ ورتاو، موادک نویر،ڈکشن، طنز، بیہ تکلف لہجہ، زبانۍ ہند غیر نمایشی ورتاو، عروضی تجربہ تہ تنوع، جدت پسندی ، واتنیار یمۍ یہ کارنامہ تمہِ وقتہ ممکن بنوو۔روایتی ہیژ ورتٲوتھ تہِ کوٚر کاملن پننہِ شاعری منز جدید سوچ، حسیت، تجربہ تہ ردعمل پیش۔ لہذا کیا روایتی ہیت تہ کیا آزاد یا نثری نظم اصل کتھ تہ بنیادی شرط چھہ شاعری یۅس دۅشونی صورژن منز ممکن چھیہ۔وزن چھہ غزلہ چہ تنظیمہِ ہنز اکھ ضرورت، مگر یوٚت تام نظمہِ ہند تعلق چھہ، وزن ورتاوُن نہ ورتاوُن چھہ شاعر سند ذاتی ترجیحی معاملہ۔

وزن تہ آہنگ

"سانۍ کن تہ ذہن ییلہ تم خالص کاشرۍ آسن، چھہِ نہ یمن وزنن ہندس آہنگس پورہ پورہ ساتھ ہٮکان دتھ۔”  (کامل، سون ادب 1976، ص 110)

وزن تہ آہنگ کہ تعلقہ چھہ امین کامل اتھ اقتباسس منز اکس اہم کتھہِ کُن حٮس دوان۔ سہ چھہ یمن منز فرق کٔرتھ آہنگس وزنچ بنیاد مانان۔ شاعری منز چھٮہ اتھۍ آہنگس اہمیت۔ عروضی بحث سمجنہ خاطرہ چھہ ضروری زِ وزن تہ آہنگس درمیان یۅس فرق تہ یس رشتہ چھہ تمن پٮٹھ ییہ غور کرنہ۔

wazanآہنگس چھہِ کن تہ ذہن فوری تہ آسانی سان ژینتھ ہٮکان، مگر امیک تعریف کرُن چھہ مشکل۔ تاہم ہٮکو اسۍ ؤنتھ زِ آہنگ چھہ زبانۍ ہندٮن مخصوص عناصرن خاص کر آوازن ہندِ باقاعدہ تہ یکسان تکرارہ ستۍ پیدہ گژھان یُس شاعری منز اکھ خاص اہمیت تھاوان چھہ۔ آہنگ ہیکہِ نثرس منز تہِ  ٲستھ مگر سہ بدِ کڈُن چھہ مشکل تکیازِ نثرہ چہ آہنگ چہ اکٲییہ یا امکۍ نمونہ آسن لازما زیٹھۍ تہ حدہ کھۅتہ زیادہ متنوع۔ نثرس مقابلہ چھہ شاعری ہند آہنگ ٹاکارہ پاٹھۍ یکسان آسان، آسانی سان ژیننہ یوان تہ اکثر شعوری طور طریقو پیدہ کرنہ یوان۔ مثلا

ارۍ نہ رنگ گوم شراون ہییے
کر ییے درشن دییے

اتھ شعرس منز چھٮہ گۅڈنی ؍ہییے، ییے تہ دییے؍ لفظن ہنز یکسانیت تہ تکرار قابل توجہ۔ امہِ علاوہ چھہ/ر/ تہ /ن/ آوازن ہند تہِ تکرار میلان۔ /شراون/ تہ /درشن/ لفظن ہنز صوتی یکسانیت تہ نشست تہِ چھہِ قابل غور۔ یتھے پاٹھۍ رنگ تہ گوم لفظن منز /گ/ آوازِ تہ درشن تہ دییے لفظن منز /د/ آوازِ ہند تکرار۔ یمو تمام لسانی تہ صوتی عناصرو ستۍ چھہ اتھ شعرس اندر آہنگ نوٚن نیران۔ گویا شعرہ کہ منظم وزنہ الگ یاعلاوہ تہِ ہیکہِ یکسان لفظن تہ آوازن ہندِ تکرارہ ستۍ آہنگ پیدہ گژھتھ۔ منظم وزن بارسس ینہ برونہہ یۅس شاعری قدیم زمانس منز مختلف قومن منز سپدان ٲس، تتھ منز اوس آہنگ زبانۍ ہندیو یتھوے عناصرو ستۍ پیدہ کرنہ یوان۔ تتھ شاعری منز اوس آہنگ پیدہ کرنک اصول ہشن آوازن تہ نحوی ساختن ہندس تکرارس پٮٹھ دٔرتھ۔ یہ گژھہِ یاد تھاون زِ پرانہِ زبانہ آسہ زیادہ تر گردان تہ تصریف واجنہِ زبانہ شاید یمہ کنۍ آہنگ پیدہ کرنک یہ ساختیاتی طریقہ کارگر اوس۔

