مشروع نصیب آبادی سنزہ نظمہ

mashru

میہ چھیہ خوشی بہ چھس مشروع نصیب آبادی سنزہ تریہ نظمہ بلاگ کین پرن والین بطور اکھ تحفہ پیش کران۔ مشروع چھہ تصوف کنۍ زاننہ یوان تہ اکثر پابند شاعری کران۔ نظمہِ کن توجہ چھیہ اکھ خۅشگوار تبدیلی۔ یمن نظمن ہندِ تعلقہ چھیہ کینہہ کتھہ ضروری یم میانہِ خاطرہ، شاعر سندِ خاطرہ تہ پرن والین ہندِ خاطرہ شاید وتھ گاشراون۔

وننہ چھہ یوان زِ شاعری چھیہ خوبصورت زبانۍ ہند ورتاو۔ یہ ہن چھہ پو٘ز۔ امہ خوبصورتی ہند گۅڈنیک قدم یا ونیوس شرط چھہ یہ زِ زبانۍ منز گژھہِ صفایی آسنۍ۔ مثلا اگر کنہِ کمرس اندر خوبصورتی ہند کوتاہ تہِ سامانہ آسہِ مگر صفایی آسیس نہ، سۅ خوبصورتی چھیہ راوان۔ زبانۍ ہنز صفایی چھیہ خیالس تہ زبانۍ ہندِ مطابقتک ناو تہ امہ مطابقت سیتۍ یُس زبانۍ منز ارتکاز یوان چھہ، تمیک ناو۔ مشروع سنزن نظمن منز چھیہ یہ صفایی درینٹھۍ یوان۔

مگر صفایی یوت کرِ نہ کینہہ۔ زبانۍ ہند خوبصورت ورتاو تہِ گژھہِ آسن۔ سہ گو٘و یہ اگر کمرس منز سیٹھا صفایی آسہِ مگر خوبصورتی ہند آسیس نہ کانہہ سامان منز، ‎سۅ صفایی ہیکہِ نہ دلس تہ دماغس آورٲوتھ۔ خوبصورتی ہند سامان چھہِ پیکر ۔ پیکرن ہندۍ چھہِ قسم۔ زیادہ عام پیکر چھہ تم یم اچھن یعنی وچھنس سیتۍ تعلق تھاوان چھہِ۔ جدید دورس منز آو اتھ پیکرس پیٹھ زیادہ زور دنہ۔ وجہ یہ زِ جدید تصور مطابق چھہ شاعر وننہ بجایہ ہاوان۔ تم پیکر یمن آوازِ سیتۍ، یا مزہ یا مشکس یا لمس کین حیسن سیتۍ تعلق آسہِ، تم ورتاونۍ چھہ نہ آسان۔ پیکرن ہند اکھ قسم چھہ ذہنی یا تصوری پیکر۔ مشروع سنزن نظمن منز چھہِ یم پیکر تہِ درینٹھۍ یوان۔ یوت یوت یم پیکر نوِرہ سان ورتاونہ ین، تیوت تیوت ہرِ یمن ہند مۅل۔

صفایی تہ خوبصورتی پتہ چھہ لازما انسان سند "ذہن” فکرِ ہند عنصر ژھاران یعنی کنہِ تہِ خوبصورت منظرس منز سرینیر ونہِ کڈنچ کوشش کران۔ اتھۍ فکرِ تہ سرینیرس چھہِ اسۍ معنی یکۍ تہہ یعنی سطحہ ونان۔ یہ فکر چھیہ تتھیو ولو سیتۍ پیدہ گژھان یمن منز کنایہ (یعنی حوالہ یا اشارہ یا رمز) تہ استعارہ تہ علامت تہ یتھی باقی چیز یوان چھہِ۔ یمو ولو سیتۍ چھہ شعر وضاحت کہ عیبہ نش بچان۔ زبانۍ ہندس یتھس ورتاون کن تہِ چھہ مشروع سند توجہ ہیو٘تمت گژھن۔

یمن چیزن ہند آسن چھہ سیٹھا مگر اکھ کامیاب تہ روزن وول شاعر چھہ پننس اکس شعرس یا نظمہِ منز (یتھے پاٹھۍ افسانس منز) یا پننہِ کلہم شاعری منز اکھ تخیلاتی دنیا آباد کران۔ پرن وول تہِ چھہ پران پران اتھ دنیاہس منز قدم تراوان تہ امیک سیر کٔرتھ یوان۔ پرن والۍ سند یہ تجربہ چھہ ادبک حاصل۔ شاعرس چھیہ او٘ت تام تہِ واتنچ کوشش کرنۍ۔

یمو کتھ الگ، مشروع چھہ دینی یا تصوف کین موضوعن سیتۍ دلچسپی تھاوان۔ مگر اگر نہ یتھین موضوعن باریک فکری پہلو نیرن تہ اگر یم معلوماتن تہ ویدین اظہارن تامے محدود روزن، تتھ ہیکو نہ شاعری ؤنتھ۔ میہ چھیہ خوشی تصوف چہ دلچسپی کنۍ چھہ مشروع یمن فکری پہلون کن اچھ تلنچ کوشش کران۔ خالص تصوف چھہ نہ سانہِ زمانک غذا۔ کاشر صوفی شاعری چھیہ سۅے اسہِ ونہِ متاثر کران یتھ منز پیٹھمین ژۅن کتھن ہند عمل دخل چھہ۔

ذاتی طور چھس بہ سمجان زِ شاعر یا کانہہ تہِ ادیب چھہ پننہِ فن کہ ذریعہ انسانی وجودس، انسانی رشتن تہ کایناتس منز تنوع تہ تتھ تنوعس منز وحدت ژھاران، لہذا ہیکہِ نہ اکھ ادیب اعتقادی، علاقایی تنگ نظری منز بند گژھتھ۔ اور کُن چھہ خیال تھاوُن ضروری۔

نظم اکھ

بصد تعشوق
آں خلاق
سیاہ سٔدرس چھہ لایاں تھاہ
اناں کھالِتھ مُخیُّل شُد
دُر مکنون
سریرِ غیبہ پیواں پھی٘رۍ  پھ٘یرۍ
سرِ قرطاسِ آفاقس
کزلۍ جامن اندر ظاہر گژھان
کم کم سرخ انہار
نِواں مہۍ مہۍ متین وچھتو
یہ کمہِ ہاوسہ تہ کمہِ امارہ
یہ غیبک غیب گژھاں اظہار

