غلام محمد نور محمد تاجران کتب

غلام محمد نور محمد تاجران کتب چھہ بڈِ انعامک مستحق زِ یمو رژھروو سون واریاہ کلام یُس زیادہ پہن چھکرتھ اوس۔ یمو چھوپ پرانین کیو نوین شاعرن ہند کلام لۅکٹین کتابچن ہندس صورتس منز۔ تہندوے کتابچو پیٹھہ نیہ پتہ لوکو شاعرن ہنزہ کلیاتہ تہ سۅمبرنہ بنٲوتھ تہ پنن ناو کھولہکھ بطور مرتب ۔ غلام محمد نور محمد سند نہ ناوے کُنہِ۔ یہ چھیہ نا افسوسچ کتھ۔ مون زِ کٲنسہِ آسہِ نہ ٲخرتس پیٹھ یقین مگر دنیاوی ذمہ داری تہِ چھنا کانہہ چیز۔ امۍ سندوے کتابچو پیٹھہ بنییہ اکیڈمی ہنز کلیات رسول میر، ہو بہو تمی بٲتہ ترتیبہ۔ صوفی شاعر (موتی لال ساقی) تہِ چھیہ اہندی بٲتھ پیش کران۔ مگر اوہند ناو نہ کنی۔

غلام محمد نور محمدن کتھہ پاٹھۍ کرۍ یم بٲتھ جمع، تتھ متعلق تہِ گوژھ کانہہ تحقیق سپدُن۔ یتھہ پاٹھۍ تہ تتھہ پاٹھۍ کٔرن جمع، تعریفن لایق چھہ زِ یہ ظۅن پیوس زِ یہ سرمایہ گژھہ رژھرتھ روزُن تہ لوکن تام واتُن۔ واریاہ حضراتن نش چھہ مسودن ہندس صورتس منز واریاہ کینہہ پرون کلام موجود مگر گاش تہِ چھس نہ دوان لگنہ۔

بۅنہ کنہِ چھہ اکہِ کتابچکۍ کینہہ صفحہ یُس امۍ ترقی پسند شاعرن ہند چھپوو یتھ منز دینا ناتھ نادم، شام لال در بہار، رحمن راہی، نور محمد روشن، غلام نبی عارض تہ پریم ناتھ پریم سند کلام شامل چھہ۔ از کل چھا کانہہ بک سیلر کانسہِ نوجوان سند کاشر کلام چھپاونہ خاطرہ تیار؟

NGp1

اردوس منز آو نہ غزل ترقی پسندن زیادہ بکار تکیازِ امکۍ مضمون ٲسۍ نہ عوامی بنیاد تھاوان، مگر کاشر وژن آو امہ رنگہ یمن سیٹھا بکار۔ یہ اوس یمن عوامس سیتۍ سیدِ سیود جوڑان۔ یتھ کتابچس منز تہِ وچھو تہۍ سٲری شاعر وژن ونان۔ حالانکہ پوتس پھیرۍ یم تہِ نظمہِ کن۔

NGp2

NGp3

NGp4

سیاہ رودہ جرین منز

rahi book
محمد یوسف ٹینگ چھہ رحمن راہی سنزِ کتابہِ ہندس اجراہس پیٹھ پننس مضمونس منز لفاظی اکتھ کن یم 10 نکتہ پیش کران:

(1) راہی اوس نوروز صبا کتابہِ منز اقبال تہ فیض ہوین اردو شاعرن ہندس اثرس تل آمت، نوِ شعرہ سۅمبرنہِ منز چھہ ایزواپاونڈ، فروغ فرخزاد، بیدل عظیم آبادی، ڈبلیو بی ییٹس تہ مرزا غالب نمودار سپدان۔

(2) یمن علاوہ چھہِ پننہِ زبانۍ ہندۍ معنوی ہم زلف لل دید، نندہ ریوش، حبہ خاتون تہ شمس فقیر اتھ کتابہِ منز ژھایہ گتۍ ماران۔

(3) نوِ کتابہِ ہنز شاعری چھیہ نہ بٲتھ بازی بلکہ لیکھمتہ پیٹھہ پرنچ تہ پرنچ، خلوتن منز پرنچ شاعری۔

(4) لل دید چھیہ کاشرِ شاعری ہندِ دویمہ ساسلہ کہ کاشرِ غزلک مطلع ونان تہ راہی چھہ امیک مقطع تحریر کران۔ سہ چھہ امہ علاوہ دویمہ ساسلہ چہ سخن سرایی ہند بہترین راش تہ چاش تریمہ ساسلہ کس سخن ورس تہ سخن فہمس برونہہ کنہِ تھاوان۔

(5) ٹینگ سندۍ کنۍ چھہ راہی نوِ ساسلیک مزازہ متعین کران تہ پیشن گویی چھہ کران زِ سہ ییہ تتھے پاٹھۍ پرنہ یتھہ پاٹھۍ لل دید پرنہ آے۔

(6) راہی سنزِ فن چہ تازہ نہجہ سیتۍ چھیہ کاشر سخن فہمی عام کاشرس نش دوریمژ، مگر پریتھ اہم زبانۍ منز چھہ elete اظہار تمہ زبانۍ ہنز توژھ تہ وس بنان۔

(7) راہی سنزِ شاعری منز چھہ واریاہ مصرعہ یمن ہنزہ صرژہ کاشرس شعرس عظمتک انعام عطا کران چھیہ۔

(8) راہی چھہ کاشریک زز لہجہ تہ رنیوومت ورتاو نوین خیالن موافق کرنہ خاطرہ زبان سازی کران۔

(9) امۍ سنزِ شاعری منز چھہِ لل دید، شمس فقیر تہ دیناناتھ نادم سندین پوت آلون ہندۍ نارہ بشتنگہ۔ مگر یمن سخن ورن ہنزہ صرژہ چھیہ وۅٹہ تلان تہ راہی سنزن صرژن منز چھہ سنبال تہ ٹھہراو۔

(10) سیاہ رودہ جرین کتابہِ گژھہِ کانہہ تھود انعامہ دنہ یُن۔ ونان چھہ گوژھس ترُن نوبل پرایز مگر پرواے چھہ نہ اکھ بوڈ انعامہ چھہ امۍ سندِ خاطرہ تیار۔
(پتہ تور اتھ سہ انعامہ)
یم نکتہ چھہِ امی ترتیبہ اتھ مقالس منز چکاونہ آمتۍ۔ یمن نکتن پیٹھ چھیہ کتھ کرنچ ضرورت۔ فی الحال چھہ سوال تۅہہ کژن نکتن سیتۍ چھہ اتفاق تہ کژن سیتۍ اختلاف، کنہ تہۍ چھو نہ یمن کتھن سنانے؟

کاشر رسالہ واد (قسط 8) : شفیع شوق

shauq-Yaad
وادس منز چھپیہ شفیع شوق سندۍ کل تریہ غزل۔ اکھ شمارہ 2 تہ زہ شمارہ 11 ہس منز۔ یم تریشوے غزل چھہِ شوق سنزِ شعرہ سۅمبرنہِ ‘یاد آسمانن ہنز’ منز پوتس شامل کرنہ آمتۍ مگر اکثر شعر چھہِ دوبارہ لیکھتھ بہتر بناونہ آمتۍ ۔ اکثر چھہِ خیال تمے البتہ چھہِ زبان تہ پیکر زیادہ موافق تہ اثردار بناونہ آمتۍ۔

شوق سند غزل اوس وقتہ کہ جبرہ کس نتیجس منز فرد سنزِ بے چارگی رنگہ رنگہ پیش کران۔ یہ بے چارگی چھیہ کنہِ کنہِ خۅد فریبی ہنز شکل تہِ رٹان تہ طنز تہِ چھہ بارسس یوان۔ امۍ سندس غزلس منز چھیہ زیادہ ٹھوس تہ جسمانی لفظ، پیکر تہ استعارہ ورتٲوتھ اکھ الگ وتھ کڈنچ کوشش۔ امس چھہ شعر ظاہری ہیژ علاوہ مضمونو رنگۍ تہِ ازۍ کین فکری تقاضن ہم آہنگ بناونک شوق۔ یہ چھہ پامال مضمونن نشہ پنن غزل شعوری طور دور رٹان۔

واریاہن شاعرن برعکس چھہ نہ شوق سند غزل رسالس منز راوان، بلکہ چھہ یہ یکدم پانس کن متوجہ کران۔ کینہہ شعر:

موسم ڈٔلتھ تہِ کل چھیہ خیالس بہ کیا ونس
خوشبو لبُن یژھاں چھہ گلابس بہ کیا ونس

ڈج وڈرِ پتھ یہ ڈولۍ تہ ڈلۍ نظرِ تاپہ پرنگ
یتھ جایہ تیۍ کہرۍ میہ ونیم وس بہ کیا ونس

پشرن میہ پرانۍ بانہ ڈۅکرۍ وس دوپن ژہ گر
ہیوکمے نہ دِتھ گرتھ میہ موادس بہ کیا ونس

شہرس اگر سرحد چھہ کڈاں کاڈ ژۅاپارۍ
پریتھ کانسہِ پنن حلقہ ژمان کیازِ چھہ باسان

یُس یوت کراں جشنہ زِ آزاد چھہ آدم
سے تیوت مگر پانہ پھسان کیازِ چھہ باسان

خوفہ ہتۍ ٲسۍ اکھ اکس لٲرتھ
اتحادک کمال ہاواں ٲسۍ

از بہ وچھتھس شنلۍ سِرن ہند وٹھ
زیرِ پھۅلہو تہ وۅندہ باواں ٲسۍ

پکان دورِ فلک

memory
زندگی منز اگر میہ کنہِ چیزک افسوس چھہ، سہ چھہ میہ پننہِ یاداشتک۔ میون یاداشت چھہ ہمیشہ پیٹھہ کمزور تہ ژلہ ون رودمت۔ پننۍ یہے کمزوری مدنظر وون میہ فیاض دلبرس، یمس زبردست یاداشت چھہ بصری تہِ تہ لسانی تہِ، زِ تس پزن دوستن تہ واقعاتن متعلق پننۍ یاداشت رژھراونۍ یمن ہند سہ اکثر ذکر کران اوس۔ شروعات گیہ شورا بشیر سندِ پیٹھہ۔ اچھا فیاضن یاداشت چھہ کمال، پیٹھہ چھہ سہ تیتھ کتھہ گور تہِ یُس اکثر تھیکان تہِ چھہ تہ مبالغہ تہِ چھہ کران۔ کتھن مزہ کھالنہ مۅکھہ اگر ٹر تہِ وننۍ پینس، واے برِ نہ۔ سہ چھہ پننہِ یاداشت کس وفورس انزۍ منزۍ گژھتھ وۅٹہ تہِ تلان تہ زیوِ تہِ ٹاس کڈان۔ سہ چھہ اتھ پیٹھ پننۍ مخصوص چھاپ تراوُن یژھان۔

