نونک مسلہ: اقتباس نمبر 2

noon

 

نونک مسلہ کرن بہ ترین الگ قسمن منزتقسیم۔اکھ گوٚو سہ نون یس لفظہ کس ٲخرس پٮٹھ اکہِ زیٹھہ مصوتہ پتہ یوان چھہ۔ مثلا آسمان، موزون تہ زمین۔ یتھہ پاٹھۍ پتھ کن بیان سپد اتھ نونس متعلق اوس فارسی زبانۍ منز یہ اصول زِ نون چھہ نہ زیٹھہِ مصوتہ پتہ مجرا یوان۔ یہ اوس نون غنہ یعنی nasalization ۔جدید فارسی یس منز چھہ یہ نون اکہِ الگ مصمتہ کہ حیثیتہ شعرن منز پرنہ ، بولنہ یوان مگر ہیجلہِ کس زیچھرس چھیہ نہ کانہہ فرق پیوان۔پرانہِ اردو شاعری منز اوس زیادہ تر یۅہے اصول زِ نون چھہ نہ زیٹھہِ مصوتہ پتہ مجرا یوان اگرچہ کنہِ کنہِ اعلانیہ نون تہِ ورتاونہ چھہ آمت۔ البتہ جدید اردو شاعری منز ہریو اعلانیہ نونک ورتاو۔ کاشرِ شاعری منز چھہ زیٹھہِ مصوتہ پتہ نون دۅشونی صورتن منز میلان۔ پرانین شاعرن ہندس کلامس منز چھہ اکثر زیٹھم زیٹھہِ ہیجلیک ٲخری مصمتہ تقطیع منز پیوان۔ چاہے تم کاشرۍ نون آسن یا نیبرم یا بدل کانہہ آواز۔ رفیق راز چھہ ونان زِ نیبرمین لفظن منز ہیکون ٲخری نون مکتوبی غیر ملفوظی تہ مکتوبی ملفوظی اختیاری طور ورتٲوتھ، مگر کاشرین لفظن منز گژھہِ نہ یہ اختیار آسن۔ تمن منز گژھہِ یہ مکتوبی ملفوظی آسن۔رفیق رازن یہ اصرار چھہ دراصل کاشرین لفظن ہندس پھورس پیٹھ دٔرتھ۔مگر کاشرۍ شاعر خاص کر جدید دورکۍ شاعر چھہِ فارسی،اردو یہ [ ییتہ نس چھم نہ تران فکرِ میہ کیا اوس لیوکھمت۔ فایل ہیچم نہ کھولتھ] زِ اعلانیہ نون تہ نون غنہ سیتۍ چھہ نہ شعرس یا شعر چہ موسیقی کانہہ تلک پٮٹھ گژھان۔ لہذا اگرکاشرین لفظن ہندس سلسلس منز تہِ اختیار روزِ فرق پییہِ نہ کانہہ۔ یہ چھہ صحیح زِ اکس ہیجلس پیٹھ مشتمل یتھۍ لفظ مثلا زون، ہون چھہِ نہ نون غنہ ہس منز تبدیل گژھان۔یمن منز چھہ نہ کانہہ نون غنہ ورتاوان تہِ۔