 

نطم زہ

نیندر رٲو
تسند تعشوق چھا
ہاوس پنن وبالۍ  کران؟
کنِہ خوف؟  وسوسہ؟
یہ زندگی، معنہ کیاہ چھس ؟
تہ موت بیاکھ عالم؟
یتیک ویو٘د ماحول
تتیک بیہ پے  بے
وہۍ،  اتھۍ دۅلابس منز
شیہج، مژ تہ مژھج
نیندر رٲو

 

نظم تریہ

زِ قدم  آو آدم
سیتۍ ہیتھ غم
ژھنتھ نالۍ زنمہ ہانکل
قرنہ وادو پیٹھہ
سجاوان جہان کاف و نون
بصورت شوق بہ باطن غم
دوان تھکہ رو٘س دوان ماتم
لبان زاین مران کر کر
یو٘ہے شر ہیتھ تا محشر

نیب کہ ٲخری شمارکۍ ژور خط

اکتوبر 1971 neab 17منز دراو نیبک ٲخری شمارہ۔ امکۍ سرورق ٲسۍ رنگدار آسان، مگر ٲخری اوس طوطہ رنگس پیٹھ کرہن لیباڑہ۔ نیب ناو تہِ کرہن تہ ادبچ مہرینۍ تہِ کرہنس لیباڑس تل۔ امہِ برونہمس شمارس منز اوس وننہ آمت زِ "وتہ چھیہ زے”  یا تہ رسالہ بند کرُن نتہ امیک حو٘جم کم کرُن۔ یہ شمارہ اوس ٲخری شمارہ۔ امیک اعلان آو نہ پرچس منز کرنہ مگر از ییلہ بہ امہِ کس سرورقس سنیوس یہ اعلان چھہ ٹاکارہ پاٹھۍ اتھ پیٹھ کرہنہِ رنگہ سیتۍ کرنہ آمت۔
امہ سرورق سیتۍ رسالک اند کرُن چھہ واریاہ کینہہ نہ وننے تہِ ونان۔

میہ کو٘ڈ 2005 منز یہ رسالہ بییہ مگر امہ باوجود زِ ناو چھہ سے، یہ اوس نہ سے رسالہ یُس 1971 منز بند گو٘و۔ میہ چھیہ نہ پتاہ نیب بند گژھنکۍ کم مخصوص حالات چھہِ ٲسۍ متۍ، کینہہ کینہہ چھم اندازہ گژھان تکیازِ میہ تہِ پیو٘و "پنن نیب” 2013 منز بند کرُن۔

بنم ژور خط چھہِ اتھ پس منظرس منز کاشرِ زبانۍ تہ ادبک درد ناک صورت حال پیش کران۔ نیب چھہ وۅنۍ آنلاین موجود، تمام ژۅیو نش دور، بالاتر۔ یہ آنلاین نیب چھہ تھری ان ون ۔۔ کامل صٲبن نیب، منیب الرحمنن نیب تہ یمن دۅن ہند کُنے ۔۔ آنلاین نیب۔

نیب،  اکتوبر 1971

انہِ ماجہ کُنے گو٘بر

نیب رسالہ یمن حالاتن ہند شکار سپد، بہ چھس نہ تمو نشہِ بے خبر۔ اوہ کنۍ کو٘ر نہ میہ تعجب۔ اماپو٘ز تعجباتچ کتھ چھیہ تہند یرادہ زِ سہ سورے کینہہ سپدتھ تہِ چھو تہۍ کاشرِ زبانۍ ہنز یہ کنی آواز زندہ تھاونس پیٹھ کمر بستہ۔ حو٘جم کینژس کالس کم گژھن چھہ نہ غم، مگر بند گژھہِ نہ کرُن۔ سہ سپدِ بو٘ڈ ظلم زبانۍ پیٹھ۔ ہرگاہ اخبار تہ رسالہ کاشرس منز بییہ تہِ آسہ ہن تیلہ ونہو نہ شاید یہ، مگر انہِ ماجہ کنُے گو٘بر دفن کرُن یژھہِ نہ کانہہ تہِ زبان دوس انسان۔۔۔۔۔ محی الدین گوہر

دال تہ سیخہ تُجہ

تہۍ کٔرو رسالہ بند۔ میہ نہ گرین۔ میۍ یوت کیازِ، کٲنسہ تہِ نہ گرین۔ اسہِ گژھہِ ہاکھا بتا پوشن۔ زبانۍ تہ کلچرس بلایہ۔ گۅڈہ کاشر زبان کر چھیہ سیخس کھژمژ۔ یہ گیہ دال۔ لل دیدو، مقبول شاہ کرالہ واریو، رسول میرو، مہجورو تہ کاملو سیتۍ چھا یہ دال سیخس کھسان۔ اسہِ چھیہ پتھ کالہِ پیٹھہ سیخہ تجہ کھیمژہ۔ سنسکرت سیخہ تجہ، فارسی سیخہ تجہ، وۅنۍ اردو تہ انگریزی سیخہ تجہ تہ خداین ہے یوژھ جلدے کھیمو ہندی سیخہ تجہ تہِ۔ وۅنۍ گیہ خۅد غرضی زِ میون بکواسا اوس اتی کنہِ وزِ چھپان، تمہِ نشہِ کنزہ ہرگاہ یہ بند گژھہِ۔ یہ پھیریم ضرور نتہ زن چھیہ اسہِ کاشریو کٔنزتھ کھیمژ تہ انشااللہ ہمیشہ کھیمو کنزۍ تھے۔۔۔۔ بکواس کاشمیری

تیژ ژیپھ ہیمو اسۍ

"وتہ چھیہ زے”  پٔرتھ گوس بہ ہے بنگہ روزتھ۔ بہ نہ چھس کانہہ ادیب تہ نہ کانہہ شاعر۔ مگر پننہ زبانۍ ہند چھم وسہِ۔ تکیازِ میون خیال چھہ یمس نہ پننہِ زبانۍ ہنز درد  آسہِ، سہ چھہ نہ بنیادی طور انسان تہِ۔ تۅہہ یمن دوست نما دشمن انسانن کن اشارہ چھوہ کو٘رمت تم حض گژھن ننگہ کرنۍ۔ پردہ پوشی چھیہ میانہِ خیالہ بو٘ڈ گناہ۔ پتھ رود رسالہ، سہ گژھہِ نہ بند کرُن۔ بلکہ جاری تھون۔ ادہ گژھنس صفحہ کم، تمیک گژھہِ نہ پرواے برُن۔ تیژ ژیپھ ہیمو اسۍ۔۔۔۔ سعید احمد ڈار