فیاضنۍ یہ خوبی ژینۍ میہ گوڈنچہ لٹہِ تمن ملاقاتن منز یم سرینگر کافی ہاوسس منز الغٲبہ سپدان آسہ۔ مگر تمن دۅہن اوس نہ میہ یاداشت چہ اہمیژ ہند یوتاہ ظۅن۔ ملاقاتہ روزہ دلہِ منز تہِ کم کم مگر جاری تہ یور امریکہ یِتھ گوو فون کہ ذریعہ فیاض نہِ امہ خوبی ہند زیادہ احساس تکیازِ وۅنۍ اوس فیاض نظرن دور تہ صرف اوس فونس پیٹھ امۍ سند یاداشت بولہ کران۔

ادب چھیہ تژھ اکھ انسانی کارگزاری یمیک تھر تہِ یاداشت چھہ تہ نانک تہِ یاداشت۔ یہ چھہ یاداشتے یُس فن پارہ تخلیق کران چھہ تہ امیک فہم تہِ عطا کران چھہ۔ یمن درمیان یۅس لسانی ہیت چھیہ سۅ تہِ چھیہ یاداشت کس زور پیٹھے قایم تہ دایم۔ یاداشت، ادراک تہ تخیل یودوے تریہ الگ ذہنی عمل چھہِ، مگر ادبس منز چھِہ یم تریشوے اکھ اکۍ سند اتھہ رٹتھ فن پارچ قوت ہرراوان۔۔ یاداشت ورٲے نہ ہیکہِ سانۍ شخصیت بٔنتھ نہ تواریخ تہ نہ وقتک تسلسل۔ ادبچ چھیہ نہ کتھے۔

(پکان دورِ فلک، اکھ اقتباس)

عروضی سانچہ تہ غیر زحافی تنوع

مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن (مضارع)
مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن (ہزج)

عروضی وزن چھہ نہ زبانۍ ہند آہنگ بلکہ آہنگک اکھ مخصوص سانچہ۔ زبانۍ ہند آہنگ سیتۍ سیتۍ پکناونہ خاطرہ چھیہ یمن سانچن ہنزہ مختلف صورژہ مختلف زبانن منز مستعمل یا رایج۔ مثلا مضارعک یہ وزن چھہ فارسی یس منز ہزج کس وزنس مقابلہ یسلہ پاٹھۍ ورتاونہ آمت، کاشرس منز چھہ امیک الٹ۔ کُنہِ تہِ سانچس پیٹھ ہیکہِ کانہہ تہِ شاعر مشقہِ سیتۍ شعر ؤنتھ۔ ناممکن چھہ نہ کینہہ۔ یہ تہِ چھہ پوز زِ اکس شاعرس چھہ اکھ وزن ورتاونس زیادہ پہن وار یوان تہ بییس بیاکھ۔ مگر شاعر سنز یہ مشق تہ مہارت چھیہ نہ لازمی طور کُنہِ سانچہ کہ زبانۍ ہندس آہنگس سیتۍ ہم آہنگ آسنچ دلیل۔

کاشرس منز آو عروض محمود گامی سندِ وقتہ فارسی پیٹھے۔ فارسی والیو چھہ عروض نسبتا نرمی سان ورتوومت۔ یۅہے وجہ چھہ زِ سانۍ کاشرۍ شاعر تہِ رودۍ مہجورس تام امہِ عروض کس ورتاوس منز نرمی ورتاوان۔ ینہ پیٹھہ اسہِ اردوس سیتۍ تعلق سپد، اسہِ تہِ ہیژ عروضس متعلق سۅے شٹھگی ورتاونۍ یۅس اردو والین نالۍ چھیہ گمژ۔

پیٹھمہِ زہ کتھہ ذہنس منز تھٲوتھ پکو اسۍ اصل مسلس کن۔ میہ ووت واریاہ کال ونان زِ پیٹھم زہ وزن اگرچہ دۅن مختلف بحرن سیتۍ تعلق تھاوان چھہِ (مضارع تہ ہزج) مگر زحافہ لگۍ لگۍ چھہ یم دۅشوے اکھ اکس سیٹھا نزدیک آمتۍ، یوت زہ اکھ مصرعہ اگر اکس منز آسہِ تہ بیاکھ بییس منز ، آہنگس منز چھہ تنوعک احساس گژھان مگر مجروح گژھنک باس چھہ نہ لگان۔ نزدیک آسنہ کنۍ چھہِ اکثر شاعرن یمن منز گڑبڑ گژھان اگر تم رژھ کھنڈ تہِ غفلت ورتاون۔ یہندس گڑبڑس ونہ نہ بہ شعر پھٹن، البتہ ونہ بہ اتھ تنوع تہ یمہ کنۍ یہ مستحسن تہِ ہیکہِ ٲستھ۔ شعر پھٹن گوو ییلہ وزن مجروح گژھہِ ۔ اکھ مصرعہ اگر اکس وزنس منز آسہِ تہ بیاکھ بییس منز (بشرطیکہ تم آسن نزدیکی آہنگ) تتھ ونو نہ شعر پھٹن۔ امین کاملن چھہ اکھ غزل وونمت۔ مقطع چھس:
نالہ دتۍ رملن سریعن جامہ ژٹۍ
کاملنۍ وٲراگہ بیانی تہ اسۍ

اتھ غزلس منز چھہِ تمۍ دۅن بحرن (رمل تہ سریع) ہندۍ رکن فاعلاتن تہ مفتعلن رل کٔرتھ ورتاوۍ متۍ۔ کُنہ جایہ چھہ اکھ ورتاوان تہ کنہِ جایہ بیاکھ۔ اگر نہ کانہہ اتھ تقطیع کرنہِ بیہیہ، غزلک آہنگ چھہ نہ امہ قسمچ کانہہ ژینون دوان۔ دراصل چھہ کاملن ژیونمت زِ کاشرس منز چھیہ نہ ژھوٹ ماترا بدلہ زیٹھ ماترا ورتاونہ سیتۍ کانہہ بدآہنگی گژھان۔ یہ غزل چھہ تمیک ثبوت۔ وچھو کینہہ شعر:
بابہ آدم سۅرگہ سیلانی تہ اسۍ
پوشہ وُن اکھ عالما فانی تہ اسۍ
کیفہ نونک آولنۍ گردش تہ ہو
آنگنس پھوجمژ یہ ویرانی تہ اسۍ
سمیہ ٹھہراوک یہ ہندر آسماں
بتلہِ فضاہچ یہ روانی تہ اسۍ
سانۍ پروازن ستارن ہیوت خراج
واجہ ورٲیی سلیمانی تہ اسۍ
سون ازلی کھاتہ کمۍ مژروو وچھ
چون جمع خرچ زبانی تہ اسۍ

غزل پرتھ چھہ نہ آہنگ کہ مجروح گژھنک کانہہ باس لگان، حالانکہ اتھ منز چھہ زبردست تنوع۔ اتی چھہ 19 ماترا مصرعس منز تہ اتی چھیہ 18 حتی کہ 17 ماترا مۅژان۔ ماترا کم گژھنہ سیتۍ یا ہرنہ سیتۍ چھہ آہنگ مجروح گژھنک خدشہ روزان۔ مگر یہ غزل پٔرتھ چھا کُنہِ جایہ مصرعن ہنز روانی متاثر گژھان؟ اگر چھیہ نہ گژھان اسۍ کیازِ یم آزادی ورتاونس کھوژان؟ یژھہ آزادی چھیہ مختلف وزنن منز زحافن ہندِ بہانہ روا تھاونہ آمژہ۔ فاعلاتن (7 ماترا) ییلہ کینژن وزنن منز فعلاتن (بہ تحریک عین، 6 ماترا) ہیکہِ گژھتھ، فاعلاتن (7 ماترا) کیازِ ہیکہِ نہ مفتعلن (6 ماترا) گژھتھ؟ عروضی کتابہ تھاوۍ توکھ طاقچن پیٹھ۔

اسۍ ییلہ اکس وزنس منز فعلن فعلن (ماترا 22 22 = 8) چہ جایہ فعل فعولن (ماترا 12 221 = 8) کٔرتھ ہیکو، فاعلات (ماترا 1212 = 6) کیازِ ہیکہِ نہ مفاعیل (ماترا 1221= 6) بٔنتھ؟ عروضی کتابہ تھاوۍ توکھ ونہِ تہِ طاقچن پیٹھے۔

اسۍ چھہِ افاعیلن ہنزن شکلن سنان تتھ آہنگس نہ یمچ یم نمایندگی کران چھہ‏۔

مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن (مضارع)
مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن (ہزج)

یم فارسی وزن کیا چھہِ؟ ژکہ ماترا وزن، فرق چھیہ یہ زِ یمن منز چھیہ ماتراہن ہنز اکھ مخصوص ترتیب یۅس اہم چھیہ۔ وۅنۍ وچھو اسۍ یمن دۅن وزنن ہنزہ ماترا تاکہ افاعیلی شکلو بجایہ ییہ آہنگ برونہہ کن۔

122 1212 1221 212 (مضارع)
122 1221 1221 221 (ہزج)