دوٚیم گوٚو سہ نون یس لفظس منزس اکہِ ژھۅٹہِ مصوتہ پتہ یوان چھہ تہ یتھ پتہ کنہِ بیاکھ مصمتہ یوان چھہ۔ مثلا رنگ، منز،بند، بیترِ۔اردو تہ فارسی زبانۍ منز چھہ یتھین لفظن ہند نون تقطیع منز مجرا ننہِ یوان تہ یم لفظ چھہِ فاع کس وزنس پٮٹھ گنڈنہ یوان مگر کاشرس منز چھہِ یم لفظ فاع بجایہ فع وزنس پیٹھ گنڈنہ آمتۍ یمیک مطلب یہ چھہ زِ کاشرس منز چھہ یمن ہند نون مکتوبی غیر ملفوظی گنزرنہ یوان۔کاشرس منز کیازِ چھہ یہ امہ رنگہ گنڈنہ آمت؟ ظاہر چھہ تمیک وجہ چھہ سانہِ زبانۍ ہند صوتیات۔فارسی یس تہ خاص کر اردوس منز چھہ یتھین لفظن منز ٲخری مصمتس پٮٹھ نیم فتحہ تصور کرنہ یوان تاکہ یمن ہندس اندس پیٹھ یۅس مصمتن ہنز دُچ چھیہ سۅ ییہ پھٹراونہ۔ مثلا "رنگ” لفظ نمون۔ امہ چین آوازن ہنز تشکیل چھیہ یتھہ پاٹھۍ: (؍ر۔اَ۔ن۔گ؍)۔ مگر اردوس منز چھیہ امچ تشکیل یتھہ پاٹھۍ: (؍ر۔اَ۔ن؍ + ؍گ۔اَ) ۔ٲخری زبر چھیہ نہ پورہ زبر بلکہ سۅ یتھ نیم فتحہ ونان چھہِ۔صوتیاتی اصطلاحن منز ونو زِ ییلہِ اسۍ یمن لفظن ہندۍٲخری مصمتہ بولان چھہِ اسۍ چھہ ِٲسس منز نیبر نیروُن شہہ مکمل طور بند کران تہ رژھہِ کھنجہِ ٹھہرتھ شہک یہ گنڈ یلہ تراوان تہ امہ پتہ ینہ والہِ لفظہ کہ پھورہ خاطرہ تیاری کران۔ یژھن آوازن چھہِ stops ونان۔ اردو زبانۍ منز چھہِ یم مصمتہ بناونس اندر اتھ برعکس ٲسس منز ہوا مکمل طور بند کٔرتھ "یکدم” یلہ تراونہ یوان یمہِ کنۍ یمن پتہ کنہِ اکھ لۅکٹ مصوتہ بوزنس منز یوان چھہ یتھ نیم فتحہ وننہ آو۔ یژھن آوازن چھہِ plosives ونان۔ گویا یمن لفظن منز (مثلامنز، کنز، کۅنگ، زنڈ، رنگ) یوت نونک مکتوبی غیر ملفوظی تہ مکتوبی ملفوظی معاملہ چھہ تیوتے چھہ یمن پتہ کنہِ کہ مصمتی خوشک معاملہ یتھ منز نون اکھ حصہ چھہ۔اصل مسلہ چھہ زِ ٲخری مصمتہ چھا کاشرس منز متحرک بنان کنہ نہ۔ اردوس منز چھہ نہ یتھ کانہہ مسلہ تکیازِ تم چھیی یمن نیم فتحہ ہیتھ بولان یا تصور کران مگر اسۍ چھہِ نہ۔اسۍ چھہِ یمن لفظن ہندۍٲخری مصمتہ ادا کٔرتھ ٲسس تھکھ دوان۔ لہذایمن شعرن منز یمن لفظن ہندۍٲخری مصمتہ متحرک بناونہ آمتۍ چھہِ (تکیازِ فارسی تہ اردوس منز تہِ چھہِ) تمن شعرن منز چھہ یمن لفظن پیٹھ ضرورت یا معمول کھۅتہ زیادہ زور پیوان، تکیازِ یم چھہِ شعوری طور متحرک بناونہ آ متۍ، کینژھا فارسی ،اردو عروض کین اصولن ہنز پابندی کرنہ کس شوقس منز تہ کینژھا اردو شاعری ہنزِ مشقہِ ہندس نتیجس منز۔ اسۍ تلوکھ حکیم منظورنۍ زہ شعر یم رفیق راز ن نون اعلانیہ ورتاونچہ مثالہ رنگۍ دتۍ متۍ چھہِ۔ بییہ تلوکھ اسۍ شہناز رشیدنۍ تریہ شعر یم میہ پانہ ژارۍ متۍ چھہِ۔ یمو سیتۍ پکناوون اسۍ لفظن منزباگ کہ نونک بحث برونہہ۔حکیم منظور سند شعر:

کاش منظورن تہِ پوٚرمت آسہِ ہا لولک سبق
کاش وۅلرس منز زانہہ مہتاب وچھمت آسہِ ہن

امہِ شعرہ کس "منز” لفظس پٮٹھ چھہ ضرورت کھۅتہ زیادہ زور پیوان تکیازِ امہِ لفظک ٲخری مصمتہ چھہ متحرک بنٲوتھ زیٹھراونہ آمت۔دلچسپ نکتہ چھہ یہ زِ ییتہِ شاعرن لفظ "منز” نون مجرا نتھ فاع کس وزنس پیٹھ گوٚنڈمت چھہ، تتہِ چھس اتھ پتے ینہ وول لفظ "زانہہ” نوِ قاعدہ مطابق فاع کس وزنس پیٹھ گنڈن مشتھ گومت۔ "زانہہ” چھہ فع کس وزنس پیٹھ گنڈنہ آمت، حالانکہ دۅشونی منز چھہ منزس نون یوان تہ دۅشونی چھہ اندس پیٹھ مصمتی خوشہ۔یۅہے صورت حال چھہ شہناز رشید سندس بنمس شعرس منز :

کمن سا راوۍ متین ہند برونت چھکھ سپدان
یہ کہنزِ رایہ چھہِ تارکھ وسان آبس منز

اتھ شعرس منز تہِ چھہ شاعرن نون مجرانتھ "ہند” لفظ فاع کس وزنس پٮٹھ گوٚنڈمت یمہِ سیتۍلفظس معمول کھۅتہ زیادہ زیچھر لوٚگمت چھہ ، مگر اتھ پتے ینہ والہِ "برونت” لفظک نون چھس امہِ قاعدہ مطابق ورتاون
مشتھ گوٚمت۔اتھ منز تہِ چھہ منزس نون یوان۔ اتھ لفظس منز چھہ نون مکتوبی غیر ملفوظی بنیومت۔ امی شعرہ کس دوٚیمس مصرعس منز چھہ بییہ "کہنزِ” لفظک نون اعلانیہ گنڈن مشتھ گوٚمت، حالانکہ اتھ لفظس منز تہِ چھہ نون منزس واقع۔ یہ کتھ چھیہ ثیقہ زِ حکیم منظورن چھہ "منز” لفظس تہ شہناز رشیدن "ہند” لفظس منزنون شعوری طور اعلانیہ ورتوومت۔ مگر باقی لفظن یعنی "زانہہ”،”برونت” تہ "کہنزِ” کن چھکھ نہ ظن رودمت۔نتہ چھیہ یہ حقیقت زِ یمن شاعرن چھیہ یمن لفظن منزنونہ رنگۍ فرق باسان یمیک بحث برونہہ کن ییہِ۔وچھوکھ شہناز رشیدنۍ بییہ زہ شعر:

پتھ پھیرہن چھیہ لار، پکن برونہہ تہ زیٹھ کھے
یتھ کریہنہِ رٲژ "منز "کرن کیا سفید گرۍ
شر بہ اوسس تہ اچھو "منزہ” نیکھ میانۍ کل ارزتھ
وۅنۍ گمتۍ سخ چھہِ پشیمان دپاں مۅختہ دنم ہیتھ

یمن دۅن شعرن منز چھہِ خط کشیدہ لفظ’’ منز‘‘ تہ ’’منزہ‘‘ دۅشوے فاع کس وزنس پٮٹھ گنڈنہ آمتۍ۔ ییلہ یم شعر اسۍ پران چھہِ اسۍ چھہِ نہ یمن لفظن منز کانہہ فرق کٔرتھ ہیکان۔وجہ یہ زِ اسۍ چھہِ نہ یم لفظ عام بول چالس منز متحرک بناونکۍ عادی۔ چونکہ اسہِ چھہِ زبانۍ منز یمن لفظن ہندۍمتحرک تہ غیرمتحرک جوڑ موجود لہذا چھہِ نہ اسۍ امہِ مۅکھہ تہِ منز، رنگ، کنز، کۅنگ، بیترِ لفظن منز اردوکۍ پاٹھۍٲخرس پیٹھ نیم فتحہ پھورراوان کران۔لفظن پتہ کنہِ نیم فتحہ نہ لگاونچ نہج چھیہ کاشرس منز ییژہمہ گیر زِ اسۍ چھہِ اندہ متحرک لفظن (مثلا منزہ، رنگہ، کنزہ، کۅنگہ، بیترِ) ہندۍٲخری مصوتہ تہِ اکثر حذف کران تہ یم لفظ اندہ غیر متحرک بناوان۔ اتھ نہجہ متعلق چھہ یتھ کتابہِ منز بییس جایہ بحث کرنہ آمت۔ اتھ برعکس چھہ امۍ سے شاعر سندس بییس شعرس منز (یس رفیق رازن اعلانیہ نون چہ مثالہ پاٹھۍ دیتمت چھہ)یہ مسلہ یتھہ پاٹھۍ حل گژھان زِ مصمتی خوشہ کہ ٲخری مصمتہ (گ) پتہ چھہ مصوتہ (اِ) یوان یتھ سیتۍ یہ رٔلتھ مصمتی خوشہ پھٹراوان چھہ، تہ (ن) تہ (گ) چھہِ الگ الگ پرنہ یوان۔ اگر اتھ لفظس پیٹھ تاکید تراونہ ییہِ (معنوی طورما روزِ سہ مناسب) تیلہِ چھہ (گ) مصمتہ مشدد بناون پیوان۔

