اسونۍ دگ، لندنس منز زامژ اکھ شعرہ سۅمبرن


irshad

ییلہ اسۍ کٲنسہِ تہ شاعر، جدید تر شاعر سنزِ کلہم شاعری ہند تجزیہ کرو، ٲخر چھہِ اسۍ تتھ چیزس تام واتان یتھ اسۍ تمۍ سنزِ شاعری ہند جسٹ ونو۔ یمہ ساعتہ اسۍ ارشاد ملک سنزِ "اسونۍ دگ” شعرہ کتابہِ ہند تجزیہ کرو، امیک جسٹ چھہ نہ کٲنسہِ جدید شاعر سندِ کلہم تاثر نش مختلف۔ یہ چھیہ خوابن ہنز، دۅکھن ہنز، جدایی ہنز تہ راونچ شاعری۔ یہ تاثر چھہ شاعر اکہ بدل وتہِ قایم کران یۅس سانہِ سیاسی تہ کلچرل زندگی پیٹھہ نیران چھیہ تہ تورۍ کن واپس گژھان چھیہ۔

بنیادی طور چھہ ارشاد ملک اکھ کاشر شاعر، یُس نہ صرف غالب کٲشر شعرہ ذاتھ وژن ورتاوان چھہ بلکہ چھہ ازۍکہ زمانہ کین اظہاری ہیتن کن کم توجہ کٔرتھ وقتہ رنگۍ تہِ کاشرین وژن شاعرن سیتۍ پنن رشتہ جوڑان تہ تہندینے طور طریقن پیٹھ پٔکتھ پننین تہ پننہِ قوم کین غمن زیو دنچ کوشش کران۔ امۍ سند وژن ہیکون اسۍ کنہِ تہِ کاشرس وژنس لرِ تھٲوتھ، اکثر جاین چھہ ہیورے پہن۔

میہ باسان لندنس منز بہت یورپی شاعری ہنز تقلید کرنہ بجایہ کاشرین شاعرن تہ شعرہ اظہارن ہنز تقلید چھیہ زیادہ معنی خیز۔ شعرہ سۅمبرنہِ منز چھہ جایہ جایہ ظاہر زِ ارشاد ملک چھہ وژنہ چہ زبانۍ ہند پریہ ون ورتاو کران، تہ امہ کین لوازماتن ہند سیٹھا خیال تھاوان۔

مثالہِ پاٹھۍ یم وژن کٲتیا شوبہ دار چھہِ:
لالہ یکھنا از سون سالے لو
ہی پوشن کریو مالے لو

متہِ ژورِ مو تھاو مارۍ موند پان
ژے میون زو چھکھ ژے میون جان

یم غزل تہِ چھہِ متاثر کن:
پگہہ کہ طمع ہے از مشرووم
راز نو عشقن بووم زانہہ

سیکھ چھیہ نہ ٹھہران زالین منز
اۆش چھہ نہ ٹھہران ٹارین منز

مثالہِ پاٹھۍ یم شعر کٲتیا مارۍ مندۍ چھہِ:
زیٹھہِ کھوتہ زیوٹھ وچھم خواب راتۍ راتس
کلۍ تہریو پیٹھۍ کھوت سہلاب راتۍ راتس

دۅہلہِ ما سنا یم چھہِ مندچھان تاپلس
اوے ما چھم پھۅلان گلاب راتۍ راتس

یہ چھہ معجزک اثر زِ زندہ رودس
لج میہ کمۍ سنز نظر زِ زندہ رودس

میانہِ بدلہ کمۍ سنا دژ گردن
کمۍ سا نومروو سر زِ زندہ رودس

میانی کھورہ تلہ درامژ راتھ
فرشس وہرنہ آمژ راتھ

 

اکھ غزل چھہ پورہ پیش:

ڈیکہ سے پوز چھی ستارے بدل
دریاو سے چھی کنارے بدل
زمینہِ دیت اسہِ وزِ وزِ ساتھ
ٲسۍ آسمانکۍ اشارے بدل
شہل دوان دۅس تاپس منز
رودکۍ مگر اشارے بدل
پوشن چھہِ زندگی کینژن دۅہن
کنڈین مگر گوشوارے بدل
ہارنس پنن چھہ فایدہ الگ
زیننہ نس مگر خسارے بدل
ہوشک بوشا ذہنس منز
آسان دلس چھیہ تارے بدل
ارشاد ہٲل کر سختی وچھ
موتکۍ آسان نظارے بدل

یہ شعرہ کتاب چھیہ کاشرِ آہنگچ اکھ زندہ مثال یمکۍ وژن کیو غزل فارسی عروضس تابع نہ ٲستھ تہِ وزن دار چھہِ۔ میہ چھیہ وۅمید ارشاد ملک سند شعری سفر روزِ جاری تہ امۍ سند شعری کینواس تہِ لبہِ وسعت۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s