دۅشونی وزنن منز چھہ ماتراہن ہند تعداد برابر یعنی 22 ماترا۔ دۅشونی وزنن ہند گۅڈنیک تہ تریم پود چھہ ہیوے۔ دویمس پدس منز چھہ ماترا تعداد برابر مگر ییتہِ اکس وزنس منز ماترا ہند ترتیب 1212 چھہ بییس منز چھہ 1221۔ یہ چھیہ ٹاکارہ فرق۔ مگر اگر اتھ تہِ وارہ پاٹھۍ سنو، امہ پدیک دویم حصہ چھہ ہوے: 12 (زہ تہ اکھ ماترا) ۔ فرق چھیہ گۅڈنکس حصس منز 12 چھہ 21 گژھان یعنی الٹ۔ وزنہ کس ورتاوس منز یہ انحراف چھا آہنگس متاثر کران؟ کنہ امہ سیتۍ چھہ تنوع پیدہ گژھان، سے تنوع یُس مختلف زحافات ورتاونہ سیتۍ پیدہ کرنہ یوان چھہ۔

وۅنۍ چھہ سوال ژورمہِ پدیک ۔ فاعلن/فعولن۔ وزنن منز کتھ ہوس پدس منز چھہِ زیادہ زحافہ تبدیلی واقع سپدان؟ ٲخری رکنس منز! کیازِ؟ تکیازِ اوت تام چھہ امہ برونہہ ینہ والین پدین منز آہنگ قایم آسان گومت تہ امہ ٲخری پدِ چہ تبدیلی سیتۍ چھہ آہنگ متنوع گژھان مگر خلل چھہ نہ پیوان۔ اگر فاعلن (212 = 5 ماترا) بدلہ فعولن (221 = 5 ماترا) ییہِ کانہہ بد آہنگی گژھہِ نہ۔

یہ گژھہِ نہ مشراون زِ عروضی سانچہ چھہ نہ اہم بلکہ سہ آہنگ یُس امہ سانچہ سیتۍ اسۍ شعرن منز پیدہ کران چھہِ۔ تتھ آہنگس منز اگر کانہہ تنوع یا تغیر پیدہ کرنہ ییہ سہ گژھہِ مستحسن زاننہ یُن۔

ٲخرس پیٹھ امہ مشاعرہ منزہ کم شعر آیہ میہ زیادہ پسند:

ّپھہہ وول واو آسہِ تہ قمرس تہِ پھورِ بولۍ
تاپس تہِ واپھ دیہ نہ اجازت تہ سوسنان

یتھ رٲژ ستھ چھیہ سانۍ یہاے ژانگۍ کرامات
کر تاپھ تراوِ زاپھ تہ کر ویگلہِ زمستان
مظفر عازم

برونہہ اوس بولبوش کراں لنجہ لنجہ پیٹھ
ازکل چھہ زیادہ نخل سکوتس تلے بیہان
رفیق راز

بعضے گناں گمانہ زِ کشکول چھم بدن
بعضے یہ خاکدان چھہ اسمانہ ہیور کھسان

شہزادہ گوو قتل تہ پری آسمان کھژ
رودے نہ کینہہ تہ کیازِ نہ وۅکلاں یہ داستان
شہناز رشید

خۅشبویہ کاروان یتین اوس خیمہ دتھ
تتھ جایہ نے چھہ پوش نہ بلبل نہ باغوان

لازم چھیہ تژھ پیپاس جگر آسہِ نارہ کھل
صحراوہ ناگہ راد یتھے چھا کھۅرو وزان
نذیر آزاد

زانہہ راتھ کھنڈ گزار یمن کھنڈرن اندر
ہاوے پنن وجارہ گومت خوابہ کاروان
نگہت صاحبہ

دزۍ دزۍ چھہ کُنہِ ژھیوان تہ ژھیوۍ ژھیوۍ چھہ کنہِ دزان
کتھ واوہ ہالہِ دل چھہ پننۍ گاشہ لے رچھان
الیاس آزاد

الیاس نش شعرس کٔر میہ رژھ کھنڈ تبدیلی معذرتہ سان۔

اچھا وچھو مضارع مثمن اخرب مکفوف محذوفس کتھہ پاٹھۍ چھہ سنطور واینہ یوان۔ یہ بوزان بوزان گژھہِ ہزج مثمن مکفوف محذوف تہ ذہنس منز انن!

کاشر املا: چلینج تہ امکانات

رسم خطس تہ املاہس درمیان چھہ نہ اکثر  لوکھ بلکہ سانۍ زبان دان تہِ فرق کران۔ رسم خط چھہ زبان لیکھنہ کس نظامس ونان۔ مثلا سون رسم خط چھہ تقریبا سے نظام ورتاوان یُس عربی، فارسی تہ اردو زبانہ ورتاوان چھیہ۔ املا  گوو کُنہِ رسم خطس منز  لفظ لیکھنک دستور، یعنی  اچھرن ہندِ ذریعہ زبانۍ ہندین لفظن ہنز بناوٹ۔  میون یہ مختصر مضمون چھہ نہ رسم خطس[1] بلکہ املاہس متعلق، کاشرس  املاہس متعلق۔

 کاشرس املاہس منز  زمانی سوتھرس پیٹھ ییژہ لگاتار تبدیلیہ تہ انفرادی سطحس پیٹھ بدنظمی ہندس حدس تام یوت تنوع میلان چھہ، سہ چھہ  نہ لیکھہ پرِ لحاظہ معیاری زبانن منز ممکن۔ وجہ چھہ یہ زِ  املاہس چھہ  تعلیمی نظامک مسلسل ورتاو استقامت تہ پایداری بخشان، یُس سانہِ زبانۍ نصیبس اوس نہ۔ ینہ پیٹھہ یہ غلط خیال عام گوٚو زِ لفظ گژھہِ تلفظ مطابق لیکھنہ یُن، دۅن ادیبن ہند املا چھہ نہ پانوانۍ رلان، بحیثیت اکھ ادارہ، اکیڈمی ہنزن اشاعتن منز تہِ چھہ املاہک حدہ کھۅتہ زیادہ انتشار۔ یہ تہِ چھیہ حقیقت زِ سون املا رود تنہ پیٹھہ  واریاہ کینہہ کاتبن ہندس رحم و کرمس پیٹھ۔ مگر  وونۍ چھہ وق زِ اسۍ کرو املاہس پیٹھ نٔوس ماحولس اندر  نوِ سرہ غور۔ امہ نوِ ماحولک ذکر کرہ بہ یتھہ پاٹھۍ۔

Orthography

اکھ وقت اوس خلق ٲسۍ مسودہ لیکھان تہ تمے رژھران تہ بٲگران۔ پرنٹنگ پریسس آو۔ تہ اتھۍ سیتی آو لیتھو پریس تہ کاشرس منز تہِ گیہ زرد مسطرن پیٹھ  کتابت شروع۔ یہ دور رود 1980 تام جاری ییلہ آفسیٹ پریس عام گوو تہ کٲتبو ہیوت کریہنہ میلہِ سیتۍ لیکھن۔ یہ دور تہِ رود داہ پنداہ ؤری، ییلہ زبان لیکھنہ کس سلسلس منز کمپیوٹرک ورتاو عام ہیوتن گژھن۔ ان پیج آو کاشر فانٹ ہیتھ بارسس تہ کٲتبو ہیوت  امیک استعمال کرُن۔ اتھۍ اثناہس منز گوو کمپیوٹر علاوہ انٹرنیٹ عام۔ کتابہ کمپوز کرنس اوس ان پیج بکار یوان مگر انٹرنیٹکۍ  تقاضہ ہیکہ ہن نہ ان پیج سیتۍ پورہ گژھتھ۔[2] ان پیج چھہ بند تلاو۔ انٹرنیٹن کھولۍ کاشرِ زبانۍ ہنزِ خواندگی ہندۍ نوۍ امکانات۔ نہ صرف یہ زِ زیادہ کھوتہ زیادہ لوکن میلہ پننہ فرصتہ تہ استعدادہ موجب  کاشر  پرنک موقع، بلکہ گژھہِ کاشر ادب تہِ عام پاٹھۍ دستیاب۔ امہ علاوہ ہیکن کاشرس منز تہِ ترقی یافتہ زبانن ہندۍ پاٹھۍ مایکروسافٹ ورڈ تہ باقی طرزکۍ  ڈاکیومینٹ بٔنتھ۔ یم اسۍ مختلف پلیٹ فارمن پیٹھ ورتٲوتھ ہیکو۔ یمن امکاناتن کُن گوو مظفر عازم صٲبس ظۅن۔ تمو کرۍ ونیک تام تریہ فانٹ تیار تہ تمن سیتۍ  اکھ مخصوص کیبورڈ تہِ۔ اسۍ ہیکوکھ  یم فانٹ اردو کیبورڈ سیتۍ تہِ ورتٲوتھ۔ یہ مضمون چھس بہ مایکروسافٹ ورڈس منز مظفر عازم صٲبن گلمرگ فانٹ ورتٲوتھ  اردو کیبورڈ کی مدتہ براہ راست ٹایپ کران۔ اتھ نٔوس ماحولس منز کیا چھہِ کاشرِ املاہکۍ  مشکلات تہ امکانات؟

 