ییلہ لفظ تہ لفظہ کٮن لۅکٹٮن حصن آہنگ کہ لحاظہ اہمیت ہیژن میلنۍ، آہنگ پیدہ کرنکۍ کم یا زیادہ منظم، پیچیدہ تہ نازک طریقہ آیہ وجودس۔ یم طریقہ ٲسۍ لازما قاعدہ بند تہ یمنے طریقن چھہِ اسۍ عام طور وزن ونان۔ وزن چھہ نہ آہنگک مترادف بلکہ شعری آہنگ ترتیب دنک، دریافت یا پیدہ کرنک اکھ منظم طریقہ۔ وزنن ہند ارتقا سپد شعری ہیژن ہندس ارتقاہس لرِلوٚر۔ یعنی ییژ ییژ شعری ہیت منظم سپز تیوت تیوت سپد شعری آہنگ تہِ منظم۔

قدیم شاعری ہندۍ پاٹھۍ چھٮہ نہ پتمہِ صدی ہنز نثری نظم تہِ آہنگ پیدہ کرنک منظم تہ پیچیدہ طریقہ ورتاوان۔ اتھ منز چھہ زیادہ تر لفظن تہ فقرن ہند تکرار میلان یمہِ ستۍ آہنگ پیدہ چھہ گژھان۔ لہذا چھہ نثری نظمہِ ہند تکرار تہِ زیادہ تر ساختیاتی۔

قدیم شاعری تہ نثری نظمہِ منزباگ تہ لرِ لوٚر چھہ دنیاہ چہ تمام معیاری شاعری منز آہنگ پیدہ کرنک اکھ نتہ بیاکھ، کم یا زیادہ منظم تہ قاعدہ بند طریقہ ورتاونہ آمت۔ یعنی وزن۔

آہنگس تہ وزنس منز چھٮہ نہ اکثر پاٹھۍ فرق کرنہ یوان شاید امہ کنۍ زِ آہنگک بیان کرن چھہ نہ آسان تہ امیک بیان چھہ وزنہ چیو معروضی اکاییو ستی ممکن سپدان۔ وزن چھہ شعرک آہنگ ترتیب دنک یا بیان کرنک طریقہ یُس تصوری طور شاعری ہندِ خاطرہ شاید ضروری چھہ نہ مگر شاعری ہنزن مخصوص ہیتی ترتیبن یعنی اصنافن یا فارمن (غڑل، مثنوي، بیترِ   )  ہندِ ہیتی تنظیمک لازم تہ ملزوم حصہ چھہ۔ یُتھے اسۍ ہیتی تنظیمن یا اصنافن نٮبر نیران چھہِ، وزنچ اہمیت چھٮہ کم گژھان تہ امچ جاے چھہ سہ آہنگ رٹان یتھ وزنہ چہ تنظیمہِ ورٲے غیر واضح تہ مبہم آسنہ کنۍ لازما زبانۍ ہندٮن ساختیاتی تہ صوتی عنصرن ہند سہارہ ہیوٚن پٮوان چھہ۔

نثری نظم کٲژا کامیاب روز، سہ چھہ الگ بحث۔

شاعری ہنز ہیتی اکایی ییژاہ لۅکٹ آسہِ، تیوتاہ چھہ تمیک آہنگ متاثر کران۔ سہ آہنگ قایم کرنہ خاطرہ چھہ نسبتا منظم وزن ورتاونک ضرورت پٮوان۔ یعنی غزلہ کہ شعرک آہنگ چھہ تمہِ کہ تاثرک اکھ اہم عنصر تہ سٮٹھا لۅکٕٹ ہیتی اکایی آسنہ کنۍ چھہِ نہ اتھ منز وزنہ رنگۍ زیادہ یلہ گی تہ تنوع ممکن۔ نظم یۅس امہِ کھۅتہ بٔڈ اکایی چھٮہ ہیکہ کافی یلہ گی تہ تنوع ورتٲوتھ۔ تمیک آہنگ چھہ نہ تیوتا فوری یوتاہ مثلا غزلہ کہ شعرک چھہ۔اس لیے ییژاہ بٔڈ ہیتی اکایی تیوتاہ چھہِ وزنس منز یلہ گی تہ تنوع ممکن۔ نثر  چھٮہ امچ مثال۔

