محقق سنز غلطی تہ محقق سندۍ ترت

غلطی

ناجی منور چھہِ کلیات محمود گامی یس منز "شیرین خسرو” مثنوی ہندس متنس منز اکھ شعر یتھہ پاٹھۍ دوان:

شفیقا خاصہ اوسس ناو شاپور
بخلوت محرم اسرار مستور

شاپور ناوس تل چھہِ اکھ نوٹ یتھہ پاٹھۍ دوان:

"(1) نظامی ین چھہ پننہِ کتابہِ منز "شاور” لیوکھمت، قلمی نسخس منز تہِ چھہ شاور لیکھتھ۔”

مثنوی منز چھہ متنس اندر ناجی گوڈنکس حصس منز شاپور دوان، البتہ چھہ پتمس حصس منز شاپور بدلہ شاور دوان۔ اتھ حصس متعلق چھہ ناجی ونان زِ تم ستہ ہٲٹھ شعر چھہ اڈلیکہِ قلمی نسخہ پیٹھہ نقل کرنہ آمتي۔

ناجی یس چھہ کیاہ تام مغالتہ گومت۔ نظامی سنزِ مثنوی منز چھہ نہ کُنہِ جایہ شاور دتھ بلکہ چھہ شاپور دتھ۔ سے اوس ناو خسرو سندس خاص دوستس۔ یہ شاور کتہِ آو یہ چھہ نہ معلوم۔ ناجی ین کتھ کتابہِ منز چھہ شاور وچھمت، حالانکہ نظامی سنز مثنوی آسہِ یمو پانہ وچھمژ۔

اڈلیکہِ نسخک شارو ہیکہ کاتب سنز غلطی ٲستھ، میہ چھہ باسان یہ لفظ آسہِ کاتبن کنہ بوزمت۔ شاپور بدلہ آسین شاور بوزمت۔

نظامی سنزِ مثنوی منز چھہ یہ ناو گوڈنی اتھۍ شعرس منز یوان یمیک ترجمہ محمود گامی ین کورمت چھہ:

ندیمی خاص بودش نام شاپور
جھان گشتہ ز مغرب تالھاور

ناجی چھہ محقق۔ اگر یژھہ غلطی محققن گژھن، اسہِ مقلدن کیا بنہِ۔

 

ترت

محمد یوسف ٹینگ چھہ اتھ کلیات محمود گامی یس عرض ناشرس منز ونان:

"میانہِ تحقیقہ موحب کٔر تمۍ (محمود گامی ین) فارسی زبانۍ ہنز اکھ مثنوی گوڈنچہ لٹہِ کاشرۍ پاٹھۍ ترجمہ تہ پتہ بۆرن پننہِ زبانۍ ہند ہلم امہ شاندار زبانۍ ہندیو گوہر پارو سیتۍ۔”

یا تہ چھہ نہ یہ جملہ لیکھن تۆگمت۔ حالانکہ کتھ چھیہ نہ فلسفیانہ ز نثر لیکھنس ییہ دقت، نتہ چھہ یہ ٹینگ سند مضحکہ خیز تحقیق۔ اکہ طرفہ چھہ ونان "میانہِ تحقیقہ موجب” یعنی تحقیق چھن کۆرمت تہ بییہ طرفہ چھہ ونان "اکھ مثنوی” یعنی یہ چھیہ نہ پتاہ کۅس مثنوی چھیہ۔  کِنہ یہ چھیہ بلۍ گیلا برونہہ کُن تراومژ تاکہ ینہ خلق ونن زِ محمود گامی یس پیٹھ چھہ صرف ناجی ین تحقیق کۆرمت، تہِ چھہ میہ (ٹینگن) تہِ کۆرمت۔

 