ہے گلو! شوٚنگتھ مہ روزو اوس کس تامتھ ونان
تمۍ چھہ ممکن واو ما بیتاب وچھمت آسہِ ہن

اسہِ چھہِ زبانۍ منز یمو منزہ کینژن لفظن (منز، کنز، کۅنگ، زنڈ، رنگ) ہندۍ جوڑ تہِ موجود یمن منز پتم مصمتہ متحرک چھہِ۔ مثلا منزہ، کنزہ ،کۅنگہ، زنڈہ، رنگہ۔ نیتوکھ شہناز رشید سندۍ یم تریہ شعر
؂
پتھ پھیرہن چھیہ لار، پکن برونہہ تہ زیٹھ کھے
یتھ کریہنہِ رٲژ "منز "کرن کیا سفید گرۍ
شر بہ اوسس تہ اچھو "منزہ” نیکھ میانۍ کل ارزتھ
وۅنۍ گمتۍ سخ چھہِ پشیمان دپاں مۅختہ دنم ہیتھ
کمن سا راوۍ متین ہند برونت چھکھ سپدان
یہ کہنزِ رایہ چھہِ تارکھ وسان آبس منز

شہناز سندس ترییمس شعرس منز چھہ لفظ "ہند”(دال متحرک بنٲوتھ) زیٹھراونہ آمت یمہِ کنۍ اتھ پیٹھ ضرورت کھۅتہ رژھ کھنڈ زیادہ زور پیوان چھہ۔ یی چھہ تسندس گۅڈنکس شعرس منز تہِ "منز” لفظس گژھان۔ یتہِ فارسی والیو پننہِ خاطرہ واریاہ اصول بناوۍ، کینہہ تھٲوکھ اختیاری (پتھ کن کوٚر میہ تمن ہند بیان) ، تتہِ ہیکوکھ اسۍ کاشرِ کہ خاطرہ تہِ الگ اصول بنٲوتھ۔ اسہِ چھہِ نہ تہندۍ اصول پالنۍ ضروری۔ تہِ کرنہ سیتۍ چھہِ نہ اسۍ عروضہ نیبر نیران۔ یمن چیزن ہنز چھیہ اتھ عروضس منز گنجایش موجود۔ یمن لفظن ہندس سلسلس منز چھہ سون اصول یہ زِ یمن منز چھہ نون مکتوبی غیر ملفوظی۔ کینژن جاین اگر ہیتی یا معنوی مجبوری آسہِ تہ تتھ مدنظر اگر یہ نون ملفوظی ورتاونہ ییہ سۅ چھیہ وکھرہ کتھ۔مگر عام اصول گژھہِ سانہ زبانۍ ہندِ صوتی مزازہ مطابق آسن۔چونکہ یمن لفظن منز چھہِ نہ اسۍ نیم فتحہ ورتٲوتھ مصمتی خوشہ پھٹراوان، لہذاچھہ نونے ختم گژھان۔ وتھ چھیہ یہ نیران زِ نون ترٲوتھ چھہ نونہ برونہم مصوتہ کھٍنکھراونہ nasalize یوان۔ یہ کرنہ سیتۍ چھہ نون نصف حالتس منز لفظس منز موجود روزان۔امہِ قسمہ کین نونن منز چھہِ تم لفظ تہِ یوان یم اکہِ بجایہ دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل چھہِ۔ مثلا اندر، گندر، بیترِ۔ یمن لفظن منز چھہِ نہ مصمتہ اکھ اکس پتہ اکۍ سے ہیجلس منز یوان بلکہ چھہِ یم اکہِ ہیجلہِ کس اندس تہ بییہِ ہیجلہِ کس گۅڈس منز یوان۔ یمن ہند ژھین چھہ نہ سہ مسلہ پیش کران یس اکۍ سے ہیجلس منز ینہ والۍ مصمتہ کران چھہ۔ مگر کاشرس منز چھیہ یہ عام نہج زِ نون پتہ اگر کانہہ دندۍ مصمتہ dental consonant یوان آسہِ ، سہ نون چھہ پیوان تہ تمہِ بدلہ چھہ تمہِ برونہہ ینہ وول مصوتہ نون غنہnasalize بنان۔وجہ یہ زِ نون تہِ چھہ دندۍ مصمتہ ۔ زہ دندۍ مصمتہ اکھ اکس پتہ ینہ سیتۍ چھہ اکہِ کہ راونک امکان ہران۔ لہذا گژھن یم لفظ (مفا) کس وزنس پٮٹھ تہِ موزون۔ یعنی یہند نون تہِ ییہِ کاشرس منز مکتوبی غیر ملفوظی گنزراونہ۔ ضمنا چھہ عرض زِ یتھۍ ہوۍ لفظ اگر شعرن منز تھکہ جاین (caesura)پٮٹھ متحرک ورتاونہ ین، تمن جاین گژھہِ نہ یمن ہند صوتی عادتس خلاف معمول آسنک احساس۔