کاشرِ گرامرک اکھ سبق

"میانہِ زندگی ہند مقصد سپد پورہ۔”

"میانہِ زندگیہِ ہند مقصد سپد پورہ۔”

سوال چھہ یہ زِ یمو دۅیو جملو منزہ کُس اکھ چھہ صحیح۔ اگر اسی رسالن تہ کتابن دونژھ دمو، اسہِ لگہِ یہ پتاہ زِ گۅڈنکس جملس منز یتھہ پاٹھۍ لفظ /زندگی/ ورتامنہ آمت چھہ، سہ چھہ زیادہ عام۔ تہ دۅیمہ جملک لفظ /زندگیہِ/ چھہ اتھ سیاقس منز شاید پتمٮن وُہن پٕنژہن ؤرین منز ورتاوُن شروع سپدمت تہ سہ تہِ خاص کر کینژنے ادیبن ہندین لیکھن منز۔سوال چھہ صحیح کیا چھہ؟

وارہ سٔنتھ وچھو اسۍ زِ زندگی لفظک یہ ورتاو چھہ املاہس سیتۍ تعلق تھاوان تہ گرامرس سیتۍ تہِ۔ گۅڈہ دمو اسۍ امہ کس گرامرس ووٚن۔ گرامر کٮن اصطلاحاتن منز کیا ونو اسۍ یمن جملن منز زندگی لفظہ کس استعمالس؟ کاشرس گرامرس منز چھہ اسمن (ناوتٮن) سیتۍ حالت اضافی (posessive) یتھہ پاٹھۍ ظاہر کرنہ یوان:

مذکر اسم/مذکر اسم:
چانہِ خیالک (مذکر) گاش (مذکر) —  (خیال+اُ+ک)

مذکر اسم/مونث اسم:
چانہِ خیالچ (مذکر) روشنی (مونث) —  (خیال+إ+چ)

مونث اسم/مذکر اسم:
میانہِ نظرِ (مونث) ہند گاش (مذکر) — ( نظر+اِ+ہند)

مونث اسم/مونث اسم:
میانہِ نظرِ (مونث) ہنز روشنی (مونث) — ( نظر+اِ+ہنز)

یمن جملن منز چھہِ /خیالک/، /خیالچ/، /نظرِ ہند/ تہ /نظرِ ہنز/ لفظ حالت اضافی علاوہ حالت فاعلی (oblique case) تہِ ظاہر کران۔ مونث اسمن پتہ کنہِ چھہ اتھ سیاقس منز /اِ/ جوڑنہ یوان۔ مثلا:
نظر>نظرِ ہند/ہنز؛ ناو>ناوِ ہند/ہنز؛  رگ>رگہِ ہند/ہنز؛  شکل>شکلہِ ہند/ہنز  مگر اسۍ کیازِ چھہِ نہ عام پاٹھۍ کینژن مخصوص طرزہ کٮن اسمن سیتۍ یہ /اِ/ جوڑان؟ تہ رحمن راہی، رتن لال شانت تہ شفیع شوق کیازِ یمن مخصوص لفظن تہِ پتہ کنہِ تہِ یہ /اِ/ جوڑان؟ یعنی تم کیازِ چھہِ لیکھان:

مستی ہند بدلہ مستیہ ہند
ہنرمندی ہند بدلہ ہنرمندیہ ہند
شاعری ہند بدلہ شاعرییہ ہند

خۅد اعتمادی ہند بدلہ خۅد اعتمادیہ ہند؟  یم سٲری چھہ تم اسم یم زیٹھس /ای/ مصوتس  (vowel)پیٹھ اند واتان چھہِ۔ یہ مصوتہ چھہ زیوٹھ تہ /اِ/ ژھۅٹہِ مصوتک جورہ۔ دۅشوے چھہِ ٲسہ کس برونہمس حصس منز اکی طریقہ بناونہ یوان، صرف یمہ فرقہِ سان زِ اکھ چھہ ژھوٚٹ تہ بیاکھ زیوٹھ۔