بیقلازی چھیہ نہ جان

میہ ونیاو تۅہہ پتمس اکتوبرس منزے زِ رسالہ کٔرو تامتھ بند تکیازِ تۅہہ ٲسۍ حالاتھے تتھۍ زِ رسالہ اوس خسارس منز۔ مگر ییلہ میہ وچھ تہۍ چھو خسارہ تلنس پیٹھ تہِ کمر بستہ، میہ کٔر ژھۅپہ۔ از ونہ بہ دوبارہ زِ ہرگاہ صفحہ کم کرنہ سیتۍ رسالہ زندہ  ہیکہِ روزِتھ تیلہ گو٘و کڈنے جان، نتہ ہرگاہ تمہ سیتۍ تہِ خسارے روزِ تیلہ چھہ گاٹہ جار یہ وانے وٹن۔ ازکس زمانس منز زبانۍ ہند ژکھ آسن چھیہ بٔڈ کتھ مگر پان خسارس منز تراوُن چھیہ بیقلازی۔۔۔۔ علی محمد لون

 

ٲخرس پیٹھ اتھ شمارس منز کامل سنزِ نظمہِ "افکار” منزہ یہ شعر:
نہ پوشہ مرگہِ وچھم بُتھ ژھندم سیٹھا شنہ ون
نہ گوم تاپہ شہر نظرِ ڈالۍ ڈالۍ او٘بر

کاشر ادب – اکھ بہترین رسالہ (قسط 4)

کاشر ادب رسالکۍ اداریہ چھہِ نہ کنہِ خالص ادبی موضوعس پیٹھ ۔ یہ حال چھہ تمام کاشرین ادبی رسالن ہند۔ امیک وجہ چھہ یہ زِ سون ادب چھہ ونہِ زبانۍ ہندین معاملن تامے محدود۔ ادیبن رود ترقی پسند دورہ پیٹھے کاشرِ خواندگی ہنزِ تنگی ہند احساس، حالانکہ ادیبن ہند اکھ لۅکٹ کاروان رود پکان مگر ییلہ ییلہ کانہہ رسالہ دراو امہ احساسک باس تیزیو۔

کاشرِ ادبہ کہ گۅڈنکہ پرچک اداریہ چھہ یتھہ پاٹھۍ شروع گژھان: ” کاشرۍ پاٹھۍ لیکھن والین ادیبن تہ کاشرس سیتۍ دلچسپی تھاون والین دوستن ووت واریاہ کال محسوس کران زِ کاشرۍ پاٹھۍ کانہہ ادبی رسالہ نہ آسن چھہ سیٹھا افسوس ناک کتھ مگر رسالہ کڈن چھہ نہ سہل۔ امہ خاطرہ چھیہ واریاہ قربانی ہنز ضرورت۔ گۅڈنی ہارہ تکیازِ واریاہس کالس چھہ یہ قریب قریب گاٹس پیٹھ چلاون۔ سہ گاٹہ کُس دیہ۔ دویم وقت۔ رسالہ چھپاون سہ خریدارن سوزن۔ امیک حساب کتاب تھاون، تیژ فالتو فرصت کس چھیہ۔ یہ کٲم ہیکہِ سہ کٔرتھ یس فاضل ہارہ تہ فالتو وقت آسہِ۔ یُتھ انسان چھہ نہ اسہِ اندر کانہہ۔ مگر دپان خدا چھہ سبب ساز۔ چنانچہ اسہِ گو٘نڈ ادیبن تہ ادیب نوازن ہند تمنا بامل اننہ خاطرہ کمر تہ کاشر ادب تھوو تۅہہ پیش۔ یہ چھہ نہ کٲنسہِ ہند ذاتی رسالہ یا ملکیت اگرچہ امیک خرچہ یُس واریاہس کالس گاٹے روزِ کو٘ر اکی شخژن برداشت۔ محض کاشرِ زبانۍ ہندِ فروجہ تہ ترقی ہندِ خاطرہ۔ یہ شخژ چھہ غلام رسول سنتوش۔”

یہ چھیہ حقیقت زِ رسالک خرچہ تل سنتوشن مگر میہ چھہ پورہ یقین زِ تس آسہ نہ فالتو ہارہ۔ تقریبا تمام رسالن ہندۍ کڈن والۍ چھہِ "فالتو ہارہ” لٲگتھے رسالہ کڈان رودۍ متۍ۔

دویمہ شمارک اداریہ اوس "کاشر مرکز” انجمنہِ ہندس دۅن دۅہن ہندس کانفرنسس متعلق۔ اداریہس منز چھہ وننہ آمت زِ ” کانفرنسس منز آو اکھ بنیادی قرار دار منظور کرنہ زِ کاشر زبان گژھہِ سکولن اندر لازمی مضمون تہ تعلیمی ذریعہ بناونہ ینۍ۔ باقی سٲری مطالبہ ٲسۍ اتھ بنیادی مطالبس سیتۍ تعلق تھاوان مثلا یونیورسٹی منز کاشرس اندر ڈپلوما کورس رایج کرن۔ تمام سکول ماشٹرن ہند کاشر امتحان پاس کرن۔ کاشرِ زبانۍ ہنزِ ترقی خاطرہ کلچرل اکادمی ہندس طرزس پیٹھ حکومت کہ طرفہ اکھ خۅد مختار اشاعت تہ ترجمہ گھرہ قایم کرن۔”ka

یہ کانفرنس سپد 23 تہ 24 اکتوبر 1966۔ کاشر مرکز کو٘ر امین کاملن 1963 منز شروع، رحمن راہی تہ غلام نبی فراق  رلٲوتھ  تجکھ مشترکہ طور کاشرِ زبانۍ ہنز علم۔ کاشر مرکزک اکھ وفد اوس امہ کانفرنسہ پتہ چیف منسٹر غلام محمد صادقس سمکھیوومت تہ تمو اوس ؤریس اندر اتھ متعلق قدم تلنک وعدہ کو٘رمت۔