املا کہ تعلقہ امکانات

امکاناتن منز چھیہ اکھ بٔڈ کتھ یہ زِ  کاشر پرنکۍ تہ لیکھنکۍ زیادہ کھۅتہ زیادہ موقع سپدن زیادہ کھۅتہ زیادہ لوکن انٹرنیٹ کہ بدولتہ حاصل۔کاشر یوت زیادہ لیکھنہ پرنہ ییہ تیوت ہُرِ املاکہ ہشرک امکان۔ تیوت گژھہ املاچہ معیاربندی کُن زبان ورتاون والٮن ہند توجہ۔ کاشر لیکھُن روزِ نہ صرف کٲتبن تام محدود، یمن مضمون نویسن ہندِ املاچہ خامی درست کرنک ٹھیکہ اوس، بلکہ پریتھ شخص لیکھہ کاشر پننہ اتھہ مایکروسافٹ ورڈس منز، انٹرنیٹس پیٹھ یا باقی ایپلکیشنن منز۔ امکاناتن منز چھیہ یہ کتھ تہِ شامل زِ مختلف پلیٹ فارمن پیٹھ  گژھہِ اسہِ کاشر پرنک عادت۔ یوت یوت اسۍ کاشر پرو تیوت ہُرِ پرنچ روٲنی۔ تہ یتھ خیالس لگہِ پانے پھیش زِ زبان چھیہ ہیجہ کٔرتھ پرنہ یوان۔ میہ ووت وۅنۍ واریاہ کال ونان زِ فونِکس (ہیجہ کٔرتھ لفظ پرنۍ) چھیہ لفظ پرنچ ابتدایی مشق۔ شرۍ چھہِ دویمہِ جمٲژ تامے تمہِ مشقہِ نیبر نیرتھ بصری طور لفظ پران۔ لفظن ہنز ہ صوری شکلہ چھیہ سٲنس ذہنس منز منتقل سپدان یمن ہنز اسۍ تحریر پرنہ وزِ پہچان کران چھہِ[3]۔ امی وجہہ کنۍ ییلہ اسہِ برونہہ کن تیتھ کانہہ لفظ یوان چھہ یُس نہ اسہ امہ برونہہ وچھمت آسہِ، اسۍ چھہِ ہیجہ کرنچ کوشش کران۔ مگر ہیجہ چھیہ نہ ہمیشہ مدد کران، تکیازہ کانہہ تہِ تحریر چھہ نہ فونیٹک۔ تہِ چھہ نہ ممکنے۔ مثلا اسہِ سارنے چھہ انگریزی تگان پرُن، مگر اسہِ برونہہ کن ییلہ rendezvous ہیو لفظ ییہ اگر نہ یہ امہ برونہہ وچھمت آسہِ، اسۍ کیا پرو اتھ؟  لہذا چھیہ امکاناتن منز یہ کتھ  تہِ شامل زِ اسۍ ہیکو کاشرِ زبانۍ ہندس تحریر تہ خواندگی ہندس نٔوس ماحولس منز یہ زبان بصری طور پرنچ استعداد  ہُررٲوتھ۔

 

املا کہ تعلقہ چلینج

موجودہ املاہچ اکھ بارہ کمزوری چھیہ یہ زِ اتھ منز چھیہ نہ لفظس کانہہ معیاری شکل۔ اکے لفظ چھہ نہ صرف دۅیو بلکہ دۅیہ کھۅتہ زیادہ طریقو لیکھنہ یوان۔ پریتھ شخص، تہ پریتھ علاقہ چھہ پننہِ پھورہ مطابق لفظ لیکھان تہ تمچ شکل مقرر کران۔ حالانکہ تحریرک مقصد چھہ نہ یتے یوت زِ اکھ باشہِ زبان ییہِ اچھرن ہندِ ذریعہ ظاہر کرنہ، ہو بہو نمایندگی چھیہ نہ ممکنے، بلکہ چھہ تحریرک  مقصد یہ تہِ زِ زبانۍ اندر تہ زبانۍ ہندین لفظن اندر ییہ اکھ معیار مقرر کرنہ ، یمہِ کنۍ لیکھُن پرُن آسان تہ یکسان اوت نہ بلکہ ممکن تہِ سپدِ۔مگر کاشراملا تجویز کرن والیو بزرگو چھہ نہ امہِ کتھہ ہند خیال تھوومت۔ نہ چھہ تنہ پیٹھہ از تام کٲنسہِ زبان دانن، ادیبن یا ادارن امہِ خاطرہ کانہہ قدم تلمت۔ بلکہ سپز لفظ پننہِ پننہِ طریقہ لیکھنچ نہج عام، یمہِ کنۍ تحریرس منز ونکین معیارہ رنگۍ سیٹھا کھُر نظرِ گژھان چھہ۔

املاہس منز چھہِ نہ مصمتن ہند زیادہ مسلہ۔ یمن ہند مسلہ چھہ زیادہ کھۅتہ زیادہ عربی ، فارسی تہ اردو پیٹھہ آمتٮن لفظن سیتۍ تعلق تھاوان۔ حالانکہ یہ گوٚژھ نہ کانہہ مسلے آسن تکیازِ رسم خط مشترک آسنہ کنۍ ہیکہ املا تہِ مشترک ٲستھ۔ ث، ح، خ، ص، ض، ط، ظ، ع، غ، ف، ق  مصمتہ لفظن منز رژھرٲوتھ تمن ہنز صرفی شکل قٲیم تھاونہ سیتۍ چھہ نہ کانہہ مسلہ درپیش۔ تعلیم، تعبیر، تعویذہ، تعمیر ہوۍ لفظ تٲلیم، تٲبیر، تٲویذہ، تٲمیر لیکھنچ چھیہ نہ کانہہ مجبوری۔خر ہیکون نہ اسۍ کھر، حل ہیکون نہ اسۍ ہل، فٲتر ہیکون نہ اسۍ پھٲتر، کاغذ ہیکون نہ اسۍ کاکذ لیکھتھ۔یمن لفظن ہنزہ  صرفی شکلہ ڈٲلتھ چھہِ اسۍ تتھ خواندگی پھیش دوان یۅس اسہِ اردو زبانۍ کنۍ  گۅڈے حاصل چھیہ۔ عربی، فارسی لفظن ہندۍ مصمتہ ڈٲلتھ (یہ عمل چھیہ پتمین دہن پنداہن ؤرین سیٹھا کم گمژ ) یا یمن ہندۍ مصوتہ بدلٲوتھ نتہ ہُررٲوتھ (یہ عمل چھیہ ونہِ جاری) چھہِ اسۍ یمن لفظن ہنز پہچان مشکل بناوان یمہ کنۍ یمن ہنز پرنچ روٲنی ولٹہ پاٹھۍ متاثر گژھان چھیہ۔ یہ اسہِ اردو کنۍ ویود چھہ تتھ پھیش دیُن چھیہ نہ کانہہ دانٲیی۔امہ علاوہ یوتاہ تحریر اعرابو کنۍ مصروف آسہِ، تیوتاہ ییہ پرنس منز دقت۔

یُس رسم خط اسۍ ورتاوان چھہِ اتھ منز چھہِ نہ ژھوٹۍ مصوتہ لیکھنک رواج۔ یمو زبانو پیٹھہ اسہِ یہ اون تمن منز چھہِ صرف تریہ ژھوٹۍ مصوتہ ۔۔ زبر، زیر تہ پیش۔ مگر کاشرِ زبانۍ ہندین ژھوٚٹین مصوتن ہند تعداد چھہ زیادہ۔ لفظن درمیان امتیازی فرق کرنہ خاطرہ بناوۍ اسہِ یمن ژھوٚٹین مصوتن ہندۍ اعراب مستقل تہ لازمی۔  مزید سپد یہ زِ اتھ رسم خطس منز ٲسۍ زیٹھین مصوتن ہندِ خاطرہ اعرابو بدل اچھر ورتاونہ یوان، مگر اسہ کرۍ زیٹھین مصوتن ہندِ خاطرہ تہِ اعرابے تجویز، یمہ کنۍ اعرابن ہند فہرست سانہ خاطرہ زیٹھیوو۔ تاہم ییلہ اسۍ تحریرن پیٹھ اکھ تنقیدی نظر تراوو، اعرابن ہند 80 فی صد ورتاو چھہ غیر ضروری باسان۔ یمے غیرضروری اعراب چھہِ عام لوکن منز کاشر پرنچ ہمت پھٹراوان،  لفظن ہنز پہچان  تہ پرنچ روٲنی متاثر کران۔ کمپیوٹر کہ استعمالہ کنۍ چھہ یمن اعرابن ہندِ خاطرہ” کی سٹروکن” ہند تعداد یوتاہ ہُران زِ کاشر ٹایپ کرنک سون تجربہ چھہ گراں بار سپدان۔ غیر ضروری اعرابن ہنزہ مثالہ چھیہ پیش۔

اکھ  اقتباس چھہ محمد یوسف ٹینگ صٲبن تحریر،  بیاکھ رحمن راہی صٲبن  تہ بیاکھ کامل صٲبن ۔ اکھ چھہ کنوہشتھ ستتھس دوران لیکھنہ آمت، بیاکھ چھہ کنوہشتھ نمنم تھس دوران، تہ بیاکھ پتمین دۅن ؤرین منز۔ یعنی کاشرِ املاہک یس حال تیلہِ اوس سہ چھہ از تہِ۔

p1

اتھ عبارژ منز چھہِ78 لفظن تلہ تہ پیٹھہ 106 اعراب تراونہ آمتۍ۔ پانے کٔرو اندازہ ، ارستتھ لفظ پرنہ خاطرہ چھیہ اسہِ تمن اعرابن ہنزہ تقریبا ڈۅڈ گنہ رزہ گنڈنہِ پیوان۔ امہ پتہ پنژہہِ وہرۍ لیکھنہ آمتس بنمس اقتباسس منز چھہِ 59 لفظ مگر 79 اعراب چِھکھ پیٹھہ تہ تلہ تراونہ آمتۍ۔

p2

حال حالے لیکھمتس بنمس اقتباسس منز 55 ہن لفظن منز 58 اعراب ورتاونہ آمتۍ۔

p3

 یم ترشوے اقتباس چھہِ اعرابن ہندِ فضول ورتاوچہ مثالہ پیش کران۔گۅڈنکۍ زہ زیادہ تہ ٲخری کم۔ وۅنۍ پریوکھ یم اقتباس کم کھۅتہ کم اعرابو سان۔ 

یمہ برونہہ یم تریہ جلد چھاپ کرنہ آمتۍ چھہِ تمن منز چھہِ الہ پلہ 19200 لفظ تہ تہندۍ معنی بیترِ درج۔ یتھ ژورمس جلدس منز چھہِ "ڑ” اچھرہ پیٹھہ "غ” اچھرس تام 2975 لفظ تہ محاورہ بیترِ سۅمبراونہ آمتۍ تہ یتھہ پاٹھۍ چھہِ ونس تام ڈکشنری ہندین ژۅن جلدن منز تقریبا 26175 لفظ بیترِ تہ تہندۍ معنی درج کرنہ آمتۍ۔ میہ چھیہ وۅمید زِ باقی اچھر یِن وۅنۍ اکس جلدس منزجمع کرنہ تہ شاید ما آسہِ سے کاشرِڈکشنری ہند ٲخری حصہ۔