gorillasکاشرس منز چھہ یم لفظ فارسی (اردو) پیٹھہ آمتۍ۔ اسہ یُس قاعدہ حالت اضافی تہ حالت فاعلی ظاہر کرنہ خاطرہ اوس، اسہِ لگوو سہ یمن لفظن پیٹھ تہِ۔ مگر مسلہ اوس یہ زِ یمن لفظن پتہ کنہِ ٲس تمی مصوتچ زیٹھ شکل یُس اسۍ یمہ حالژ ظاہر کرنہ خاطرہ ورتاوان چھہِ۔ یعنی /زندگی/ لفظچ ٲخری آواز /ای/ چھیہ  /اِ/ مصوتچی زیٹھ شکل۔حقیقت چھیہ یہ زِ زندگیہ:  /زندگ (ای + اِ)/ لفظک پھور چھہ مشکل تکیاز‏ اتھ پتہ کنہِ یمہ آوازہ چھیہ تم چھیہ ٲسہ چہ اکی جایہ، اکی طریقہ کڈنہ یوان۔ اکھ آواز  کٔڈتھ، پتہ بیاکھ آواز تتھۍ جایہ، تمی طریقہ کڈنہ خاطرہ چھیہ ٲسچ حالت تمہ حالژ نش ڈٲلتھ دبارہ واپس اننچ ضرورت پیوان، لہذا چھیہ یہ پھورس مشکل بناوان۔ اصول چھہ یہ زِ یوٚت تام زبانۍ ہنزن آوازن ہند تعلق چھہ اکی یا ہشی آوازِ ہندِ تکرارہ بہ نسبت چھیہ اکہ آوازِ پتہ بیاکھ مختلف آواز کڈنۍ آسان۔

ییلہِ یہ سچویشن آسہِ، زبانۍ ہنزِ صوتیاتی عملہِ منز چھیہ کمی بیشی ہنزہ زہ صورژ ممکن سپدان۔ اکس صورژ منز چھیہ یم ہشیۍ آوازہ (ای تہ اِ) اکھ اکس نش ژھٮن دتھ الگ کڈنہ یوان، تہ دوٚیمہِ صورژ منز چھیہ یمو منزہ اکھ (زیادہ تر دوٚیم) آواز یکسر تراونہ (ختم) کرنہ یوان۔

اسۍ تلون گۅڈنچ صورت۔عام طور چھیہ اکھ بیاکھ آواز یۅس شدید طور مختلف آسہِ نہ، یمن دۅن آوازن منزس تھاونہ یوان۔ مثلا (زندگ+ای+اِ) ہنزن /ای/ تہ /اِ/ آوازن درمیان چھیہ اکھ نزدیکی آواز نیم مصوتہ /ی/ تھاونہ یوان۔ /ی/ نیم مصوتہ(semi-vowel)  گژھہِ نہ /ای/ مصوتس سیتۍ گڈ مڈ کرنہ یُن۔ /ای/ چھہ مصوتہ تہ /ی/ نیم مصوتہ یُس مصمتچ (consonant)کٲم دوان چھہ۔ بہرحال، یہ نیم مصوتہ یمن دۅن آوازن منزس تھاونہ سیتۍ چھیہ زندگی لفظچ اضافی تہ فاعلی حالت یہ بنان:

(زندگ+ای+ی+اِ>زندگی+یہِ)۔ اتھ صوتیاتی عملہِ منز چھہ /ای/ مصوتک زیچھر راوان تہ یہ چھہ /ای/ بدلہ /اِ/ مصوتس منز تبدیل گژھان تہ لفظچ ٲخری صوتیاتی شکل چھیہ (زندگ+ اِ+ی+اِ) بنان یعنی زندگِیہِ۔ لہذا چھہ نہ زندگیہ‏ لفظچ صحیح ژھٮن بندی (زندگی+اِ) بلکہ (زندگ+اِ+یہ)۔ یہ چھیہ سۅے شکل یتھ رحمن راہی، رتن لال شانت، شفیع شوق، بیترِ ورتاوان چھہِ۔