مثنوی ین ہنز گرند

ناجی منور چھہ کلیات محمود گامی یس منز داہ (10) مثنوی دوان۔ امہ برونہہ چھہ رسول پونپر اکس مضمونس منز ونان ز محمود گامی ین چھیہ ٲٹھ نو مثنوی لیچھمژہ۔ امہ برونہہ چھہ محمود احمد اندرابی اکس مضمونس منز لیکھان ز محمود گامی ین چھیہ نو مثنوی لیچھمژہ۔ گویا ناجی منور چھہ کلیات کس دویمس ایڈیشنس منز اکھ مثنوی ژرے دوان۔ مگر کلیات کہ امہ ایڈیشنہ برونہہ چھہ شفیع شوق اکس مضمونس منز ونان ز محمود گامی ین چھیہ کاہ (11) مثنوی لیچھمژہ۔ میہ باسان شوقن چھیہ ٹینگ سنز یہ "تحقیقہ موجب” "اکھ مثنوی” تہِ شمارس تھاومژ، نتہ زن گوژھ سہ پننسے بٲیس پژن۔ حالانکہ "کاشر ادبک تواریخ” کتابہ منز چھن یمن ہند تعداد داہے (10) وونمت۔

 

 

ارۍ نہِ رنگ گوم

arni2

ارۍ نہِ رنگ گوم شراون ہی یے
کر یی یے درشن دی یے

یہ چھا محمود گامی سند کِنہ کانسہِ فرضی ارنہِ مالہِ ہند، تتھ بحثس منز گژھنہ ورٲے ونہ بہ زِ یہ شعر چھہ میہ لۅکچارہ پیٹھے پسند۔ اکھ امہ چہ غنایژ کنۍ تہ دویم امہ کہ مضمونہ کنۍ تہ تریم تمہ مضمون کہ استعاراتی بیان کنۍ۔ یم تریہ خوبیہ اکۍ سے شعرس منز امہ شدتہ سان جمع گژھنہِ چھہ نہ عام۔

غنایت

سانۍ کینہہ نقاد چھہِ غنایتس نچہِ نظرِ وچھنہِ لگۍ متۍ۔ غنایت یودوے شاعری ہندِ خاطرہ ضروری چھیہ نہ مگر اتھ چھہ شاعری سیتۍ ہمیشہ پیٹھہ واٹھ رودمت۔ شاعری ہنز شروعاتے چھیہ غنایت (گیون تہ موسیقی) سیتۍ سپزمژ تہ شعرک یۅہے جز جھہ اتھ پیٹھے بانہ عام لوکن (کلچرس) سیتۍ واٹھ دوان۔ اگر شاعری یونیورسٹی ہندین مخصوص شعبن منز مخصوص طالب علمن تامے محدود تھاونۍ چھیہ، تیلہ چھیہ بدل کتھ۔ تیلہ ہیکو اسۍ شاعری کُنہِ تہِ کارس ؤنتھ، یمہ خاطرہ اتھ خاص طبقس تربیت دنہ ییہ۔ شاعری کتھ ونو امیک فیصلہ چھہ نسل در نسل شعری اظہارچہ تمدنی شراکت داری ہندس نتیجس منزے سپدان۔ اتھ منز چھیہ تبدیلی وارہ وارے مول رٹان تہ سۅ تہِ تنقیدی فیصلو بجایہ یمنے شعری اظہارن ہنزِ تبدیلی ہندِ ذریعہ۔

اسۍ تراوو امہ شعرچہ غنایژ پیٹھ اکھ نظر۔ شعرس منز کتھہ پاٹھۍ چھیہ غنایت پیدہ گژھان؟ گۅڈنیکے چیز وزن تہ ہیت (فارم)۔ یۅس شاعری کانہہ مخصوص ہیت ورتاوِ نہ مثلا آزاد نظم/نثری نظم، تمہ چہ غنایژ منز تبدیلی ینۍ چھیہ لازمی کتھ۔ یہ شعر چھہ وژنہ چہ ہیژ منز یتھ منز قافیہ بندی مصرعن ہنز شکل صورت مقرر کران چھیہ۔ وژن چھہ نہ قافیہ بندی ورٲے کہنی۔ اتھ شعرہ ہیژ منز چھہِ نہ صرف اند قافیہ بلکہ اندرونی قافیہ تہِ یسلہ پاٹھۍ ورتاورنہ یوان۔ وزن ورتاونہ واجین شعرہ ہیژن منز چھہ پریتھ مصرعہ تقریبا برابر زیچھرک (وقفہ) آسان۔ دۅن مصرعن ہند یہ برابر وقفی میژ چھہ اکھ نمونہ ترتیب دوان یُس غنایژ ہند اکھ بوڈ جز چھہ۔