ژورمہ شمارک اداریہ چھہ ساہتیہ اکاڈمی ہندین انعامن متعلق۔ لیکھان چھہِ "کاشرِ زبانۍ رود گۅڈہ پیٹھے ساہتیہ اکاڈمی ہند طریق کار مشکوک تہ جانبدار۔ گۅڈنی آو یہ انعامہ سۅرگباشی ماشٹر زندہ کول سنزِ "سمرن” ناوہ کتابہِ دنہ۔ امہ خاطرہ نہ زِ تتھ اوس ججو امچ سفارش کٔرمژ بلکہ تمہ وقتکۍ کشیرِ ہندۍ وزیر اعظمن ٲس امچ سفارش کرمژ۔ گویا ادبی کہوچہ بدل لج ماشٹر زندہ کولس سیاسی کہوٹ۔ یہ افسوس ناک رحجان پو٘ک برونہہ کن تہ اختر محی الدین تہ رحمن راہی (یہنزن کتابن امہ پتہ یہ انعامہ میول) تہِ آیہ امی سیاسی کہوچہ تہ سارٹفکیٹہِ ہندۍ شکار بناونہ۔ یہ چھہ ہاوان زِ یو٘ت تام کشیرِ ہند تعلق چھہ ساہتیہ اکاڈمی چھیہ افسوس ناک وۅتل بجہ کران روزمژ۔ چنانچہ اتھ وۅتل بجہ خلاف آو تمن وزِ وزِ احتجاج تہِ کرنہ۔ یہس تہِ کٔر (یو٘ت تام اسہِ معلوم سپد) اکاڈمی ہندیو اکثر ججو تہ تمن پتہ ریفریو اکس کاشرِ کتابہِ قومی ایوارڈ دنچ شد و مد سان سفارش۔ خیال اوس زِ وۅنۍ آسہِ ساہتیہ اکاڈمی ہوشہ آمژ۔ مگر کتھ وٲژ بییہ تو٘تے۔ کتابہِ آو نہ ایوارڈ دنہ تہ کاشریو ادیبو کٔر اتھ خلاف پننہ پننہ شایہ سخت ناراضگی ظاہر۔ ”

میہ چھہ باسان یہ چھیہ کامل سنزِ "لوہ تہ پروہ” کتابہِ ہنز کتھ۔ سۅے ٲس 1965 منز چھپتھ آمژ تہ 1966 ؤری خاطرہ آسہِ ہے تجویز کرنہ آمژ۔ اتھ میول پتہ 1967 منز یہ ایوارڈ۔

شمارہ 5 چھہ قانون ساز کونسلس منز تمدنی سیٹہِ خاطرہ تتھس شخژہ سندس نامزد گژھنس پیٹھ "یس شخژس نہ زبانۍ، ادبس تمدنس تہ تہذیبس سیتۍ رژھ تہِ واسطہ اوس۔” ونان چھہِ "پرانہِ حکومژ نشہِ ہیکہِ ہے تہِ نہ امہ ورٲے بییہ کنچ توقع سپدتھ، تکیازِ سۅ ٲسے ہمت شاہ سنزِ جایہ بلہ نٲودس تھاونچ قایل۔ مگر وۅنۍ گژھہِ ییتہ یور یہ مسخرانہ روایت ختم سپدنۍ۔”

شییمس شمارس منز چھیہ اداریہس منز یہ خۅشخبری زِ "کاشر مرکزن تج اکھ تاریخی آواز تہ تحریک زِ کاشر زبان گژھہِ تعلیمی ذریعہ بناونہ ینۍ۔ آوازِ ہند زور تہ اہمیت وچھتھ کو٘ر حکومتن اوترہ اوترے اعلان زِ پانژمہِ جمٲژ تام ییہ کاشر زبان کینژن سکولن اندر تجربہ پاٹھۍ لازمی مضمون کس صورتس منز پرناونہ۔”

یم چھہِ کینہہ نمونہ یمہ سیتۍ پرن وول یہ اندازہ ہیکہِ کٔرتھ زِ یہ رسالہ کتھین معاملن پیٹھ تہ کمہ اندازہ اوس سوچان۔

 

کاشر ادب – اکھ بہترین رسالہ (قسط 3)

kadab

رحمن  راہی سنزِ "جلوہ تہ زبور” علاوہ چھپییہ رسالس منز تہندس اکس روایتی غزلس سیتۍ سیتۍ "چون خط ووتم” تہ "ٲہی” زہ نظمہ۔ جلوہ تہ زیور نظمہِ متعلق چھہ شیم احمد شیم  لیکھان زِ "رحمن راہی سنز نظم جلوہ تہ زبور چھیہ تتھ فنی بلندی کُن اشارہ کران یۅسہ شاعرس تہ پرن وٲلس درمیان تعلق پیدہ کرنہ بدلہ ژھین چھیہ دوان۔” رسالس منز چھہ ڈاکٹر فاسٹس کہ ٲخری سینک راہی سند ترجمہ تہِ اکس شمارس منز چھپان۔

کامل سندۍ چھہ کل تریہ غزل چھپان یمن متعلق رشید نازکی لیکھان چھہِ زِ "کامل صابنۍ غزل چھہِ حاصل شمارہ۔ غزل چھہ کاملن رام کو٘رمت یا غزلن چھہ کامل رام کو٘رمت۔ زندگی ہندۍ نیتھہ ننۍ معنی غزلہ کس پیمانس منز وٲلتھ مس تہ شہل تصور پیدہ کرُن چھہ کاملن ہنز کٲم۔”

نادم چھہ انٹرویووس منز کامل نین یمن غزلن متعلق ونان زِ "کاملن یہ غزل یُس زیر بحث چھہ، سہ چھہ تموے منزہ اکھ یم نوِ کاشرِ غزلچ نشاندہی چھہِ کران۔ امیک مزازہ تہ امچ تلہ تراو چھیہ کاشر۔ امیک سوالیہ انداز، امچ قافیہ بندی تہ امیک ردیف چھہِ سٲری کاشرس پیٹھ۔ یۅسہ روانی تہ سلاست اتھ غزلس منز چھیہ سۅ چھیہ اتھ سہل ممتنی قبیلک بناوان۔ یہ چھہ غزلک معراج تصور کرنہ یوان۔ امہ علاوہ چھہ اتھ غزلس منز ہندی دیومالا أنتھ امہ کس مضمونس وسعت تہ نویر میولمت۔ یمہِ اندازہ مینکا، اپسرا، نٲگراے قافیس منز استعمال آمتۍ چھہِ کرنہ، تمہِ اندازہ ہیکہِ ہے نہ بییہ کانہہ تہِ حوالہ (allusion) غزلہ کین یمن مصرعن ہمہ گیر بنٲوتھ۔ موضوع کنۍ تہِ چھہ یہ غزل سیٹھا نو٘و۔ ردیف چھہ شاعرس الگ کڈتھ تتھ لکہ ارساتس سیتۍ شامل کران یس وقتہ چیو بیہ سۅکھ ترایو بدون چھہ کو٘رمت تہ یس زندگی ہند ٹیچھر سرکشی کن چھہ پکناوان۔ یہ وٲراگ چھہ نہ فرارک وٲراگ بلکہ چھہ وٲراگ یس حساب ہینس پیٹھ آمادہ چھہ گو٘مت۔ امہ علاوہ چھہ غزل روایتی قدرن ہندۍ پۅتلۍ پھٹراونس پیٹھ آمادہ کران۔ حالانکہ غزل چھہ "میہ کیاہس پیٹھ” مگر یہ "میہ کیا” چھہ سہ یُس جابر وقتس میون خیال انزۍ منزۍ ہینس پیٹھ مجبور کرِ۔