دوٚیم صورت چھیہ یہ زِ (زندگی+اِ) لفظہ کیو دۅیو متصل (ای تہ اِ) مصوتو منزہ چھہ ٲخری مصوتہ ترٲوتھ مسلہ ختم کرنہ یوان،تہ زندگی لفظچ اضافی تہ فاعلی حالت چھیہ کُنہِ کمی بیشی روٚس خۅد زندگی بنان۔ یہ چھیہ سۅ صورت یۅس عام طور املایی ورتاوس منز چھیہ، بلکہ عام بول چالس منز تہِ ورتاونہ یوان چھیہ۔

گرامر تہ صوتیاتی نقطہ نظرِ کنۍ چھیہ دۅشوے شکلہ ممکن، مگر وچھن چھہ یہ زِ ورتاوس   (usage) منز کیا چھہ؟ زبان چھیہ نہ متروکاتن ہنز تجدید۔ اگر کانہہ صوتی فارم مشراونہ یوان چھیہ تتھ چھہ کانہہ نتہ کانہہ وجہ آسان۔ /زندگیہِ ہند/ بدل /زندگی ہند/ ورتاو عام گژھنس تہِ چھہِ کینہہ وجہ یم یتھہ پاٹھۍ چھہِ۔

اکھ وجہ چھہ کاشرِ زبانۍ ہند سہ رجحان یمیک ذکر بہ بار بار کاشرِ عروض کہ تعلقہ کران چھس۔ کاشرس منز چھہ لفظن پتہ کنیک ژھوٚٹ مصوتہ تیوت ہلکہ زِ یہ چھہ یا تہ تشدیدِ نتہ تالریژ منز مۅژان۔ یعنی زندگیہِ (زندگی +اِ) لفظچ (اِ) آواز چھیہ تیژ سۅتان زِ یہ چھیہ تقریبا ختم گژھان۔ یہ آواز چھہِ اسۍ صرف پننس ذہنس منز تصوراتی طور بوزان۔ امیک چھہ صرف تصور۔ یہ چھہ اکھ وجہ زِ /زندگیہِ ہند/ بدلہ کیازِ میول /زندگی ہند/ ورتاوس قبول عام۔ بیاکھ وجہ چھہ کاشرِ زبانۍ ہندس ہیجلۍ ساختس سیتۍ تعلق تھاوان۔ کاشرِ زبانۍ ہندٮن لفظن ہنز غالب ہیجلۍ ساخت چھیہ اکھ ہیجل، زہ ہیجلۍ تہ تریہ ہیجلۍ۔ زندگی لفظچ ہیجلۍ تعداد چھیہ تریہ /زن۔د۔گی/ ییلہ زن زندگیہِ لفظچ ہیجلۍ تعداد چھیہ ژور /زن۔د۔گِ۔یہ/۔ لفظن منز ژور ہیجلۍ آسنۍ چھیہ نہ کاشرِ زبانۍ ہنز بنیادی خصوصیت۔ لہذا اگر باقی زبانو پیٹھہ لفظ أنتھ تمن صرفی عملہِ کنۍ ہیجلۍ تعداد ہرِ کاشر زبان چھیہ اگر ممکن آسہِ تم کم کرنہ چہ وتہ کڈان۔ چونکہ گرامر تہ صوتیاتی نقطہ نظرِ کنۍ چھیہ (زندگی ہند تہ زندگیہ ہند) دۅشوے شکلہ ممکن، سانہِ زبانۍ ہنزِ ہیجلۍ تعدادہ چہ ترجیح کنۍ سپز گۅڈنچ صورت عام۔ یعنی /زندگی ہند/ ترکیب چھیہ اسہِ زیادہ لسانی آسایش فراہم کران۔

کاشرس منز چھہِ ژور ہیجلۍ والۍ سیٹھا کم لفظ۔ یم چھہِ تم چھہِ دوٚیمیو زبانو پیٹھہ آمتۍ۔

مثلا    صوتیاتی /صو۔تِ۔یا۔تی/ یا خصوصیت /خ۔صو۔صِ۔ یت/

اسٚۍ چھہِ اکثر یتھٮن لفظن ترٮن ہیجلٮن منز موٚژراونچ کوشش کران۔ /صو۔تِ۔یا۔تی/ چھہ /صوت۔یا۔تی/ بنان تہ یتھے پاٹھۍ چھہ /خ۔صو۔صِ۔یت/ تہِ ترٮن ہیجلٮن منز موٚژان /خ۔صوص۔یت/۔