غنایت چھیہ امہ علاوہ (مخصوص) آوازن ہندِ تکرارہ سیتۍ تہِ پیدہ گژھان۔

یتھ شعرس منز چھہِ تریہ ہوی قافیہ /ہی یے/، /یی یے/ تہ /دی یے/ ورتاونہ آمتۍ یتھ اسۍ اند قافیہ ونو۔ دۅن مصرعن ہندس اندس پیٹھ امہ قافیہ کس تکرارس چھہ دویمہ مصرعہ کس شروعس منز امیک ہریمانہ تکرار غنایت پیدہ کران خاص کر یہ کتھ ذہنس منز تھٲوتھ زِ اتھ قافیس منز چھہِ زہ زیٹھۍ مصوتہ فی قافیہ یوان /ای/ تہ /اے/۔ نون (9) لفظن ہندس اتھ شعرس منز چھیہ نہ صرف یمن ترین لفظن ہنز قافیہ ترتیب بلکہ چھہِ امہ علاوہ تہِ اندرونی قافیہ ننۍ نیران۔ /شراون/ تہ /درشن/ چھہِ بییہ زہ لفظ یم ہم قافیہ چھہِ۔ گویا نون (9) منز چھہِ پانژھ (5) لفظ قافین پیٹھ مبنی۔ یُتے نہ بییہ دیوس وون۔ بیاکھ اکھ لفظ چھہ قافیہ رنگۍ نون نیران۔ /کر/ یُس درشن لفظہ کس /در/ حصسس سیتۍ ہم قافیہ چھہ۔ یتھہ پاٹھۍ چھہ قافیہ لفظن ہند تعداد نون (9) لفظن ہندس اتھ شعرس منز شین (6) تام واتان۔

سانۍ نقاد چھہِ پننہ شاعری ہنز یہ بنیادی خصوصیت ترٲوتھ کمہِ تام کلاسیکل یونانۍ شعریاتچ برتری چکاوان یۅس زن سیٹھا افسوسس لایق کتھ چھیہ۔ بہ ونہ بییہ اکہ لٹہِ زِ شعرس منز غنایت آسنۍ چھیہ نہ ضروری مگر شعرچ غنایت چھیہ نہ قطعا شاعری ہند ضد۔ میہ کٔر پیٹھہ کنہِ دۅن زیٹھین مصوتن ہنز کتھ۔ اتھ شعرس منز چھہِ نہ اند قافین ہندۍ صرف تم زہ زیٹھۍ مصوتہ بلکہ چھہِ بییہ زہ زیٹھۍ مصوتہ گوم لفظک /او/ تہ شراون لفظک /آ/۔ زیٹھین مصوتن منز چھیہ ٲسچ حالت یلہ آسان یۅس گیونہ خاطرہ سیٹھا اہم چھیہ۔ یوت ٲس یلہ آسہِ تیوت نیرِ آواز نیبر۔ امہ رنگۍ چھیہ نون /ن/ آواز تہِ اہم۔ اتھ آوازِ منز تہِ چھیہ غنایت۔ نون چھہ تتھ شہس پیٹھ بناونہ یوان یُس ٲسہ وتہِ بجایہ نستہِ کنۍ نیبر کڈنہ یوان چھہ۔ نستہ ہنز وتھ چھیہ یلہ حالژ منز آسان۔ لہذا چھیہ نون آواز تہِ گیونس منز مدد کران تہ اہم۔ وچھو اتھ شعرس منز کٲتیا نون چھہِ چھکرتھ۔ ارۍنہِ لفظک /ن/، رنگ لفظک /ن/، شراون لفظک /ن/ تہ درشن لفظک /ن/۔ یمن ژۅن نونن منز ہیکون اسۍ گوم لفظک /م/ تہِ شامل کٔرتھ تکیازِ /م/ آواز تہِ چھیہ نستہِ ہنزِ یلہ حالژ منز بناونہ یوان۔