حرام چھکھ اگرہے قبرِ میانہِ پیور تھون
میہ سیتۍ گیہ تہِ زن یم میانۍ شعر ضایع میہ کیا

یہ چھہ نہ محض سہ احتجاج یُس شاعر پننس بدون کڑنہ ینس کران چھہ بلکہ یہ چھہ احساسک سہ شدید مطالبہ یُس شاعر سند جذبہ بزور شمشیر ماناوان چھہ۔”

اختر محی الدین نیو ترجمو علاوہ چھہ تسند اکھ افسانہ "گلاب روے” اکس شمارس منز چھپیومت۔ افسانن منز چھہِ دیپک کول سند "ژھانپ”، بنسی نردوش سند "مستہ کلف”، غلام نبی شاکر سند "میہ تہِ تو٘ر نہ فکرِ” تہ "آکڈۍ”، کلدیپ رعنا سند "کۅلہ ٹونچ”، شبنم قیوم سند "گٹہِ منز گاش، گاشہِ منزہ گٹہ” چھپیمتۍ۔

رسالہ کس اکس شمارس منز چھپیوو کاشرِ زبانۍ ہندس مایوس رفتارکس موضوعس پیٹھ اکھ سمپوزیم یتھ منز شاہد بڈگامی، مظفر عازم، فاروق نازکی، بشیر شاہ تہ موتی لال ساقی ین حصہ نیو۔ شاہد بڈگامی وو٘ن رسم خط چھہ ناکارہ، مظفر عازمن وو٘ن لکن چھیہ نہ دلچسپی، فاروق نازکی ین وو٘ن سورے راہ چھہ حکومتس، بشیر شاہن وو٘ن ژھرِ راہ تہ بییہ نہ کینہہ تہ موتی لال ساقی ین وو٘ن وحہہ چھہ نہ اکھ۔  یہ چھہ سیٹھا دلچسپ سمپوزیم۔ 35 ؤری پتہ تہِ چھہ یہ ازیک صورت حال باسان۔

کاشر ادب کین شمارن منز چھپییہ سنتوش، شمس فقیر، رسول میر، غلام رسول نازکی، غلام نبی فراق، مظفر عازم، غلام نبی خیال،محی الدین گوہر،رشید نازکی، مشعل سلطانپوری، چمن لال چمن، رسول پونپر، غلام احمد گاش، شریف الدین شارق، سجود سیلانی، مکھن لال محو، محمد ایوب بیتاب، موتی لال ناز، غلام نبی عارض، مکھن لال کنول، فرحت گیلانی، مکھن لال بیکس، عبدالرحمن طالب، محمد امین شکیب،عبدالرحمن سرور، عایشہ مستور، جواہر لال سرور، منظور ہاشمی،  موہن لال آش، ارجن دیو مجبور، موہن نراش، رادھے ناتھ مسرت، محمد شفیع شاد، عبدالغنی ندیم، فردوس رعنا، غلام احمد عابد، خورشید احمد طالب، تنہا نظامی، غلام محمد غمگین، شفیع شوق، غلام نبی ناظر، رحیم ساجد، جگن ناتھ ساحرعبدالخالق رنجور، فاضل کاشیمری، ٹیلر عبدالرشید، شوکت انصاری، پرتھوی ناتھ کول سایل، عبدالرحمن آزاد، محمد یوسف عاجز سندۍ غزل تہ نظم ۔

(یہ لسٹ چھہ امہ مۅکھہ دنہ یوان تاکہ پرن وٲلس گژھہِ اندازہ امہ وقتہ کم کم شاعر چھہِ اندۍ پکھۍ ٲسمتۍ۔)

کاشر ادب – اکھ بہترین رسالہ (قسط 2)

santosh 2

اگر نہ کاشر ادب درامت آسہِ ہے، ممکن چھہ نیب تہِ ما آسہِ ہے نہ درامت۔ کامل گو٘و کاشر ادب نش دۅیو شمارو پتہ الگ، وجہ چھہ نہ پتاہ۔ مگر سنتوشس سیتۍ روز امۍ سنز دوستی برقرار ۔ کامل رود کاشر ادب رسالس منز چھپان تہ سنتوش تہِ رود نیب رسالس منز چھپان، خاص کر تمۍ سنز ظرافت نگاری یۅس سہ بکواس کاشیمری فرضی ناوہ لیکھان اوس۔ سنتوشس پیٹھ چھہ واریاہ لیکھنہ آمت مگر واریاہ کینہہ چھہ لیکھنے تہ تمۍ سندِ ہمہ گیر شخصیتکۍ واریاہ پہلو چھہِ اکثرن نش پوشیدے۔ بقول مظفر عازم "رومانوی ہیرو سندۍ پاٹھۍ جوش تہ جذبہ سان محبت کرن وول، اغواہک پلان بناون وول، گرفتاری ہند سامنہ کرن وول، نیک زندگی کرن وول، کھلہ ذہن تھاون وول، اندہ وندہ فیاض، متنوع زندگی کرن وول سنتوش ۔۔۔ چھہ تژھ شخصیت یمۍ سنز کہانی وننس لایق چھیہ۔” (فیس بک)  سنتوشن لیکھۍ افسانہ، ناول، نظمہ، غزل، تنقید، ظرافت، فلسفہ، امۍ کو٘ڈ رسالہ۔ امہ علاوہ اوس یہ تھیٹرس سیتۍ وابستہ تہ ہندروستان کین اہم مصورن منز شمار۔