نونک مسلہ: اقتباس

Salt spilled from shaker

نونس پیٹھ میانہ مضمونہ منزہ اکھ اقتباس:

نونس متعلق یم تہِ لفظ مختلف بحثن منزمثالن ہندۍ پاٹھۍ پیش کرنہ یوان چھہِ، حقیقت چھٮہ یہ زِ کانسہِ چھہ نہ تمن لفظن ہندس اصل مسلس کن ظن گوٚمت۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یمن لفظن ہند تعلق چھہ سیدِ سیوٚد کاشرِ زبانۍ ہندس صوتی مزازس سیتۍ۔ اگر یمن لفظن ہندس معاملس منز کاشریو شاعرو غیرشعوری طورکانہہ اجتماعی فیصلہ نمت چھہ، تتھ پتہ کنہِ چھہ سانہِ زبانۍ ہند مزازہ اوسمت۔ رفیق راز چھہ ونان زِ "یہ چھٮہ نہ عروض نش بٮہ خبری ہنز مثال بلکہ عروضس سیتۍ سہل انگاری ورتاونچ مثال "۔ (انہار 2005، ص ۱۱۱) امہ بیانہ تلہ چھہ ظاہر زِ یمن لفظن متعلق یم فیصلہ ننہ آمتۍ چھہِ تم چھہِ نہ لاعلمی ہند نتیجہ بلکہ "سہل انگاری” یتھ بہ بہتر پاٹھۍ کاشرِ زبانۍ ہندِ مزازچ مجبوری ناو دمہ۔ سوال چھہ نہ قابلیتک زِ اسہِ تگیا یا نہ تگیا فارسی ؍اردو عروضس منز یمن لفظن ہندس معاملس منز کھرہ کرنہ آمت اصول پننٮن شعرن منز مہارت سان ورتاون بلکہ یہ زِ یہ اصول چھا سانہِ زبانۍ ہندس صوتی عادتس ستیۍ واٹھ کھٮوان ؟یہ چھہ نہ عروضی چابکدستی ہند معاملہ بلکہ پننہِ زبانۍ ہنزِ صوتی آسایشہِ ہند معاملہ۔