 اسہِ کرۍ 106 بجایہ صرف کاہ(11) اعراب استعمال تم تہِ امہ مۅکھہ زِ اسہِ چھہ وۅنۍ اعراب لگٲوتھ عبارت پرنک تیوت عادت گومت زِ ساری اعراب یکدم تھود تلنۍ باسہِ عجیبے ہیو۔ نتہ زن چھیہ نہ یمن ہنزتہِ ضرورتھے۔ وچھون وۅنۍ بیاکھ عبارت کم اعرابو سان۔

سۅمبرنہِ منز چھیہ غزلو تہ متفرقہ ژمصراے کیو مفرد شعرو علاوہ ژورِ قسمہ نظمہ شامل: پابند، بے قافیہ، نیم آزاد۔ وزن چھہ مقداری تہِ ورتاونہ آمت تہ غیر مقداری تہِ۔ بیانہ کیوکلہم تہ ضمنی تقاضو مطابق تہ لہجہ چہ کھسہ وسہ کیو رفتارہ موافق چھہ ریوایتی عروضہ نشہ انحراف تہِ سپدمت، تاہم چھیہ نہ کانہہ تہِ نظم خالص نثری۔

یتھ اقتباسس منز آے وۅنۍ 79 بجایہ صرف شیہ (6) اعراب ورتاونہ۔وچھو وۅنۍ تریم اقتباس کم اعرابو سان:

” میہ اوس کالجس منز گۅڈنچہ لٹہِ کلاس روٹمت۔ کتاب ٲسم اتھس کیتھ زِ اتھۍ منز باسیوم کُس تام لڑکہ ژول ژھپھ کٔرتھ کلاسہ منزہ۔ میہ  پرژھ لڑکن یہ کُس ژول۔ اتہِ دیت نہ کٲنسہِ تہِ جواب۔ دویمہ دۅہہ ژول یہ بییہِ رٲسہ پاٹھۍ۔ ژھاے گراے وچھمس تہ زونُم یہ چھہ شیخ صٲبن لڑکہ فاروق عبداللہ۔” 

یتھ اقتباسس منز ورتٲو اسہِ 58 ہو بجایہ صرف (18) اعراب۔ ترشونی اقتباسن منز وچھوہ تۅہہ زِاعرابن ہند استعمال کوتاہ فضول چھہ، خاص کر یمن ہوین لفظن منز: لفظ (لَفٕظ)، منز (مَنٛز)،درج (دَرٕج)، ڈکشنری (ڈِکشَنٔری) ، جمع (جَمع)، غزلو (غَزلَو)، متفرقہ (مُتفِرقہٕ)، وزن (وَزَن)، انحراف (اِنحراف)، سپدمت (سَپُدمُت)، لڑکن (لٔڑکن)،  بیترِ۔لفظ اعرابو روٚس لیکھنچ حکمت چھیہ ننۍ۔ اکھ یہ زِاعرابن ہندۍ کنڈۍ چھہِ نہ اچھن سنان تہ نظر چھیہ نہ اعرابن ہندس گاسلاتس منز راوان۔سطرن درمیان یس جاے پرنچہ آسانی خاطرہ تراونہ یوان چھٮہ، سۅ چھیہ نہ پیٹھمہ لٲنہِ ہندیو بنمیو تہ بنمہ لٲنہِ ہندیو پیٹھمیو اعرابو ستۍ برنہ یوان۔ ترٮن پیراگرافن منز انۍ میہ 208 اعراب بچت۔ یم گیہ 208 "کی سٹروکن” ہنز بچت۔ وقت تہِ  لگہِ کم، جہد تہِ لگہِ کم۔

کم کھۅتہ کم تہ خالص ضروری اعراب ورتٲوتھ تحریر لیکھنک تجربہ کور میہ کاشر اخبار انٹرنیٹ سایٹہِ تہ نیب رسالس منز۔ یم دۅشوے تجربہ رودۍ کامیاب۔ کاشر اخبارکۍ پرن والۍ ٲسۍ نہ ادیب بلکہ عام لوکھ یمن نہ کاشر پرنک کانہہ تجربہ اوس۔ سایٹہِ پیٹھ موجود سروے مطابق ٲس نہ یمن عام لوکن اعراب ورٲے تحریر پرنس منز کانہہ دقت یوان۔ یہند ردعمل اوس زیادہ اہم تکیازِ یمن اوس نہ سانین ادیبن ہندۍ پاٹھۍ اعرابی تحریرس عادت گومت۔ میانیو یمو تجربو تلہ چھیہ یہ کتھ صاف زِ کم اعراب وول تحریر پرنس چھیہ نہ عملی طور کانہہ دقت پیش یوان، بس چھہِ نام نہاد علمی اعتراض کرنہ یوان۔

پیٹھمہ بحثہ تل چھیہ کتھ صاف زِ سانہِ املاہک اکھ زبردست چلینج چھہ امہ منزہ غیرضروری اعراب کم کرنۍ تاکہ کمپیوٹر تہ انٹرنیٹ کین امکاناتن ہندِ خاطرہ بنہِ نہ یہ حوصلہ شکن ٹھور۔ بہ چھس اعراب کم کرنہ کس سلسلس منز تمن سفارشاتن پیٹھ غور کرنچ دعوت دوان یمو سیتۍ نیبک پریتھ شمارہ عبارت چھہ تہ یمہ مضمونک املا تہ اکھ مثال پیش کران چھہ


[1] کاشرس منز چھہ نہ رسم خطک کانہہ مسلہ۔ علاوہ رسم خطن ہند مسلہ چھہ دراصل کشیرِ نیبرِمٮن کاشرٮن ہند ۔ مگر اتھ چھیہ ہنگہ تہ منگہ کشیرِ سیتۍ واٹھ دنچ کوشش کرنہ یوان۔ ہندی رسم خطچ سفارش چھہِ خاص کرسانۍ پنڈت بٲے کران یم کشیرِ نٮبر ہندوستانس منز چھہِ۔ رومن رسم خطچ سفارش چھہِ اکثرتم حضرات کران یم ہندوستانہ نٮبر انگلستان، امریکہ بیترِ جاین چھہِ۔کشیرِ نٮبر روزِتھ چھیہ کاشرٮن ہنز دوٚیم پے اردو فارسی رسم خط نش اتھہ چھلان یمیک بوٚڈ وجہ یمن جاین ہند تعلیمی نظام چھہ۔ ہندوستانس منز چھہ سکولن منز ہندی تہ امیک رسم خط پرناونہ یوان تہ یتھے پاٹھۍ انگلستان تہ امریکہس منز رومن رسم خط۔ لہذا چھیہ کاشرٮن ہنز دوٚیم پے تمہِ نش تہِ اتھ چھلان یہ تنہدس مٲلس ماجہ اردو لیکھن پرُن زاننہ کنۍکاشرس نسبت تگان اوس۔ کاشرِ زبانۍ ہند بول چال چھہ البتہ پننہ پننہ رنگہ قایم روزان، مگرسہ تہِ اکس حدس تامے یعنی بنیادی طورپننس مٲلس ماجہ علاوہ پیترن، پۅپھن، ماسن، مامن ستۍ کتھ باتھہِ ہندس حدس تام۔ مگر حقیقت چھیہ یہ زِ تریمہِ پیہ تام چھیہ زبان تہِ ختم آسان گمژ یس زن تمن حالاتن منز قدرتی تہ لازمی چھہ۔ علاوہ رسم خطن ہنز سفارش چھیہ دراصل نٮبرمٮن کاشرٮن ہنز کاشرس نکھہ روزنچ تہ زبانۍ ہند سلسلہ پننٮن بچن منز جاری تھاونچ کوشش۔مگر حقیقت چھیہ یہ زِیم ساریۍ کوششہ چھیہ بٮہ کار۔ یم چھیہ نہ آبہ نٮبر درامژِ گاڈِ ہنزِ ڑھرٹہِ علاوہ بییہ کینہہ۔ یہ مسلہ کشیرِ تام واتناون تہ اتھ کشیرِ اندرمٮن ادارن ہنز سرپرستی ہند مطالبہ کرن چھہ مضحکہ خیز۔کشیرِمنز چھہ نہ رسم خطک کانہہ مسلہ، تکیازِیُس رسم خط اسۍ کشیرِ منز ورتاوان چھہِ ،سہ چھہ تتہِ سارنے ویوٚد۔ البتہ چھہ تتہِ املاہک مسلہ یُس توٚت تام جاری روزِ یوٚت تام نہ زبان عام لیکھہ پرِ منز ییہ۔

[2] بہ اوسس 2005 دوران انٹرنیٹس پیٹھ  کاشر اخبار ناوہ اکھ اخبار تقریبا روزانہ شوقیہ کڈان۔  یمیک کینہہ آرکاییو انٹرنیٹس پیٹھ ونہِ موجود چھہ۔ کاشراخبار ڈاٹ کام۔ اخبارن منز چھیہ زیادہ سیاست آسان یۅس میہ سخ کھران چھیہ، مگر مقصداوس کاشِر خواندگی عام کرنۍ۔ اتھ اخبارس ٲسۍ  فی ہفتہ  زہ تریہ ہتھ لوکھ ہِٹ کران تہ شاید پران تہِ۔ مگر مسلہ اوس یہ زِ گۅڈہ آسہ خبرہ ان پیجس منز کمپوز کرنہِ پیوان، تمہ پتہ تم ای پی ایس امیجن منز تبدیل کرنہِ پیوان تہ تمہ پتہ سایٹہِ پیٹھ اپلوڈ کرنہِ پیوان۔ اکھ زیٹھ ہۅدہ ہر۔ امیک حل کوڈ مظفر عازم صٲبن ییلہ میہ تمن سیتۍ رابطہ سپد تہ یہ معلوم سپد زِ تم چھہِ کاشرس فانٹس پیٹھ کٲم کران یُس اسۍ  مایکروسافٹ ورڈ علاوہ انٹر نیٹس پیٹھ تہِ ورتٲوتھ ہیکون۔ نیب رسالچ ویب سایٹ چھیہ عازم صٲبنس فانٹس منز دستیاب۔ اتھ ویب سایٹہ پیٹھ یم تہ نکارشات چھہِ تمن ہند پریتھ لفظ چھہ سرچیبل تہ کانہہ تہ حصہ ہیکہِ کاپی کٔرتھ کنہِ تہِ پلیٹ فارمس پیٹھ ورتاونہ یِتھ۔