(پیٹھہ کنہِ تصویر غلام رسول سنتوش)

اکی وقتہ، لرِ لو٘ر نیرتھ ما آسہِ ہے یمن دۅن رسالن پانہ وانۍ مان مان تہِ۔ نیب رسالن اگرچہ ادبس منز جدید سوچ پھانپھلوو تہ اکھ نو٘و معیار قایم کو٘ر، امیک پیش رو اوس ژکہ سنتوشن کاشر ادب۔ مگر نیب بنیوو نوِ رجحانک نمایندہ۔ نیب 9 کس اداریہس منز چھیہ کاشر ادب رسالس متعلق یہ شکایت میلان "کنہِ ہم زمانہ رسالس متعلق کینہہ ونن چھہ نہ اخباری آدابو انۍ جان۔ مگر اسۍ چھہِ نہ رسالہ ذاتی مفادو یا ہارہ کماونہ خاطرہ کڈان بلکہ چھہ یہ زبانۍ ہند ژکھ یمۍ اسۍ بیہ سۅکھ چھہِ بناوۍ متۍ۔ اتھ کن وچھتھ ہرگہ اسۍ پانوانۍ تنقید تہِ کرو سہ گژھہِ اسونہِ ہۅنجہ ویتراونہ یُن۔ کاشرِ ادبک بانی تہ اڈیٹر چھہ غلام رسول سنتوش۔ اتھ چھہ نہ شک زِ امس چھہ کاشرِ زبانۍ پوچھر دنک سٲنی پاٹھۍ سخ ہمسوس۔ مگر پانہ کشیرِ نیبر روزنہ کنۍ یمن دوستن امۍ یہ رسالہ وزِ وزِ حوالہ کو٘ر تمو کٔر امچ تژھ خراب روایت قایم زِ زبانۍ فایدہ واتنہ بدلہ ووت نقصانے۔ اکہ لٹہِ دراو زہ ژور شمارہ تہ گو٘و بند۔ وہرۍ جوراہہ دراو بییہ مگر نون ریتن منز درایہ کل بل تریہ شمارہ۔ وۅنۍ گیس بییہ زہ ریتھ زِ نو٘نے چھہ نہ کنہِ۔ حالانکہ رسالہ چھہ ریتوار۔ یہ صورت چھیہ نہ جان۔ امیک اثر چھہ زبانۍ پیٹھ تہِ ناکارہ پیوان تہ ہم زمانہ رسالن تہِ برونہہ پکنس تھۅس یوان۔”

کاشر ادب اوس سنتوش سندین پونسن پیٹھ نیران، پونسن ہنز کمی نہ آسنہ باوجود ہیو٘ک نہ یہ رسالہ تواتر سان نیرتھ، تکیازِ یمن شخصن یہ تیار کرناونچ کٲم ذمہ ٲس تم ہیکۍ نہ سنتوش سندس جذبس پوشتھ۔

ستوشس پیٹھ اوس دینا ناتھ نادم سنزِ شاعری ہند سیٹھا اثر، لہذا چھہ نہ یہ کانہہ اتفاق زِ اتھ رسالس منز چھپییہ نادم سندۍ واریاہ چیز یمن منز "حارثات” ناوہ چیو ستو نظمو علاوہ سانیٹ، نوِ طرزک غزل، میٔژ، ڈلہ بٹھۍ بٹھۍ، ژور، گاسہ تُل، زندگی، ونل ناوچہ نظمہ شامل چھیہ۔ نادم صابس سیتۍ سنتوشن اکھ کار آمد انٹرویو تہِ چھپیوو اکس شمارس منز۔ ییتہ نس تھاوون نادم سنز میٔژ نظم رژھرتھ تکیازِ یہ چھیہ نہ تہنزِ شایع کتابہِ منز شامل کرنہ آمژ۔

میٔژ

مژھج میٔژ
گرٕٹ، شوخ، سریہہ دار، شبنمۍ
پشج پۆٹ پشمینہ ٲوج
شہج بونہ ہند شاہ، وشنۍ گٲو ہند تھن
طرحدار، زٲوج، ملایم
مژھج میٔژ ملایم

*

میہ مۆند آب واراہ
مگر ییلہ وچھم دل جگر شانت سپدم
چھہ زن پھرستہ پھمب از ژواپارۍ وہرتھ
اتھو تلۍ میہ پوٚک ماجہ ہند ٹوٹھ آلو
نظر غیب گیہ واوہ مالن اندر
ہی چھیہ پراران پستہ جار گو٘ژھ واو چھاون
تہ پمپوشہ پیٹھۍ رکنہِ وو٘تھ اکھ خیالا
چھہ کچہ پوت پھنمبہ تو٘نب ونی ماجہ زامت
نرم لوو کلہ رن
گُرس کئۍ، وشنۍ تھنۍ
مژھج میٔژ، طرحدار، زٲوج، ملایم
مژھج میٔژ، ملایم
گرٕٹ، شوخ، سریہہ دار، شبنم

*

رنگو منزہ چھہ رنگ پۅختہ اڈہ زوو  جافر
اگر دٲن کٔنڈ لج دُسس گو٘و  سہ بادامۍ
ژُدشۍ زونہ ہند گاہ، لیدر اۆبرہ سٔدراہ
ژندُن مٲنزِ شر ہیتھ
منڈتھ کنکہ رنگۍ پۆٹ
چھہ نتہ دانہِ تاپس
سندِج ژیرۍ آمژ  پھۆلتھ وُڈرہ پیٹھۍ کنۍ
گرٕٹ، شوخ، سریہہ دار، شبنم
مژھج میٔژ، ملایم
طرحدار، زٲوج تہ دایم

*

چھیہ  خۅشبو  گلابس پنن راز قایم
ژٔڈس منز یہ دۅد تھنہ تلک مشک ادفر
نتے زاشُرس آیہ زامن
یُتھے آس مژرن ہوا نافہ سپدیو
وزنۍ عطرِ لج بالہ پیٹھۍ نیرۍ پوشن
تہ اکھ واوہ رنگ آیہ زن پھللہ چھاوان
کۅنگ مشک کوفور للہ وان لۅلہ منز
چھیہ ہرنن شہس زنتہ کۆستورۍ کھسہ وس
چھہ عنبر تہ وُدہ پانہ وانۍ راس کھیلاں
خبر ووت دۅہ کوت؟
اگر رود  انہِ نیرِ  وہرٲژ مہرینۍ
مشکدار وردن پھۅلن یوسمن
لگہ دِوے زن نشاطس
طرحدار، زٲوج  تہ دایم
مژھج میٔژ ملایم
چھیہ  خۅشبو  گلابس پنن راز قایم
مژھج میٔژ ملایم