تہِ کٔرتھ چھہِ اسہِ یتھۍ ہوۍ لفظ ژۅن ہیجلٮن منز قبول کرۍ متۍتکیازِ یمن ہندس تلفظس منز چھہ نہ (ہشیۍ آوازہ متصل آسنہ کنۍ) پھورک سہ مخصوص صورت حال پیش یوان یُس مثلا زندگیہِ، شٹھگیہِ، فراوانیہِ لفظن منز یوان چھہ۔

ٲخرس پیٹھ کرہ بہ زندگی/زندگیہ؛ شاعری/شاعریہ ہوٮن لفظن ہندِ ورتاوک اکھ مختصر مطالعہ پیش۔ یہ مطالعہ چھہ انہار 2004 غزلک فن شمارس تام محدود۔ اتھ شمارس منز چھہِ 12 ہن ادیبن ہندۍ مضمون شامل تہ اہم کتھ چھیہ یہ زِ امچ کتابت چھیہ اکی کاتبن معراج ترکوی ین کرمژ۔ لہذا یمن لفظن ہنزن املایی شکلن ہنز تفاوت چھہ ہاوان ز یہ فرق چھیہ مقالہ نگارن ہنز۔

12 ہو ادیبو منزہ چھہِ صرف 2 ادیب پننٮن مقالن منز /شاعری ہند/ بدلہ /شاعرییہ ہند/ ہشہِ شکلہ ورتاوان۔ یمن ہندۍ ناو چھہِ رحمن راہی تہ شفیع شوق۔یمن دۅن ادیبن ہندٮن تحریرن منز یہ ہشر آسن چھہ نہ کانہہ تعجب تکیازِ یم چھہِ کاشرس ڈپارٹمنٹس منز یکجا رودۍ متۍ تہ یمو چھہ اکھ اکس پیٹھ سیٹھا اثر تروومت۔ تعجب چھہ زِ شفیع شوق سند برادر ناجی منور چھہ نہ یمن لفظن ہنزِ املایی تہ صرفی شکلہِ متعلق پننس بٲے سنز پیروی کران۔ سہ تہِ چھہ /زندگی ہند/ لیکھان۔ سوال چھہ یہ زِ یمن لفظن ہنزہ /زندگیہ ہند/ ہشہ شکلہ لیکھنہِ کمۍ چھیہ شروع کرِ مژہ؟ راہی ین کنہ شوقن؟ اتھ سوالس ہیکن تمے جواب دتھ، مگر انہار کہ امہ شمارہ تلہ چھیہ اکھ کتھ ننۍ نیران زِ ییتہ راہی پننٮن دۅن مقالن منز یکسان طور تسلسل سان /خود مستیہِ ہند/ ، /ہۅنرمندۍیہ ہند/ ہشہ شکلہ ورتاون چھہ، شوق چھہ پننٮن دۅشونی شامل مضمونن منز اتی یم لفظ اکہ طریقہ لیکھان تہ اتی بییہ طریقہ۔ تسندٮن لیکھن منز چھہ نہ یمن لفظن ہندس املاہس متعلق کانہہ ہشر۔ یمہ کنۍ شک چھہ گژھان زِ یم لفظ ما چھہِ راہی ین نے امہ طریقہ لیکھنۍ شروع کرۍ متۍ۔ مگر یپارۍ چھہ رتن لال شانت تہِ پننٮن لیکھن منز راہی سندۍ پاٹھۍ /زندگیہ ہند/، /خۅد مستیہِ/ ہشہِ شکلہ تسلسل سان لیکھان۔ بہرحال، یمن لفظن ہند یہ املا یمۍ تہِ شروع کوٚر، یہ چھہ محدود تہ میانہ یمہِ تجزیہ مطابق چھیہ /زندگی ہند/ صرفی شکل سانہِ خاطرہ زیادہ صوتی تہ املایی آسایش فراہم کران۔

اتھ املایی شکلہِ پتہ کنہِ چھہ گرامرک یہ اصول زِ تمن لفظن منز چھیہ نہ حالت اضافی تہ حالت فاعلی خاطرہ کانہہ تبدیلی یوان یم زیٹھس /ای/ مصوتس پیٹھ اند واتان چھہِ۔ انشا اللہ دبارہ کرہ بہ کاشرِ زبانۍ ہندس تتھ رجحانس پیٹھ کتھ یُس امہ زبانۍ ہند صوتیات تہ گرامر آسان تہ سادہ بناوان چھہ۔ یہ چھہ سانٮن اچھن برونہہ کنہِ سپدان۔