گرد تنییہ


میہ ہوۍ چھہِ واریاہ یمو سلہِ پیٹھے شعر وننۍ شروع کرۍ مگر کتابا وتابا چھٲوکھ نہ کینہہ۔ باقین ہند چھیم نہ پتاہ البتہ میانہِ امہ صورت حالکۍ چھہِ تریہ وجہ۔

ساروے کھوتہ بوٚڈ تہ عجیب وجہ اوس یہ زِ بہ اوسس اکس ناودار شاعر سند نیچو تہ ادبس منز پننہ ذاتی، خودمختار تہ سنجیدہ دلچسپی باوجود ٲس ادبی حلقن منز میانۍ زان تہ آوبھگت صرف تہ صرف مالۍ سندی حوالہ۔ اتھ صورت حالس منز پنن پان پروجیکٹ کرُن اوس میہ عجیبے باسان۔ امہ کنۍ روز میانۍ ادبی کارکردگی ذاتی سطحس پیٹھ تہ مخصوص دوستن ہندس دایرس تام لۅکٹس پیمانس پیٹھ محدود۔

دویم وجہ چھہ پننین لیکھنہ چین کوششن متعلق میون پنن غیر مطمین تہ غیر تشفی بخش رویہ۔ پننس کنہِ چیزس سیتۍ روز نہ میانۍ دلچسپی قایم تکیازِ یُس تہِ چیز لیوکھ، اکھ زہ پچھ گژھتھ کھوٚت نہ پانسے ٹارِ۔ یُس تنقیدی شعور شاعری پرنہ بدلہ ارود تہ انگریزی تنقید پرۍ پرۍ میہ پانس اندر ژیول، سہ رود ہمیشہ میانین تخلیقی صلاحیتن ٹھۅلہِ۔ بلاے اتھ زیادہ پرنس۔ پننین چیزن سیتۍ امہِ میانہِ جلدے راون واجنہِ دلچسپی کنۍ ہیوکس نہ بہ کانہہ چیز رژھرٲوتھ۔

تریم وجہ چھہ یہ زِ میانۍ زندگی چھیہ 1980 پیٹھے یتھ دمس تام اکس عجیب گردشس منز ۔قدم اکس جایہ ٹھہراونک چھہ نہ کانہہ موقعہ، میانۍ زندگی چھیہ واقعی ژلونین ژہین ہنز سوارۍ۔ اکہ لٹہِ کٔھستھ چھہ نہ وسنک کانہہ پاے۔اکاے صورت چھیہ باقی۔ سہ گوو دب۔ یمہ ساعتہ لگہِ پانے یمہ پتھر لاینہ۔ توہہ تہِ کرو تمہ ساعتہ خبر۔

پریتھ شاعرس چھہِ پننہ زندگی منز پنداہ، وُہ یا پنٕزہہ وری تم یوان یمن منز سہ پنن بہترین ادبی سرمایہ پتھ کن تراوان چھہ۔ حالانکہ اکثر شاعر چھہِ زندگی ہندین ٲخری دمن تام لیکھان مگر سہ چھہ صرف پتہ کرافٹ آسان۔ تتھ منز چھہ نہ سہ روح، سہ جود، سۅ تازگی آسان یۅس تہندِ بہترین وقتچ پہچان آسان چھیہ۔ شاعر چھہِ پننس شعری سفرس منز اکہِ وقتہ تتھ مقامس پیٹھ واتان ییتہ تم کنہِ تہِ خیالس، کنہ تہِ چیزس کرافٹ کہ مدتہ شعر چھہِ بنٲوتھ ہیکان۔ تہنزِ شاعری ہند جود تہ تازگی چھہِ وقتس سیتۍ سیتۍ راوان مگر کرافٹ چھہ تیتھ چیز اگر اکہ لٹہِ اتھس منز آو، یہ آو ہمیشہ خاطرہ۔

سانۍ واریاہ شاعر چھہ وۅنۍ صرف کرافٹ ورتاوان۔ ہمعصرن متعلق، ہمعصر بزرگن متعلق نہ، بلکہ یمن برونہہ کنہِ ونہِ واریاہ میدان آسہِ، تمن متعلق کانہہ فیصلہ صادر کرن چھہ مشکل مگر بہ ہیکہ فی الحال یہ ؤنتھ زِ سون ہردلعزیز شاعر رفیق راز تہِ چھہ وۅنۍ کرافٹے ورتاوان۔ یُس جود تہ تازگی تسنزِ شاعری منز 1980 پیٹھہ 1990 تام ٲس، سۅ چھیہ وۅنۍ کرافٹس تل سۅتیمژ۔

نادم سند جود اوس 1950 پیٹھہ 1965 تام، کامل آو راہی یس پتہ مگر امۍ سنزِ شاعری ہند جود رود 1960 پیٹھ 1979 تام جاری، راہی تہ فراق سنزبہترین شاعری آیہ 1970 پیٹھہ 1985 تام برونہہ کن، حالانکہ یم ٲسۍ واریاہ کالہ پیٹھہ شاعری کران۔ یہ دور چھہ کٲنسہ شاعر سنزِ زندگی منز ژیرۍ یوان۔ دنیا کس ادبس منز چھیہ یژھہ مثالہ موجود۔ کاشرس منز چھیہ قاضی غلام محمد سنز مثال، امۍ سنزِ شاعری ہند جود گوو ژیرۍ قایم تہ رود 1980 پیٹھہ 1990 تام، سیٹھا ژھوٹ دور۔

امہ رنگہ ییلہ بہ پانس کن نظر تراوان چھس تہ یہ اقرار کرن تہِ چھہ ضروری ز کینژن میہ ہوین تک بندن ہنزِ زندگی منز چھہ نہ یتھ کانہہ دور آسانے، لۅکٹس پیمانس پیٹھ تہِ نہ۔ مگر ادبک کاروان چھہ نہ پیٹھم کژتام شاعر برونہہ پکناوان، یم چھہ امہ کاروانچ شوب ضرور بنان، مگر کاروان بناون والۍ چھہِ میہ ہوۍ کٲتیا شاعر/تک بند آسان یم پننہِ حوصلہ تہ سرگرمی کنۍ کاروانس اکھ باضابطہ شکل دوان چھہِ۔ زندہ باد تم ساری ادیب یم کاروانس منز گردِ بزۍ گژھتھ پننۍ خولہ خط تام راوراوان چھہ!

بقول کامل:
گرد تنییہ تہ اوسس بہ پایمال ہیے

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s