*

امیک رنگ و بو یا پشُل یا پھہُر چھہ
ترُن یا وشن زانہِ تن میانۍ کیُتھ چھہ
بہ ییلہ زاس تیلہ آس امۍ سند شۅزر ہیتھ
یہ بتہ مٲج ازلچ
دٔہر ۍ بوج ابدچ
میہ لۅکچار رنزہ نوو امۍ لول برۍ برۍ
پننۍ دید میہ رٲوم امی دید میہ لٲجم
دِتن پھہہ بۆرن سریہہ سگُن میون باڈو
مگر از میہ گۅڈنی گیوُن بوز امۍ سند
میہ ما ٲس خبر میٔژ گیوُن زانہِ کوتاہ
یُتھے آب پۆک رۅنہِ ہیژن وزنہِ
تھج نارہ نے منز
وۅگن سینہ بترٲژ  زن شولہ ون نب
بٔرتھ آو دۅدہ وُے یہ ما گٲو ماجے
ہیۆتن لۆت وُزن سریہہ میٔژے لولہ ماجین
تہ سۆت سۆت صدا  اکھ
تہ لۆت لۆت مدٕر  لے
رٔسل گنگرایا، مژھج تان نغمچ
ہہ شو شو، شہ ہو ہو
ہہ ژھہِ ژھہِ تہ ژھہِ ژھہِ
اموب ماجہ ہیچھہ نوو شُر وۅدنہِ روزن
ہیۆتن د اں کلین گۅڈ  لگن دیوہ کھہس منز
یہ شو شو تہ ژھہِ ژھہِ
یہ ہو ہو تہ سی سی
یہے بولۍ   کۆستورۍ دچھ  پونپرن ہیچھ
یہے ککلہِ لٔب کۆر قمرۍ اتھۍ نقل ما
یہ واوُک صدا پۆت صدا ما چھہ امہ کے
طرحدار زٲوج تہ دایم
مژھج میٔژ ملایم
چھیہ ازلچ تہ ابدچ یہ سُرتال قایم
مژھج میٔژ ملایم

*

کران چھم میہ دل ڈُلگناہ دِمہ بہ ییتہ نے
بہ کرہ سران میٔژِ منز بہ ملہ خاک پانس
تہ  میٔژِ مۆہنیوا جنگلی پتھ ونس منز
بہ وچھہ قۅدرتک سُے گۅڈک جلوہ شاید
سہ ییلہ آدمس دستِ قدرت پھرِتھ گو٘و
سہ ییلہ تمۍ کنس تل گژھتھ "قم” ونیونس
دپیونس ژہ وۅتھ تھۆد
تہ ادہ کیا گیوو کانہہ قدم برونہہ تہ کانہہ پۆت
تہ کانہہ جل پچیوو،  کانہہ ڈۅچر دِتھ پچیو سو٘ت
تہ سُے ان ہِشر پھۆر جہانس
بہ ملہ خاک پانس بہ کرہ شران میٔژِ  منز
بہ چھلہ عالمس مل
بلن دادۍ لوکن ژلن جادۍ زدہ لس
تہ ہییہ زندگی بییہ کرنۍ نٔو تیاری
تہ ییہ بارسس میٔژ
مژھج میٔژ
گُرٕٹ شوخ سریہہ دار شبنمۍ
پِشج پوٹ پشمینہ  ٲوج
شہج بونہِ ہند شاہ ، وشنۍ گٲو ہند تھن
طرحدار زٲوج ، ملایم
مژھج میٔژ ملایم
***

(یہ نظم دژ مظفر عازم صٲبن ٹایپ کٔرتھ، یمہ مۅکھہ شکریہ کرن لازم چھہ۔)

یہ نظم چھیہ تقریبا گال کھاتس گمژ تکیازِ امہ نظمہِ ہند چھہ نہ کٲنسہِ پے پتاہ۔  یہ ہیکہِ امۍ سنزن شامل کتاب نظمن مقابلہ ڈیج ٲستھ مگر خالص یمہ حقیقت کنۍ تہِ زِ یہ چھیہ نادم سنز نظم چھیہ یہ رژھرنس لایق۔ امہ نظمہِ ہند ڈیجر ہیکہِ یمہ کنۍ تہِ ٲستھ زِ نادمن چھیہ سیٹھا کم نظمن نظرِ ثانی کرمژ۔ یمہ وقتہ یہ نظم لیکھنہ آمژ چھیہ تمہ ساعتہ ٲس نظمہ ہنز مروج شکل یہے چناچہ چھیہ امہِ شکلہِ ہنزہ نظمہ اسہِ اردو شاعر ن م راشد تہ میراجی یس نش تہِ میلان یمن منز تکراری عنصر غالب چھہ۔

رسالس منز چھپیوو نادم سنزن ژور تہ گاسہ تل دۅن نظمن پیٹھ اختر محی الدین تہ فرحت گیلانی سند تبصرہ۔ (یہ تبصرہ ییہ جلدے نیب ویب سایٹہِ پیٹھ دستیاب کرنہ۔)

کاشر ادب – اکھ بہترین رسالہ (قسط 1)

koshur adab

اکتوبر 1966 منز کو٘ڈ غلام رسول سنتوشن اکھ رسالہ یتھ "کاشر ادب” ناو اوس۔ سانین بہترین رسالن منز چھہ یہ یقینا شامل۔ ادبی صلاح کارن منز تھٲون دینا ناتھ نادم، علی محمد لون، امین کامل تہ بنسی نردوش۔ تم ادیب یم سنتوشس نزدیک ٲسۍ۔ دۅیو شمارو پتہ چھہ کامل صلاح کارو منزہ نیران تہ رسالہ چھہ اپریل 1967 شییم شمارہ نیرتھ بند گژھان ۔