 [3]  It’s improtant thet we uderstand how we read. اگر توہہِ یہ جملہ ترین لفظن منز غلط ہیجہ آسنہ باوجود پرُن توٚگ، کتھ چھیہ صاف زِ اسۍ چھہ لفظن ہنزہ کلہم شکلہ عادتا پران، تمن ہند پھور نہ۔ اگر اسہ انگریزی زبان یتھہ پاٹھۍ پرنۍ تگہِ ، کاشر کیازِ تگہ نہ۔ کاشر چھیہ اسہِ پننۍ زبان۔ یمن حضراتن یہ خدشہ چھہ زِ اگر لفظ پھورہ مطابق لیکھنہ ییہ نہ، سہ پرُن چھہ مشکل، تمن پزِ اتھ متعلق دوبارہ سوچُن۔ حقیقت چھیہ یہ زِ لفظ اگرچہ اچھرن ہندۍ مرکب چھہِ مگر یوت تام پرنک تعلق چھہ،  لفظ چھہِ بصری صرژن ہندس صورتس منز پرنہ یوان۔

 

 

امین کامل سنز اکھ فارسی نظم ۔ اولین شعرہ نمونہ

muna with shaukat

 یتھ تصویرس منز چھہ میہ سیتۍ میانۍ زہ  پۅپھترۍ بٲے۔ منزس چھہ شوکت احمد یس کامل صٲبنہ اکس ہمشیرہ سند نیچو چھہ۔ یم چھہ کاپرنس نزدیک گوپال پور روزان۔ دچھنہ طرفہ چھہ ڈاکٹر امتیاز منصور یس کامل صٲبنہِ بییس ہمشیرہ سند نیچو چھہ۔ یم چھہ چھانہ پورِ روزان۔ شوکت احمدنۍ موج تہ مول چھہ کینہہ ؤری برونہہ گذریمتۍ۔ امتیاز منصورن مول تہِ گذریوو کینہہ ؤری برونہہ۔ کامل صٲبس چھہ یمو دۅیو بینیو علاوہ (یمو منزہ اکھ حیات چھیہ) زہ بٲے۔ یمو منزہ اکھ بڈشاہ نگرے روزان چھہ۔ بیاکھ برادر چھکھ کاپرنے روزان۔ ‌ژۅن ریتن اندر گذریہ یمن تریشونی بارنین ہنزہ زنانہ۔ کامل صٲب چھہ یمن سارنے زیٹھ۔ ماجہ ہندس مرنس پیٹھ پیوو میہ یمن تمام جاین تعزیتس گژھن۔ گوپال پور تہِ ووتس، زندگی منز گۅڈنچہ لٹہِ۔ شاید اتھۍ کن وچھتھ دیت میہ شوکت صٲبن نیرن وزِ اکھ سیٹھا مۅلل چیز یتھ تسند بڈۍ بب احمد اللہ حکیم (عرف بوڈ حکیم) تہ تسند بب حکیم ٭٭ رٲچھ ٲسۍ کرمژ۔ ٲخرس ووت یہ شوکت احمدس نش۔ یہ مۅلل چیز چھہ بۅنہ کنہِ پیش۔ یہ چھہ کامل صٲبنۍ اکھ فارسی نظم یوس تمو امۍ سے بڈس حکیمس (عمہ حکیم) سوزمژ ٲس۔ میانہِ خیالہ چھہ یہ کامل صٲبنہِ شاعری ہند اولین دستیاب نمونہ — مگر فارسی پاٹھۍ۔

kamil farsi poem

اے مسیح این زمان و اے حکیم ارجمند
از دم تو ہر کسی بسیار گشت از بہرمند
بر در تو بہر درماں آمدیم از کاپرن
این چہ بوالعجبی است کردی دل ما را دردمند
یک گناہ بے پناہ بر خود روا کردندہاں
آنکہ تشہیر دم عیسی بہ عالم کردہ اند
آتشی در زیر پا دارند عاشق بہر دوست
این ندانند مگر آنہا کہ خود ہم سوختند
تو چہ دانی لذت زہر کہ نوشد این غریق
می خوری در بستی گوپال پورہ شہدو قند

غریق کاشیمری

شوکت احمدن ونن چھہ ز‏ خط اوس کامل صٲبن کالجس دوران لیوکھمت۔ کامل صٲب چھہ اکس جایہ لیکھان زِ تسند مول اوس علاج خاطرہ تس امس حکیمس نش کالج گژھنہ برونہہ نوان۔ اگر تتھ کن گژھو تیلہ چھہ یہ کامل صٲبنہِ کالج اژنہ برونہم چیز۔ کامل صٲبن بابہ صٲب گذرییہ 1939 منز ییلہ تم کالج کس گۅڈنکس ؤریس منز ٲسۍ۔ ممکن چھہ یہ ما آسہِ تمی ؤریک۔ بہرحال تحقیق چھہ جاری۔ حکیم ٭٭ سندس گرس منز کور یمو پتہ رشتہ۔ کامل صٲبن گرہ کوتاہ چھہ امس حکیمس نش متاثر اوسمت، سہ چھہ یتھ نظمہِ منز ظاہر۔ امۍ حکیمن چھیہ کینہہ مسودہ طبس متعلق فارسی پاٹھۍ پتھ کن تراوۍ متۍ۔

میہ ہوو یہ نظم کامل صٲبس۔ واریاہس کالس رود سہ اتھ وچھان، تمہ پتہ زن نہ پہچوننے تہ دیتن واپس۔ پرژھمس یہ کر سا چھتھ ژیہ لیوکھمت۔ دوپن تہِ کس چھہ وۅنۍ یاد۔ دوپمس شوکت اوس ونان یہ چھہ یمو کالجس دروان لیوکھمت۔ تورہ دوپن خبر آسیم۔ 1939 منز اوس کامل صٲب 15 وہُر۔ کامل صٲب اوس یمن دوہن غریق تخلص کران۔

کاشر رسالہ واد (قسط 7) : م ح ظفر

zaffar

وادس منز چھپییہ م ح ظفر سندۍ کل شیہ غزل۔ زہ شمارہ 4، تریہ شمارہ 6 تہ اکھ شمارہ 12 کس گۅڈنکس حصس منز۔ ظفر سند غزل ہیوک نہ کانہہ مقبولیت حاصل کٔرتھ۔ اتھ متعلق چھہ اکس خطس منز شفیع شوق لیکھان "فکرِ ہند غلبہ تہ ہیژ ہند نویر (چھہِ) میہ ہوین پرن والین مکمل حض حاصل کرنس منز رکاوٹ بنان۔”

ظفر سنزِ شاعری منز چھیہ سوچک گۅبیر پیدہ کرنہ چہ کوششہ منز لفاظی پیدہ گژھان، یمہ کنۍ امۍ سندِ ادراکچ (دربافتچ) شدت اکثر راوان چھیہ۔ دویمین لفظن منز ونو زِ امۍ سندِ غزلچ کمزوری چھیہ یہ زِ یہ چھہ زیادہ کتھہ کران۔ وجارہ گی تہ وجودی دۅکھ چھہِ ظفر سنزِ شاعری ہنز غالب دلچسپی یمن ہندِ عرفان کس نتیجس منز یہ شاعری غم ناک بنان چھیہ۔

ظفرس نش اوس اکس آیڈیل شاعر سند سامانہ ۔۔ فکر تہ فن تشکیل پذیر سپدان۔ کُنہِ ساعتہ چھہ کانہہ جداگانہ شاعر ہمعصرن ہنز مقبولیت وچھتھ تہ تتھ غلط پاٹھۍ شاعری ہنز اظہاری کامیابی تصور کٔرتھ پسپا تہ عدم دلچسپی ہند شکار گژھان۔ شاید سپز ظفر سنز شاعری امی وہمچ شکار تہ امۍ لوب نہ سفرس پیٹھ جاری روزنک تہ پننۍ وتھ شیرنک موقعہ۔ کینہہ شعر:

وشنہِ سوچکۍ ترنۍ رنگ مہ وچھ
کانہہ تہِ منطق غلط ون مہ گژھ

پرژھ ژیہ کیا چھے پرژھن ژیتھ مہ رچھ
میانہِ ژھۅپہِ ہند صدا بن مہ گژھ

کال برمرتھ چھہ آمت ظفر
ازلہ ابدک نقش کھن مہ گژھ

ظفر ژہ تھاو سامہ وِتھ یہ سریہ لوسنک سمے
میہ ٲسۍ کلۍ تہ کٹۍ پرژھاں گٹین شبن سنبالہِ کُس

دوپکھ وجارہ چھی لیکھتھ ڈیکس ژہ پکھ پکان گژھ
میہ پرژھ نہ زانہہ تہِ نیجرن اما چمن سنبالہِ کُس

بہ چھس وجارہ وتن ہند تھکن اچھن منز ہیتھ
بیہ سۅکھ وبالۍ ژہین دول رٔٹتھ کراں ارزتھ

اگر ظفرن "مہ گژھ” ہوۍ داہ وہ غزل تہِ ونۍ متۍ آسہ ہن تس آسہِ ہے نٔوس کاشرس غزلس منز پنن اکھ مقام۔ میہ چھہ نہ معلوم ظفرن کرییا پننۍ شاعری سۅمبرنہِ ہندس صورتس منز شایع کنہ نہ۔۔