رفیق رازنۍ گۅڈنکۍ زہ نکتہ چھہِ یتھ کتھہِ کن اشارہ کران زِ عروض چہ تقطیع منز چھہِ ملفوظی اچھر شامل گژھان، مکتوبی نہ۔ یہ ملفوظی مکتوبی بحث آو عربی عروضس منز تشدید تہ زیٹھٮن مصوتن ہندس سلسلس منز بارسس، مگر امہِ بحثچ اہمیت ہرییہ ییلہ عروض باقی زبانن تام ووت یمن ہند ہیجلۍساخت عربی نش مختلف اوس۔ لہذا اوس سوال زِ کم اچھر نموکھ تقطیع منز مجرا تہ کم نموکھ نہ۔ اصول اوس بنتھے۔ اچھرن کن مہ گژھو۔ آوازن کن گژھو۔ اگر آواز اچھرہ وراے لفظس منز موجود چھٮہ، سۅ ییہ شامل کرنہ تہ اگر اچھرٲستھ تہِ آواز آسہِ نہ ، سہ اچھر ییہ نہ شامل کرنہ۔ یہ اصول چھہ آسان مگر کینژن اچھرن متعلق یہ فیصلہ کرن چھہ مشکل زِ تم چھا مکتوبی غیر ملفوظی کنہ مکتوبی ملفوظی، تکیازِ تمن آوازن متعلق چھہ اختلاف راے۔ یمن منز ہیکون اسۍ نونک معاملہ تہِ تھٲوتھ۔ یہ ملفوظی غیر مکتوبی تہ مکتوبی غیر ملفوظی معاملہ چھہ یتھ کتھہِ کن اشارہ زِ عروضس منز چھہِ نہ اچھر جسمانی طور اہم بلکہ چھہ یہند مجرد تصوری وجود اہم۔ تقطیع چھٮہ امی تصوری اچھرہ مطابق سپدان، زبانۍ ہندِاملا مطابق نہ۔ لہذا ہٮکو نہ اسۍمکتوبی غیر ملفوظی تہ ملفوظی غیر مکتوبی تجزیہ وراے کنہِ شعرچ تقطیع کرتھ۔کینہہ اچھر چھہِ تراونہ یوان تہ کینہہ چھہ تصور کرنہ یوان۔ ییتہِ نس روزِ نہ یہ دلچسپی نٮبر اگر اسۍ عربی تہ فارسی یس منز یمن ہند مختصر جایزہ ہٮمو۔ عربی زبانۍ منزاوس نہ اچھرن ہنزِ امہِ کمی بیشی ہند زیوٹھ فہرست مگر فارسی یس منز گوٚو اتھ ہرٮر۔

عربی یس منز چھہِ تقطیع منز بنم اچھر تصور کرنہ یوان یعنی ملفوظی غیر مکتوبی ماننہ یوان:
(1)تنوین؛(2) تشدید؛(3) اللہ، ھذی، ذالک ہوٮن لفظن منزالف؛ (4)مصرعہ کس ٲخرس پٮٹھ ژھوٚٹ مصوتہ۔
یمو علاوہ چھہ عربی زبانۍ منز ھمزہ الوصل تراونہ یوان (یعنی مکتوبی غیر ملفوظی ماننہ یوان)۔

فارسی زبانۍ منز ہریوو یہ فہرست سٮٹھا۔ مثلا بنم اچھر آیہ مکتوبی غیر ملفوظی قرار دنہ:
(1) (خ) پتہ ینہ وول ژھوٚپ واو(و)؛
(2)زیٹھہِ مصوتہ پتہ نون (ن) یعنی نون غنہ؛
(3)یکوٹہ ینہ والٮن ساکن اچھرن منز ترییم اچھر یعنی نیست (ن ی س ت )لفظک (ت) ۔
یمو علاوہ آیہ بنم اچھر اختیاری طور مکتوبی غیر ملفوظی قرار دنہ:
(4)خاص کرعربی لفظن منز تشدید (یتھ تم تخفیف ونان چھہِ۔ مثلا نیّت ، دُرّ، کفّ بیترِ لفظن منز تشدیداختیاری طور ختم کرنۍ۔)؛
(5) ہاے مخفی مثلا کہ، نامہ لفظن ہندٲخری (ہ)؛
(6) لفظک ٲخری واو (و) اگر امہِ نش مراد مصوتہ آسہِ۔ مثلا دو، تو، بیترِ ۔
بنم اچھر آیہ اختیاری طور ملفوظی غیر مکتوبی قرار دنہ:
(1) کینژن لفظن منز آیہ اختیاری طور تشدید تصور کرنہ۔ مثلا شکر بنیوو شکّر، امید بنیوو امّید؛
(2) اضافت آیہ اختیاری طور مشدد کرنہ۔ مثلا رنگِ گل آو (رنگے گل) تہِ گنڈنہ؛
(3) بہ ، نہ بیترِ آیہ (بی) تہ (نا) تہِ گنڈنہ۔
یمو علاوہ آے کینہہ متحرک اچھراختیاری طور ساکن تہِ بناونہ۔
مثلاگفتمش(گف۔ت۔مش) آو گفتمش (گف۔تمش) میم ساکن بنٲوتھ تہِ، بگذرد (ب۔گ۔ز۔رد) آو بگذرد (بگ۔ ز۔ رد) گاف ساکن بنٲوتھ تہِ ، تہ عربی لفظ برکت (ب۔ر۔کت) آو برکت (بر۔کت) رے ساکن بنٲوتھ تہِ گنڈنہ۔
یتھے پاٹھۍ آیہ ساکن اچھر اختیاری طورمتحرک بناونہ۔
(1)مثلا( عشق و حسن) آو (عشقو حسن) قاف متحرک بنٲوتھ تہِ ،(2) نصر تہ رقم ہوۍ لفظ آیہ (فع۔ل) علاوہ (ف۔عو) صۅاد تہ قاف متحرک بنٲوتھ تہِ گنڈنہ۔