کاشر ادب کہ گۅڈنکہ شمارہ پتہ برابر دۅیہ وہرۍ تہ بند گژھنہ پتہ برابر نوِ ریتۍ چھہ کامل پنن رسالہ نیب شروع کران۔ کاشر ادب چھہ نیبک ژورم شمارہ نیرنہ پتے اکھ ؤری ژور ریتہ کہ وقفہ پتہ اگست 1969 منز دوبارہ نیران۔ ٲٹھمہِ شمارہ (دسمبر 1969) پیٹھہ چھہ اتھ اکھ ادارہ بنان یمن منز محمد یوسف ٹینگ، اوتار کرشن رہبر تہ فاروق نازکی آسان چھہِ۔ میانہِ علمہ مطابق چھہِ یہندس ناوس تل اتھ  نیب رسالس لرِ لو٘ر بییہ تریہ شمارہ نیران تہ ٲخری کہم شمارہ نیرتھ چھہ 1969 یک ؤری سورنس سیتی بند گژھان۔ نیب تہِ چھہ برابر ترییہ وہرۍ 17 شمارہ نیرتھ اکتوبر 1971 منز بند گژھان۔

اتھ رسالس منز چھپییہ امین کامل، علی محمد لون، غلام نبی فراق، بنسی نردوش، رحمن راہی، اختر محی الدینس پیٹھ سنتوش سندۍ لیکھۍ متۍ خولہ خط ناوہ دلچسپ خاکہ۔ یم خاکہ ہیکہِ ہے نہ سنتوشس ورٲرے بییہ کانہہ لیکھتھ تکیازِ سہ زانہِ ہے یمن نزدیکی سان تہ تس نش ٲس سۅ نظر، سۅ ظرافت، بیہ تکلفی تہ دلیری یمۍ یم خاکہ یاد گار بنٲوۍ۔ یمن خاکن سیتۍ ٲسۍ ادیبن ہندۍ سکیچ یمو منزہ لون، کامل، راہی سنتوش سندۍ بناوۍ متۍ باسان چھہِ۔ فراق سند سکیچ چھہ سجود سیلانی سند تہ باقی زہ تہِ چھہ سجود سندی باسان۔ بۅنہ کنہ چھہ یم سکیچ پیش۔

Untitled

کاشرِ ادبکۍ کور ڈیزاین ٲسۍ خطاطی تہ نقاشی تہ مصوری ہندۍ فنکاران نمونہ تکیازِ یم ڈیزاین اوس سنتوش پانہ بناوان۔ (ییلہ نیب رسالہ شروع گو٘و امکہ ناوک ڈیزاین تہِ بنوو سنتوشنے۔) دۅیو دۅیو شمارو پتہ اوس کاشرِ ادبک کور ڈیزان بدلان تہ اکہ تازگی ہند احساس اوس گژھان۔ البتہ اندریم کتابت تہ طباعت تہ کاغذ ٲسۍ  نہ کور ڈیزنس ساتھ دتھ ہیکان۔

رسالس منز  ٲسۍ ہم زمانہ ادبی معاملن پیٹھ اداریہ چھپان یمن ہند ذکر برونہہ کن ییہ۔ پتہ کنہِ ٲسۍ نامہ پیام ناوہ خط چھپان یم صرف کینژنے شمارن تام محدود رودۍ۔ کاشرین ادیبن نش رسالہ پٔرتھ فن پارن متعلق کانہہ کتھ ٲسہ کڈنک توقع چھہ ہمیشہ غلطے رودمت۔ امہ خاطرہ تہِ چھہ ایڈیٹرن جکھن پیوان۔ باسان چھہ رسالہ کیو ذمہ دارو  چھہ اور کن کمے توجہ کو٘رمت۔  زیادہ تر خط چھہِ فضول، کاشر رسالہ کڈنس پیٹھ تعریف، گیٹ اپکۍ تعریف بیترِ۔

رحمن راہی سنزِ "سیاہ رودہ جرین منز” شعرہ سۅمبرنہِ ہندِ ابتداہچ نظم ‘جلوہ تہ زبور’ تہِ چھپییہ اتھۍ رسالس منز۔ دینا ناتھ نادم سنزہ امیجزم نش متاثر لۅکچہ نظمہ "حارثات” تہِ چھپییہ اتھۍ رسالس منز۔  امین کامل سند افسانہ "پھاٹک” تہ چھپیوو اتھۍ رسالس منز۔ تمہِ کھوتہ اہم یہ زِ اتھ رسالس منز چھپییہ کامل سندۍ زہ غزل (سانۍ حالاتھ حارۍثاتھ بنے ۍ) تہ (بہار پو٘ک نہ اگر چانہ میانہ رایہ میہ کیا) یم بحثکۍ موضوع بنییہ۔ اکھ امہ ادارہ کہ امہ دعوی کنۍ زِ "یمو دیت کاشرس اکھ نو٘و لہجہ تہ آہنگ” بییہ تمہ بحثہ کنۍ یُس کامل تہ راہی یس درمیان یہندس عروضس پیٹھ سپد۔ یہ اوس کاشرس منز گۅڈنیک عروضی بحث۔  یہ بحث چھپیوو اتھۍ رسالس منز۔

اتھ رسالس منز گو٘و افسانہ ترجمہ کرنک اکھ سلسلہ شروع یمن منز سعادت حسن منٹو (بابو گوپی ناتھ)، اوہنری (ڈالۍ)، چیخوف (اکس کلارکہ سند انجام)، گورکی (ڈنبۍ دود)، موپاساں (عشفک راز)، احسان عبدالقدوس (پو٘ت پھیرتھ)، واجدہ تبسم (ککل) سندۍ افسانہ ٲسۍ۔

یم خاص مضمون اتھ رسالس منز چھپییہ تمن ہند فہرست چھہ یہ :

گریرسن – اوتار کرشن رہبر
کالیداس – غلام نبی خیال
مورخ حسن – اوتار کرشن رہبر
روایت تہ ادب – محمد امین اندربی
کلہن – اوتار کرشن رہبر
مہدہ صٲب دیکہ – محمد امین رفیقی
سوم دیو – مکھن لال رینہ
درزہ پٲتھر – موتی لال کیمو
کردار نگاری تہ ادب – اوتار کرشن رہبر
سانۍ ادبی تحریک – میرزا عارف
ترجمن ہنز اہمیت – غلام نبی فراق
ازیک کاشر سٹیج – پران کشور
کاشرچ ضرورت – رحمن راہی
جدید شاعری – فاروق نازکی
کاشرس ادبس منز پیروڈی – نشاط انصاری
ڈراما فیسٹول، اکھ جایزہ — جی ایل چوپڑہ