نون آوازِ پتہ وچھو اسۍ زِ اتھ شعرس منز چھہ /ر/ آوازِ ہند تہِ تکرار۔ ارۍنہِ لفظک /ر/۔ رنگ لفظک /ر/، شراون لفظک /ر/ تہ درشن لفظک /ر/۔ یم پانژھ (5) ریے آوازہ چھیہ ٲسہ منزہ نیبر نیرن وٲلس شہس پیٹھ بناونہ یوان یتھ جزوی ٹھور کرنہ یوان چھہ۔ چھہ تہ یہ مصمتہ مگر امہ مخصوص صفتہ کنۍ چھہ واریاہن زبانن منز مصوتہ چہ جایہ تہِ ورتاونہ یوان۔ نزدیکی مثال چھیہ سنسکرت۔ /ر/ آوازِ ہند یہ تکرار تہِ چھہ امہ شعرچہ غنایژ منز ہریر کران۔ رنگ گوم لفظن ہند صوتی تنافر چھہ اکھ بیاکھ مسلہ یتھ پیٹھ ونۍ کین کتھ ضروری چھیہ نہ، صرف کرہ اکھ اشارہ زِ امہ سیتۍ چھہ یمن دۅن لفظن /رنگ گوم/ پیٹھ زیادہ توجہ سپدان یُس معنوی طور شاید اہم چھہ۔

مضمون تہ استعاراتی اظہار

واضح طور چھہ اتھ شعرس منز دوریر/جدایی ہند مضمون یُس تمام دنیا چہ شاعری منز پتھ وتھ مقبول چھہ رودمت بلکہ چھہ دوریر شاعری ہندین محرکاتن منز تہِ شامل۔ یہ چھہ نہ کانہہ خیالی، تصوراتی یا ذہنی مضمون۔ پرانہِ زمانہ اگر گامہ پیٹھہ شہر کھسن پیوان آسہِ ہے، تتھ منز تہِ آسہِ ہے بٲژن یا عزیزن پچھن ہند دوریر سپدان، تاہم چھیہ نہ کتھے ییلہ سانین جوان زنانن پننین مردن ہندِ خاطرہ وندک وندہ جدایی منز کڈن پیوان آسہِ ہے یوت تام تم پنجابہ پیٹھہ محنت مزورۍ کٔرتھ واپس پھیرہن۔ کوتاہ ظلم اوس اگر کانہہ کانہہ وندہ پتہ ریتہ کالس تہِ گرِ نیبرے ڈۅکان آسہِ ہے تہ کینژن صورژن منز کانسہ کانسہ واپس پھیرنے مشتھ گژھان آسہِ ہے۔ یتھین شعرن منز چھیہ اکہ سماجچ تواریخ اظہار لبان۔ نون اظہار یتھہ پاٹھۍ قدیم چینی شاعری منز مروج اوس اوس نہ کاشرس کلچرس منز ممکن۔ جدایی ہند جسمانی پہلو چھہ یمہ شعرہ کس استعارس منز ٹاکارہ۔ نہ صرف جسمانی پہلو بلکہ چھہ ڈلونہِ وقتک تہِ حوالہ موجود۔

انتظار چھہ سیٹھا کروٹھ آسان اگر امیک اند معلوم آسہِ نہ۔ یہ چھہ اندہ روس دورِرک مضمون۔ "کر یی یے” چھہ اکھ سوال تہِ تہ اکھ شکایت تہِ۔ شاید سوالہ کھۅتہ زیادہ وۅمیذ ہندس سورونس اندس کن تہِ اشارہ۔ شعرس منز چھہ نہ سیدِ سیود پننس مردس کن خطاب شاید نہ اوہ مۅکھہ زِ انتظار چھہ زیٹھیومت تہ گراو چھیہ وۅنۍ پننس پانس تہ پننس ماحولس ۔ شعرس منز چھیہ "کر” لفظن یہ سٲرے شدت پیدہ کرمژ۔ بیاکھ اہم لفظ چھہ "درشن”۔ درشن دین گوو کنہِ پاٹھۍ خوابہ کہ ذریعہ یا تصور کہ ذریعہ نظرِ یُن۔ امہ سیتۍ چھہ عبادتک تہ عقیدتک پہلو تہِ شعرس اندر یوان یمہ کنۍ اتھ رشتس روحانی رنگ دنہ آمت چھہ۔ اتھ دورِرس منز چھہ شاید وۅنۍ صرف درشے ممکن۔

شاید ہیکہ نہ امہ کھوتہ بہتر شعر جدایی ہندس مضمونس پیٹھ سپدتھ۔