کاشر رسالہ واد (قسط 6) : رفیق راز

nay

واد رسالس منز چھہِ رفیق رازنۍ تہِ چھہِ کل پانژھ غزل  چھپان۔ زہ شمارہ 3 تہ تریہ شمارہ 6 ہس منز۔  راز سندِ غزلہ کہ مقبولیتکۍ ٲسۍ واریاہ وجہ، یمن منز ویز، واضح زبان تہ خیال ورتاونک ہنر شامل چھہ۔ رازن کٔر شہر سرینگرچ زبان (تہ محاورہ) کاشرِ شاعری منز  گۅڈنچہ لٹہِ  متعارف یتھ متعلق کینژن شود کاشر اظہار آسنک دھوکہ لوگ یمن منز علی محمد لون تہ اختر محی الدین ہوۍ بڈۍ ادیب تہِ شامل چھہِ۔

رفیق راز سندِ غزلکۍ لفظ، پیکر تہ استعارہ سٲری ٲسۍ ویدۍ تہ برونہہ کنکۍ تہ صاف تہ شفاف یمن منز نہ کُنہِ شکچ تہ شبہچ گنجایش ٲس۔ آہنگ تہ ردیف قافیہ کنۍ تہِ اوس سہ تم زمینہ تیار کران یمن منز یاد روزنچ، زیوِ پیٹھ پھرنچ تہ بجایہ خۅد معنہ ساوۍ آسنچ صلاحیت موجود ٲس۔ رازن کرۍ کینہہ لفظ  بار بار تہ رنگہ رنگہ ورتٲوتھ پننہِ شاعری ہندِ خاطرہ مخصوص۔ امۍ سندین عشقیہ تجربن ہنز  ایمایت ٲس شاعری سیتۍ دلچسپی تھاون وٲلس امۍ سندس ہم عمر طبقس خاص طور پانس سیتۍ پکناوان۔

راز  سنزِ شاعری منز چھیہ نہ کانہہ موضوعاتی دلچسپی نظرِ گژھان۔ امۍ سند زیادہ تر فوکس چھہ موجود ژہس پیٹھ تہ امی مجود ژہہ کہ درچہ منزۍ چھہ سہ انسانی تجربن ہنزہ ژھایہ تہ رایہ گاشراوان تہ تہِ کٔرتھ اتھ ژہس  لازوال بناوان۔ راز چھہ پرن وٲلس بدل کنہِ دنیاہس منز  منتقل کرنہ بجایہ تہندے دنیا گاشراوان تہ تبدیل کران۔ راز سندۍ غزلن دیت پرن وٲلس تمہ ساتہ تہِ یہ نہ تس دستیاب اوس۔ کینہہ شعر:

اکھ چشمہ جورۍ ٲس کراں زول راتھ تام
سۅے چشمہ جورۍ از تہِ سراپا مگر سوال

 اکھ دما بیوٹھ میہ نش آرہ پلس پیٹھ تہ وونن
پوت نظر دی نہ یہ ردیاو میہ وونمس نہ کہنی

 بہ زن یور کن  پتھرِ پیومت کھلاڑۍ
ژہ زن ٲنتھہ روس ہالہ میدان ہیو

 ژیہ چھے نا زنہے وۅش تہِ نیرتھ ژلان
ژہ تے چھکھ میہ ہیو عین انسان ہیو

گلابس ژھٹن زن چھہ گاشر سحر
کنڈس پیٹھ چھہ تارکھ تہِ لرزان ہیو

بہ زن گردِ اندر افق تا افق
ہوا زنتہ ازلے میہ زاگان ہیو

لامکاں وٲتھ کڈن فرمان بیاکھ
تالہ پیٹھ تھونم ظہرۍ اسمان بیاکھ

تار ییلہ سدرس لبو واتو اپور
ٲس وہرتھ آسہِ ریگستان بیاکھ

رفیق راز سنزہ چھیہِ زہ کاشرۍ شعرہ سۅمبرنہ شایع سپزمژہ – نے چھیہ نالاں تہ دستاویز۔ یمو منزہ چھہ گۅڈنکس ساہتیہ اکاڈمی ایوارڈ تورمت۔

ترنگرِ والین ہنز کاکۍ گی کِنہ لکہ شعریات؟

رینزس گیندم، رینزس گیندم
ببن اونم بازراے
شیشہ دارے پانے لویم
رم گیہ شیشس ہتے ہاے
بب ہے دپیم یہ کیا کورتھ
بہ ژھۅپہ ژھۅپے پھرس چاے

رحمن راہی چھہ "کاشرِ لکہ شاعری ہند تخلیقی کردار”  (مطبوعہ شیرازہ 6:29) مضمونس منز اتھ لکہ بٲتس تشریح کٔرتھ خبر کمن پیٹھ بیہ موقعہ یتھہ پاٹھۍ پننۍ ژکھ کڈان:

"کینہہ ترنگرِ والۍچھہِ یتھین نوزک لوہ پھیرین تہِ پٲترِس کھٲرتھ تولنچ کاکۍگی کران تہ گہے سکہ بند قافیہ بندی ہنز تہ گہے تارژہ تولچ کتھ تلان۔ اما تمن چھنا قدیم یونانین ہند یہ دوپ تہِ کنن گومت زِ وزن یا قافیہ چھہ نہ شاعری ہنزِ ٲڈرنہِ منز شامل۔ تہ مرزا غالبن یہ اعلان تہِ چھکھنا بوزمت زِ
 فریاد کی کویی لے نہیں ہے
نالہ پابند نے نہیں ہے۔”

اتھ جذباتی بیانس منز چھہ راہی قافیس تہ وزنس متعلق پننۍ نفرت ظاہر کران۔ افسوس چھہ یہ زِ امہِ لکہ بٲتہ چہ تشریح  منز چھہ سہ یوت آورنہ آمت زِ سہ  چھہ نہ اصل بٲتہ کس فارمس پیٹھ توجہ کٔرتھ ہیوکمت، نتہ زن گوژھ نہ سہ امہِ بٲتہ کہ حوالہ قافیہ تہ وزنہ کہ غیر ضروری آسنچ کتھ تُلن تکیازِ یوت تام قافیہ بندی ہند سوال چھہ، یہ بٲتھ چھہ ٹاکارہ پاٹھۍ پانہ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام قافین منز غرق۔گۅڈنچی نظرِ چھہ امہ کس دویمس دویمس مصرعس منز غزلہ کی پاٹھۍ قافیہ ورتاونہ آمت: بازراے/ہاے/چاے (باقی وچھو برونہہ کن)۔ یوت تام وزنک سوال چھہ، اتھ منز چھہ ہیجلۍ (کاشر) وزن تہِ برابر پاٹھۍ ورتاونہ آمت۔ یعنی یمن دۅن چیزن راہی معترض چھہ تم دۅشوے چیز چھہِ امہِ بٲتہ چہ ٲڈرنہِ منز شامل۔

 

وزنچ ٲڈرن

1

2

3

4

5

6

7

8

رین

زن

گین

دم

رین

زس

گین

دم

ب

بن

او

نم

با

زہ

راے

 

شی

شہ

دا

رے

پا

نے

لو

یم

رم

گے

شی

شس

ہ

تے

ہاے

 

بب

ہے

د

پیم

یہ

کیا

کر

رت

بہ

ژھۅپ

ژھو

پے

پھِ

رس

چاے

 

یہ چھہ بنیادی طور ہیجلۍ وزن تہ اکثر بٲتن ہندۍ پاٹھۍ چھہِ اتھ منز گۅڈنکس گۅڈنکس مصرعس منز ٲٹھ (8) تہ دویمس دویمس مصرعس منز ستھ (7) ہیجلۍ۔ اکثر ہیجلۍ وزنن منز چھہ ہیجلین ہند تعداد اہم، تمن ہنز ترتیب نہ۔ ترتیب چھیہ تمن وزنن منز اہم یمن منز ژھۅٹین تہ زیٹھین ہیجلین ہنز فرق اہم چھیہ۔ کاشرس ہیجلۍ عروضس منز چھہِ ژھوٹۍ تہ زیٹھۍ ہیجلۍ اکوے قیمت تھاوان۔ زبر، زیر، پیش یا بییہ کانہہ اعراب وول اوک اچھری لفظ یا لفظک ٹکرہ مثلا /ب/چھہ اکھ ہیجل، زہ اچھرہ والۍ ٹکرہ یا لفظ مثلا/زس/ تہِ چھہ اکوے ہیجل، تریہ اچھری ٹکرہ یا لفظ مثلا /راے/تہِ چھہ اکوے ہیجل، تہ ژور اچھری ٹکرہ یا لفظ مثلا /ژھۅپ/ تہِ چھہ اکوے ہیجل۔ یمن سارنی ہیجلین چھہ کاشرس ہیجلۍ عروضس منز کُنے مۅل۔ فارسی عروضس منز چھہ یمن الگ الگ مۅل مقرر تکیازِ تتہِ چھیہ ژھۅٹین تہ زیٹھین ہیجلین ہنز ترتیب اہم۔

سانۍ شاعری چھیہ دنیا چہ زیادہ تر شاعری ہندۍ پاٹھۍ فارمچ شاعری لہذا چھہِ اتھ منز فارمہِ سیتۍ تعلق تھاون والۍ عنصر موجود یمن منز قافیہ تہ ردیف تہ وزن تہ مصرعہ تہ شعر تہ ووج تہ بند تہ صنف چھہِ۔ یمہِ ساتہ اسۍ یمن بٲتن پیٹھ قلم تُلو اسۍ کرو ضرور تمن عنصرن ہنز کتھ یمو مطابق یم وننہ آمتۍ چھہِ۔ تتھ منز چھہ نہ کانہہ گۅناہ! سۅ چھیہ سانۍ شعری روایت یۅس سانہِ تمام لکہ شاعری احاطہ کٔرتھ چھیہ۔

دویم کتھ چھیہ یہ زِ دنیاہ کہ کُنہِ تہ تمدنکۍ لکہ بٲتھ چھہ قافیہ تہ وزن ورتاوان چاہے سہ وزن کُنہِ تہ نظامس تحت آسہِ یا خالص متوازیتس parallelismپیٹھ دٔرتھ آسہِ۔ یہ چھیہ پاپیولر شعریات، اتھ کیا کرِ کلاسیکل یونانۍ تنقیدی اصول زِ شاعری خاطرہ چھہ نہ وزن تہ قافیہ ضروری۔ تم ٲسۍ شاعری بدلہ تمہ وقتہ منظوم ڈراما لیکھان یمہ کس سیاقس منز تمو یہ کتھ کرمژ چھیہ۔ شیکسیپر تہ چھہ ڈراما لیکھان مگر یتتہ نس تاثر ہرراون چھس آسان قافیہ تہِ چھہ ورتاوان۔