امہ فہرست تلہ ہیکہِ کانہہ تہِ اندازہ کٔرتھ زِ فارسی یس منز کٲژا تبدیلیہ تہ اختیارات آیہ پیدہ کرنہ تاکہ شعرن ہیکہِ صحیح تقطیع گژھتھ۔ اردو والٮو کرِ نہ زیادہ تبدیلییہ تکیازِ فارسی والٮو یم تبدیلیہ کرِ مژہ آسہ تم آیہ تمن بکار۔ امہِ علاوہ رودۍ تم فارسی عروضس زیادہ تراچھ ؤٹتھ تقلید کران۔ اردوس چھہِ اسۍ ساری واقف، لہذا یمو اسۍ سیوٚدے کاشرس کن واپس۔

کلاسیکل عربی زبانۍ منزٲسۍ نہ ہیجلہِ کس شروعس تہ ٲخرس پٮٹھ(ٲخرس پٮٹھ خال خال) مصمتن ہندۍ خوشہ cluster مگر کینژن زبانن منز مثلا فارسی یس منزٲسۍواریاہن لفظن اندرٲخرس پٮٹھ مصمتی خوشہ یوان۔ فیصلہ سپد یہ زِ دوٚیمس مصمتس پٮٹھ گژھہِ نیم فتحہ تصور کرنہ ین تاکہ مصمتہ گژھہِ تقطیع منز شامل۔ یمن لفظن ہندۍ دۅشوےٲخری مصمتہ ٲسۍ ساکن۔ عربی عروض مطابق ہٮکن نہ زہ ساکن حرف اکۍ سے جایہ جمع گژھتھ، لہذا آوٲخری مصمتہ متحرک بناونہ، محسوس یا تصور کرنہ۔اگر امہِ ٲخری مصمتہ پتہ مصوتہ یوان آسہِ یہ چھہ پانے متحرک بنان تہ اگر مصمتہ یوان آسہِ،یا مصرعس منز تھکھ cesura لگان آسہِ، یہ چھہ متحرک تصور کرنہ یوان ۔ کاشرس منز چھہِ لفظہ کس آغازس منزتہِ مصمتی خوشہ تہ امہِ خوشک گۅڈنیک مصمتہ چھہ عربی عروضی اصطلاحن منز ساکن اچھر۔ عربی زبانۍ تہ عروضس منز چھہ نہ لفظہ کس آغازس منز ساکن اچھر ینک کانہہ سوالے۔ تتہِ لگاوہن اتھ ہمزہ الوصل بتھہِ تہ خوشہ کرہن دۅن حصن منز تقسیم۔ مگر اسۍ ہٮکو نہ تہِ کٔرتھ، لہذا بنوو اسہِ غیرشعوری طور یہ اصول زِ دویو منزہ ییہ اکوے مصمتہ تقطیع اندر۔ یعنی یمو منزہ بنیوو دوٚیم اچھر مکتوبی غیر ملفوظی، حالانکہ صوتیات چہ وچھن ترایہ کنۍ چھہِ یم دۅشوے مکتوبی ملفوظی۔” کرٮکھ” لفظس منز چھٮہ گۅڈنکس ہیجلس منز وارہ کارہ (ک) تہ (ر) دۅشونی مصمتن ہنزہ آوازہ موجود۔یتھے پاٹھۍ” رنگ” لفظک نون تہِ آو مکتوبی غیر ملفوظی اچھر بناونہ، حالانکہ آواز چھٮہ اکس یا بییس حالتس منز موجود۔