 

بے بنیاد شہادت

راہی چھہ اتھ بیانس منز طنزک لہجہ رٔٹتھ مزید ونان زِ کینژن "ترنگرِ والین” (خبر یہ کمن کُن چھہ اشارہ؟) چھیہ نہ خبر زِ قدیم یونانیو چھہِ نہ قافیہ تہ وزن شاعری ہنزِ ٲڈرنہِ منز شامل کرۍ متۍ۔ راہی یس چھہ نہ شاید یہ معلوم زِ وزن تہ قافیہ چھہِ نہ براہ راست شاعری بلکہ شعری فارمن یا روایژن ہندۍ لوازمات۔ اگر یونانین ہند یہ خیال چھہ زِ شاعری ہندِ خاطرہ چھہِ نہ وزن تہ قافیہ ضروری تمیک مطلب گوو نہ یہ زِ سۅ شاعری کیا چھیہ نہ شاعری یتھ منز وزن تہ قافیہ ورتاونہ آمتۍ چھہِ یا وزن تہ قافیہ ورتاون یا تمن ہنز کتھ کرُن کیا چھہ گناہ۔  بییہ چھہ نہ یہ ضروری زِ یونانین ہند دوپ کیا ییہ اچھ ؤٹتھ ماننہ تکیازِ یہ چھہ نہ کانہہ خدایی بیان۔ کلاسیکل یونانین پتہ چھہِ دنیاہچہ تقریبا تمام تر شاعری (یونانۍ ہیتھ) وزن تہ قافیہ ورتاومتۍ۔ اگر  کلاسیکل یونانین ہندس دٔپس منز مطلق حقیقت آسہِ ہے، دنیا ہس منز آسہ ہے نہ بجن بجن زبانن ہندیو شاعرو وزن تہ قافیہ ورتاوۍ متۍ۔ غزل یا بییہ کانہہ روایتی فارم، سون وژن تہ لکہ بٲتھ چھہِ قافیہ تہِ ورتاوان تہ وزن تہِ تکیازِ یم زہ چیز چھہِ باقی عناصرن سیتۍ رٔلتھ یمن فارمن ہنز تشکیل کران۔

راہی چھہ غالبن شعر دتھ یہ رعب تراونچ کوشش کران زِ غالب ہوۍ بڈۍ شاعرن تہِ چھہ اعلان کورمت زِ وزن تہ قافیہ چھہِ نہ شاعری ہندِ خاطرہ ضروری۔ حالانکہ غالب سندس شعرس چھہ نہ وزن تہ قافیہ کس بحثس سیتۍ کانہہ تعلق۔ فریاد تہ نالہ یم دۅشوے چیز چھہِ ناہموار تہ بیہ ربط تہ بیہ ضبط۔ فن چھہ بندش، چستی تہ تہذیب منگان ۔بقول اقبال:

تا تو بیدار شدی نالہ کشیدم ورنہ
عشق کاریست کہ بے آہ و فغاں نیز کنند

راہی یتھ شاعرانہ زبان ورتٲوتھ نوزک لوہ پھیرۍ ونان چھہ، تم لوہ پھیرۍ چھہِ نہ فریاد تہ نالہ یا بیہ وزن  کریکہ نادک نتیجہ۔ یمن لوہ پھیرین ہنز تہذیب چھیہ قافیہ بندی تہ وزنکے نتیجہ۔ اگر یہ پوز مانو زِ امہِ شعرہ نش چھہ غالبن مراد قافیہ تہ وزن، غالبن آسہِ ہے نہ تیلہ پانہ قافیہ بند تہ وزنہ پابند شاعری کرمژ، یعنی پننۍ تمام شاعری عروض چہ لیہ تہ نیہ پابند کٔرمژ۔ سہ گوژھ تیلہ وزنہ روس کریکہ ناد تُلن۔ راہی ین تہِ چھیہ پانہ پننۍ سٲرے غزلیہ شاعری تہ نظمن ہند اکھ حصہ اوترہ تام  قافیہ تہ وزنچ پابند کرمژ ۔ یعنی اگر پزۍ پاٹھۍ قافیہ تہ وزن ضروری ٲسۍ نہ تسندین غزلن منز کیازِ چھیہ یمن ہنز مکمل پابندی؟ راہی کیازِ کنۍ کتھ، ونہ وُن، خۅدایا بیترِ نظمہ راتھ تام ونان یمن منز وزنچ تہ قافیچ پابندی تس کرنۍ پیوان چھیہ۔ یہ سبق کیا تہ کس کیت؟ اگر کانہہ شخص زیوِ کُنہِ پزرچ حمایت تہ پرچار کرِ تہ عملا باہوش و حواس پزر پانہ نظر انداز کرِ، یعنی لوکن ونہِ قافیہ تہ وزن مہ ورتٲوو تکیازِ یم چھہِ نہ شاعری ہنزِ مولہ ماہیژ منز شامل مگر بییہ اندہ روزِ پننین غزلن تہ نظمن منز دۅشونی ہند ورتاو کران، تس شخژس کیا ونو؟

راہی یمہِ ساتہ تہِ پابند یا فارمل شاعری ہنز کتھ کران چھہ مثلا پیٹھم لکہ بٲتھ سہ چھہ اکثر قافیہ تہ وزنچ پاسداری کرن والین ملامت کران۔ کیازِ؟

 

قافیچ ٲڈرن

راہی چھہ اتھ بٲتس تشریح کٔرتھ ہاوان زِ اتھ بٲتس منز کٲژا تخلیقیت چھیہ۔ مگر تشریح علاوہ ٲس تتھ چیزس تہِ سننچ ضرورت یتھ امہِ بٲتہ کس ہیتس سیتۍ تعلق چھہ یعنی قافیہ بندی۔ افسوس چھہ زِ راہی چھہ بٲتس پیٹھ نظر تراونہ ورٲے (خیالی) ترنگرِ والین پیٹھ پننۍ ژکھ کڈان۔ امیک وجہ چھہ یہ تہِ زِ سہ چھہ معنی یسے منز بند گومت بٲتہ کین لفظن چھہ نہ سنیومت۔ قافیہ چہ کارسازی ورٲے کتھہ پاٹھۍ ہیکہ کانہہ نقاد یا پرن وول اتھ بٲتس لطف تُلتھ؟ یہ کتھ گژھہِ یاد تھاونۍ زِ لکہ شاعری منز چھیہ قافیہ بندی سیٹھا اہمیت۔ تہۍ وچھو زِ یتھ بٲتس منز تہِ چھہ قافیہ نہ صرف اندن پیٹھ بلکہ جایہ جایہ میلان۔ یمن لکہ بٲتن منز چھہ آہنگ، روانی تہ یاد تھاونچ قابلیت قافیہ بندی ہندی بدولت۔ اگر یمن لکہ بٲتن منز قافیہ تہ وزن ورتاونہ آسہ ہن نہ آمتۍ یم آسہ ہنے نہ سٲنس یاداشتس منز محفوظ رودۍ متۍ تہ  اسہِ تام واتۍ متۍ۔ لکہ شاعری ہنز ٲڈرنہِ منز چھہِ یم زہ چیز سرس۔  وچھو اتھ بٲتس منز کتھہ پاٹھۍ چھیہ قافین ہنز طومار۔ 27 ہن لفظن ہندس اتھ بٲتس منز 15 قافیہ آسنۍچھہ نہ اتفاق (یا ترنگرِ والین ہنز کاکۍگی) بلکہ تتھ شعریاتس کن اشارہ یمچ کارفرمایی اتھ شاعری منز چھیہ۔ یونانۍ شعریات ہیکہِ نہ سانین لکہ بٲتن پیٹھ چسپان سپدتھ۔  ترٲوو قافین پیٹھ نظر:

قافیہ 1:   رینزس/شیشس/پھِرس
قافیہ 2:   گیندم/ اونم/ لویم/ رُم/ دپیم
قافیہ 3:   راے/ ہاے/ چاے
قافیہ 4:   پانے/ہتے/ ہے/ ژھۅپے

یمو قافیو علاوہ چھہ اتھ بٲتس منزکینژن لفظن ہند تکرار تہِ موجود۔
رینزس /رینزس
 گیندم/گیندم
 ببن/بب
شیشہ/شیشس
 ژھۅپہ/ژھۅپے

مزید چھہ بٲتس منز آوازن ہند ہشر تہ تکرار تہِ قابل غور۔ گۅڈنکین دۅن مصرعن منز نون تہ کھنکھۍنون شییہ (6) لٹہِ تہ پتمین دۅن مصرعن منز /پ/آواز ژورِ (4) لٹہِ۔ یمو دۅیو آوازو علاوہ چھیہ/ر/ آواز تہِ بٲتس منز ستہِ (7) لٹہِ آمژ۔ یمن آوازن ہندِ تکرارہ سیتۍ چھہ بٲتہ کس آہنگس تہ روانی منز اضافہ گومت۔ یم دۅشوے عنصر لکہ بٲتن ہندِ خاطرہ اہم چھہِ۔ اسۍ ہیکو نہ تتھ شاعری منز وزن تہ قافیہ نظرانداز کٔرتھ یۅس تمہِ شعریات موجوب وننہ آسہِ آمژ یتھ منز یم لازم چھہِ۔ اتھ شاعری اگر یمن عنصرن ہندِ مۅکھہ گزگتی تہِ لگاونہ ییہ ناجایز چھہ نہ کینہہ۔

یتھ مضمونس منز اوس یتے ہاون زِ وزن تہ قافیہ چھہ پیٹھمہ لکہ بٲتہ چہ ٲڈرنہِ منز شامل تہ یمو ورٲے امہ بٲتک تصور کرُن بلکہ امچ تحسین کرنۍ تہِ ناممکن چھیہ۔